نگاہ وقت میں پیہم کھٹک رہا تھا میں


غزل

رہینِ راز، جنوں میں جو بک رہا تھا میں

نگاہ وقت میں پیہم کھٹک رہا تھا میں

Raheen e raaz, jinooN main jo bak raha tha mian

Nigah e waqt main paisham khatak raha tha mian

وفورِ شوق میں اس سے لپٹ گیا، حیرت

بدن کی راکھ کو اڑتایوں تک رہا تھا میں

Wafoor e shoq main os say lipat gaya, herat

Badan ki raakh ko uRta yuN tak raha tha main

یہ جبر تھاکہ محبت جو زیست میں اترا

وہ خواب تھا کہ حقیقیت، بدک رہا تھا میں

Ye jabr tha k muhabbat jo zeest main utra

Wo khwab tha k haqeeqat, bida raha tha mian

جہانِ حسن میں گرعشق ہو رسا، توپھر؟

بہ ضد خیال تھا اور سر جھٹک رہا تھا میں

Jahan e husn main gar ishq ho rasa, tu phir?

Ba-zid khayal tha aor sar jhatak raha tha mian

تپش خیال کی سہنا محال تھا مجھ کو

سو بے شرر سرِ صحرا بھڑک رہا تھا میں

Tapish khayal ki sehna muhal tha mujh ko

So be-sharar sar e sehra bhaRak raha tha mian

ضمیرِ عشق میں اک حسن کا سلیقہ ہے

مقام وصل پہ ساقی جھجک رہا تھا میں

Zameer e ishq main ik husn ka saleeqa hay

Maqam e wasl pe saaqi jhijak raha tha mian

قدیم ہو کے غلاظت میں لتھڑا جاتا ہوں

نیا نیا تھا تو کتنا چمک رہا تھا میں

Qadeem ho k ghalazat main lithRa jata hoN

Naya naya tha tu kitna chamak raha tha mian

ابد کے آئینہ خانے میں لے گیا یزداں

مثالِ پرتوِ جاناں جھلک رہا تھا میں

Abad k aayina khanay main legaya yazdaaN

Misal e partaw e janaN jhalak raha tha mian

نہیں خبر تھی تو رہتا لباسِ مستی میں

خبر ملی تو یہ دیکھا سسک رہا تھا میں

Nahi khabar thi tu rehta libas e masti main

Khabar mili tu ye dekha, sisak raha tha main

جلا کے راکھ کیا ایک ہی حقیقت نے

خیال دامنِ دل سے اچک رہا تھا میں

Jala k raakh kia ak hi haqeeqat nay

Khayal daaman e dil say uchak raha tha mian

میں اپنی چاہ کے ہاتھوں قرار کھو بیٹھا

پر اس کے دل میں بھی بن کے کسک رہا تھا میں

Main apni chaah k hathoN qaraar kho biatha

Par os k dil main bhi ban k kasak raha tha mian

Advertisements

About Rafiullah Mian

I am journalist by profession. Poet and a story writer.

Posted on February 11, 2011, in Ghazal and tagged , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: