Monthly Archives: February 2011

ہوا میں جوشِ خود سری دیکھو


غزل

ہوا میں جوشِ خود سری دیکھو
مرے صنم کی دل بری دیکھو

Hawa main josh e khudsari dekho

Meray sanam ki dil-bari dekho

مرے لبوں کے منتظر مت ہو
بس آنکھ کی ذرا نمی دیکھو

Meray laboN k muntazir mat ho

Bus aankh ki zara nami dekho

گماں نہ رکھ کہ کام آئے گی
ہر ایک شے کی بے رخی دیکھو

GumaaN na rakh k kaam aayegi

Har aik shay ki be-rukhi dekho

یہ تیرا دھن میں بھاگنا حیرت
نہ بند ہو کہیں گلی دیکھو

Ye tera dhun main bhaagna herat

Na band ho kahien gali, dekho

تلاشِ فن کی آخری منزل
غریب ایک زندگی دیکھو

Talash e fan ki aakhri manzil

Ghareeb aik zindagi dekho

ایک مَحرم رہا ہے آنکھوں میں


طرحی غزل

ایک مَحرم رہا ہے آنکھوں میں

اس لیے غم رہا ہے آنکھوں میں

Aik Mahram raha hay aankhoN main

Is liye gham raha hay aankhoN main

گرچہ آنسو ہوں میری پلکوں پر
شوخ مدغم رہا ہے آنکھوں میں

Garche aansu hoN meri palkoN par

Shokh madgham raha hay aankhoN main

کیسے کہ دوں کہ وہ نہیں آیا
وہ تو ہردم رہا ہے آنکھوں میں

Kesay keh dooN k wo nahi aaya

Wo tu har dam raha hay aankhoN main

اب گریزاں ہے، اب وہ مائل ہے

ایک سنگم رہا ہے آنکھوں میں

Ab guraizaaN hay, ab wo maayil hay

Aik sangam raha hay aankhoN main

دل نے بھی تو اسے جگہ دے دی
جو مکرّم رہا ہے آنکھوں میں

Dil nay bhi tu osay jaga de di

Jo mukarram raha hay aankhoN main

اس لیے کچھ نہ دیکھ پایا ہوں

میرا ہم دم رہا ہے آنکھوں میں

Is liye kuch na daikh paya hoN

Mera ham-dam raha hay aankhoN main

دو گھڑی بات کرے مجھ پہ یہ احسان بہت


غزل


دو گھڑی بات کرے مجھ پہ یہ احسان بہت
گفتگو ہوتی رہے، ہائے یہ ارمان بہت

Do ghaRi baat karay, mujh pe ye ahsaan boht

Guftagoo hoti rahay, haaye ye armaan boht

کاش سمجھے کہ سبب ہے وہ شکیبائ کا
ورنہ اس دل کے لبھانے کو ہے سامان بہت

Kaash samjhay k sabab hay wo shakebaayi ka

Warna id dil k lubhanay ko hay samaan boht

اس نے کچھ سوچ کے چاہت کی حدیں رکھی ہیں
میں ہوں دیوانہ محبت میں، ہوں نادان بہت

Os nay kuch soch k chahat ki hadein rakhi hein

Main hoN deewana muhabbat main, hoN nadaan boht

میری شدت نے اسے خوف سے دوچار کیا

اس لیے بھی تو وہ بن جاتا ہے انجان بہت

Meri shiddat nay osay khof  say dochaar kia

Is liye bhi tu wo ban jaatay hein anjaan boht

پیار کے پھول کو مطلوب ہے دل کا پیالہ
یوں تو بازار میں مل جاتے ہیں گل دان بہت

Piyar k phool ko matloob hay dil ka piyala

YuN tu bazaar main mil jatay hein gul-daan boht

عشق کی راہ میں یہ سوچ گوارا نہ رہی
ہر قدم پر نئے زخموں کا ہے امکان بہت

Ishq ki raah main ye soch gawara na rahi

Har qadam par naye zakhmoN ka hay imkaan boht

وقت آیا تو ذرا مان نہ رکھا اس نے
عمر بھر جس پہ کیا کرتے تھے ہم مان بہت

Waqt aya tu zara maan na rakha os nay

Umr bhar jis pe kia kartay thay hum maan boht

غم ہو جاناں کا، غمِ دہر ہو آلام سے پُر
ہائے تڑپایا گیا حضرتِ انسان بہت

Gham ho jaanaN ka, gham e dahr ho alaam say pur

Haaye taRpaya gaya hazrat e insaan boht

میں وہی ہوں اور ہے وہ بے خودی اپنی جگہ


غزل

میں وہی ہوں اور ہے وہ بے خودی اپنی جگہ

بین کرتی جارہی ہے زندگی اپنی جگہ

Main wahi hoN aor hay wo bekhudi apni jaga

Bain karti jarahi hay zindagi apni jaga

اے مرے مانوس ہمدم، کیا کہوں لب ہے سلے

گفتگو ہوتی ہے لیکن خامشی اپنی جگہ

A meray manoos hamdam kia kahon lab hein silay

Guftgo hoti hay lekin khaamushi apni jaga

کیا بتاؤں اک تعلق ہے انوکھا اپنے سر

سامنے بیٹھے ہیں، پر ہے بے دلی اپنی جگہ

kia bataoN ik taluq hay anokha apnay sar

Saamnay baithay hein par hay bedili apni jaga

خلوتوں میں بزمِ دل کی رونقیں مجھ سے مگر

برسرِ محفل وہی ہے بے رخی اپنی جگہ

KhalwatoN main bazm e dil ki ronaqen mujh say magar

Bar sar e mehfil wahi hay berukhi apni jaga

ہائے ہم آہنگ ہے اس دل کی دھک دھک سے بہت

گو کہ اک آواز ہے وہ بے سری اپنی جگہ

Haaye hum ahang hay is dil ki dhak dhak say boht

Go k ik awaaz hay wo be-suri apni jaga

لمس کی لذت سے کب انکار ہے اُن کو مگر

داغِ رسوائ کا ڈر اور سرخوشی اپنی جگہ

Lams ki lazzat say kab inkaar hay on ko magar

Daagh e ruswaai ka dar aor sarkhushi apni jaga

ہم جلیسو، یہ نہ سمجھو، دست رس میں ہے صنم

دل کی حسرت اور ان سے دل لگی اپنی جگہ

Ham-jaleeso ye na samjho, dast ras main hay sanam

Dil ki hasrat aor on say dil lagi apni jaga

عشق نے خود پر بھروسے کا ہنر سکھلا دیا

بزمِ یاراں اک طرف اور کم سنی اپنی جگہ

Ishq nay khud par bharosay ka hunar sikhlaa dia

Bazm e yaraaN ik taraf aor kam-sini apni jaga

نور میں تاریک ہوں اور ظلمتوں میں روشنی

روز و شب کا سلسلہ جاری یونہی اپنی جگہ

Noor main tareek hoN aor zulmatoN main roshni

Roz o shab ka silsila jaari yunhi apni jaga

یہ سمے ہے جلوہ ہائے طور کا


غزل

یہ سمے ہے جلوہ ہائے طور کا
بن رہا ہے ایک سایہ نور کا

Ye samay hay jalwa haay e toor ka
Ban raha hay aik saya noor ka

سامنے جام مسرت ہے پڑا
کیا کروں میں اس دلِ رنجورکا

Saamnay jaam e masarrat hay paRa
Kia karon main is dil e ranjoor ka

بالیقیں ہے درد ہی کا راستہ
وہ اشارہ دے رہاہے دورکا

Bil-yaqeeN hay dard hi ka raasta
Wo ishara de raha hay door ka

گردنیں اکڑی ہیں اہل حکم کی
دار پر آیا ہے سر منصور کا

Gardanein akRi hein ehl e hukm ki
Daar par aaya hay sar mansoor ka

عشق کا مطلوب کوئی اور ہے
پڑگیاہے ماند جلوہ حور کا

Eshq ka matloob koi aor hay
PaR gaya hay maand jalwa hoor ka

غریق اپنے وجود ِ خاک کا ہوں


غزل

غریق اپنے وجود ِ خاک کا ہوں

مدار ِ روح کا حیرت کدہ ہوں

Ghareeq apnay wajood e khaak hoN

Madaar e Rooh ka Herat-kada hoN

کوئی یوں قلزم ِ جاں میں پکارے

خدا کے ذہن میں اک بلبلہ ہوں !

Koi yuN Qulzim e jaaN main pukaray

Khuda k zehn main ik bulbula hoN

ہے سنجیدہ خلیق ِ کار ِ ہستی

میں خود ہستی سے مدغم آشنا ہوں

Hay sanjeeda khaleeq kaar e hasti

Main khud hasti say madgham, aashna hoN

مری تقسیم کا سانچہ ہے کیسا؟

میں اصل ِ زیست پر دولخت ساہوں

Mri taqseem ka saancha hay kesa?

Main asl-e-zeest par dolakht saa hoN

بہت آسان ہے ترکیب ِ آدم

وجود ِ خاک میں روح ِ خداہوں !

Boht aasan hay tarkeeb aadam

Wajood-e-khaak main rooh-e-khuda hoN

تو اس گھتی کو میں سلجھاؤں کیوں کر؟

کبھی شیطاں ، کبھی میں پارسا ہوں

Tu is ghuthi ko main suljhaaon kioN-kar

Kabhi shetaaN, kabhi main paarasa hoN

مرے ہاتھوں ، مری ہستی کی پستی

میں اپنے واسطے خود ہی سزا ہوں!

Mray haathoN meri hasti ki pasti

Main apnay wastay khud hi saza hoN

مٹی سے شَغف، پانی پہ گذر


غزل

مٹی سے شَغف، پانی پہ گذر

پیتے ہیں لہو، ہم خاک بہ سر

Mitti say shaghaf, paani pe guzar

Peetay hein luhoo, hum khaak ba-sar

وحشت کے سوادل میں نہیں کچھ

گردش میں ہوں میں ، آواز نہ کر

Wahshat ky siwa dil main nahi kuch

Gardish main hoN main, awaaz na kar

دیکھی ہے جھلک پردے سے جو کل

دنیامرے دل کی زیر و زبر

Dekhi hay jhalak parday say jo kal

Dunya mray dil ki zair-o-zabar

ہم کو ہو متاع زیست عطا

اک قلبِ حزیں، اک دردِ جگر

Hum ko ho mataa-e-zeest ataa

Ik qablb-e-hazeeN, ik dard-e-jigar

جب درد کا دریا سوکھ چکا

تو اس سے ہوئ تشکیلِ حجر

Jab dard ka darya sookh chuka

Tu os say hui tashkeel-e-hajar

صحراے درونِ ذات نکل

ملتا ہے وہاں اک سیلِ بدر

Sahra-e-daroon-e-zaat nikal

Milta hay wahaN ik sail-e-badar

اک رازِ خودی، اک روحِ خدا

ہوتا ہے اسی مابین بشر

Ik raaz-e-khudi, ik rooh-e-khuda

Hota hay isi maabain bashar

میں تجھ سے زیادہ تجھ سے قریں

محسوس تو کر، محسوس تو کر

Main tujh say ziyada tujh say QareeN

Mahsoos tu kar, mahsoos tu kar

تم نوچ رہے ہو عصمتِ حق

کچھ کرلو حذر، کچھ کرلو حذر

Tum noch rahay ho ismat-e-haq

Kuch karlo hazar, kuch karlo hazar

محبوب مرا بس تو ہی تو ہے

آ، پاس مرے، مجھ سے تو نہ ڈر

Mahboob mera bus tu hi tu hay

Aa, paas meray, mujh say tu na dar

تکریم کروں ، تعظیم کروں

انسان کا دل اللہ کا گھر

Takreem karooN, tazeem karoN

Insan ka dil, Allah ka ghar

روٹی کپڑا اور مکان


نظم

روٹی کپڑا اور مکان


روٹی کپڑا اور مکان

کچھ بھی نہیں ان کا امکان

Roti KapRa Aor Makaan

Kuch bhi nahi in ka imkaan

اس سے پہلے فوجی غنڈہ

بھاگا کھا کے پاکستان

Is say pehlay Foji ghunda

Bhaga kha k Pakistan

اُس سے پہلے شیر نے بھی

نگلی اپنی آدھی جان

Us say pehlay Shair nay bhi

Nigli apni aadhi jaan

کیوں دیتے ہیں ہم سب ووٹ

کیا ہم سب ہیں بے ایمان

Kion detay hien hum sub vote

Kia hum sub hein be-eman

اوپر نیچے چھینا جھپٹی

اندر سے ہم ہیں سنسان

uper neechay cheena jhapti

Andar say hum hein sunsaan

اپنی دھرتی پر کیوں لوگو

بھوک سے مرتے ہیں انسان

Apni dharti par kioN lgog

Bhook say martay hien Insaan

چلتی گاڑی چڑھ جاتی ہے

کچلے جاتے ہیں ارمان

Chalti gaaRi charh jaati hay

kuchlay jatay hien armaan

بے شرمی کی حد کیا ہوگی

اب ہم بنتے نہیں انجان

Be-sharmi ki had kia hogi

Ab hum bantay nahi anjaan

کس کو دیں الزام یہاں

کوئی نہیں ہم میں نادان

Kis ko dein ilzaam yahaN

Koi nahi hum main naadaan

نوچا خوب، لگا کے نعرہ

جیوے جیوے پاکستان

Nocha khoob, laga k na’ra

Jeeway jeeway Pakistan

جس عہد میں پڑا ہوں فقط اس کا دوش ہے


طرحی غزل


رشتے سبھی لہو ہوں جو مائیں لہو لہو

بھائی لہو لہو ہوں تو بہنیں لہو لہو

Rishtay sabhi laho, hoN jo maayiN luho luho

Bhai laho laho ho tu behnaiN luho luho

اُس شہر دل خراش کی شامیں لہو لہو

جس کی زمیں پہ پڑتی ہوں کرنیں لہو لہو

Os shehr e dil kharash ki shamaiN luho luho

Jis ki zameeN pe paRti hoN kirnain luho luho

جس عہد میں پڑا ہوں فقط اس کا دوش ہے

کم گو کی تجھ کو لگتی ہیں باتیں لہو لہو

Jis ehd main paRa hoN fiqat os ka dosh hay

Kam-go ki tujh ko lagti hein bataiN luho luho

پلکوں میں بس گئی ہے کسی کی نگاہ ناز

“کب دیکھیے کہ ہوں میری آنکھیں لہو لہو”

PalkoN main bas gayi hay kisi ki nigaah e naaz

“Kab dekhiye k hoN meri aankhien luho luho”

طوفان میں اڑے گی سماعت سنو اے دوست

ہوجائیں گی مری جو ندائیں لہو لہو

Toofan main uRegi sama’at suno a dost!

Hojayingi meri jo nidaayiN luho luho

شاید کہ دل میں صدق نہیں ہے ابھی تلک

ہر سمت ہورہی ہیں دعائیں لہو لہو

Shayad k dil main sadq nahi hay abhi talak

Har simt horahi hein duayiN luho luho

کس طرح میں خیال کروں امن کا یہاں

ارمان میرے، بن کے جو برسیں لہو لہو

Kis tarh main khayal karoN amn ka yahaN

Armaan meray ban k jo barsaiN luho luho

نگاہ وقت میں پیہم کھٹک رہا تھا میں


غزل

رہینِ راز، جنوں میں جو بک رہا تھا میں

نگاہ وقت میں پیہم کھٹک رہا تھا میں

Raheen e raaz, jinooN main jo bak raha tha mian

Nigah e waqt main paisham khatak raha tha mian

وفورِ شوق میں اس سے لپٹ گیا، حیرت

بدن کی راکھ کو اڑتایوں تک رہا تھا میں

Wafoor e shoq main os say lipat gaya, herat

Badan ki raakh ko uRta yuN tak raha tha main

یہ جبر تھاکہ محبت جو زیست میں اترا

وہ خواب تھا کہ حقیقیت، بدک رہا تھا میں

Ye jabr tha k muhabbat jo zeest main utra

Wo khwab tha k haqeeqat, bida raha tha mian

جہانِ حسن میں گرعشق ہو رسا، توپھر؟

بہ ضد خیال تھا اور سر جھٹک رہا تھا میں

Jahan e husn main gar ishq ho rasa, tu phir?

Ba-zid khayal tha aor sar jhatak raha tha mian

تپش خیال کی سہنا محال تھا مجھ کو

سو بے شرر سرِ صحرا بھڑک رہا تھا میں

Tapish khayal ki sehna muhal tha mujh ko

So be-sharar sar e sehra bhaRak raha tha mian

ضمیرِ عشق میں اک حسن کا سلیقہ ہے

مقام وصل پہ ساقی جھجک رہا تھا میں

Zameer e ishq main ik husn ka saleeqa hay

Maqam e wasl pe saaqi jhijak raha tha mian

قدیم ہو کے غلاظت میں لتھڑا جاتا ہوں

نیا نیا تھا تو کتنا چمک رہا تھا میں

Qadeem ho k ghalazat main lithRa jata hoN

Naya naya tha tu kitna chamak raha tha mian

ابد کے آئینہ خانے میں لے گیا یزداں

مثالِ پرتوِ جاناں جھلک رہا تھا میں

Abad k aayina khanay main legaya yazdaaN

Misal e partaw e janaN jhalak raha tha mian

نہیں خبر تھی تو رہتا لباسِ مستی میں

خبر ملی تو یہ دیکھا سسک رہا تھا میں

Nahi khabar thi tu rehta libas e masti main

Khabar mili tu ye dekha, sisak raha tha main

جلا کے راکھ کیا ایک ہی حقیقت نے

خیال دامنِ دل سے اچک رہا تھا میں

Jala k raakh kia ak hi haqeeqat nay

Khayal daaman e dil say uchak raha tha mian

میں اپنی چاہ کے ہاتھوں قرار کھو بیٹھا

پر اس کے دل میں بھی بن کے کسک رہا تھا میں

Main apni chaah k hathoN qaraar kho biatha

Par os k dil main bhi ban k kasak raha tha mian

%d bloggers like this: