Monthly Archives: April 2011

پھر کوئی عفریت جنم دے گی مٹی


غزل

بادل کو صحرا کی خموشی کا غم ہے
جتنا کڑکے، برسے، اتنا ہی کم ہے

Baadal ko sehra ki khamoshi ka gham hay

Jitna kaRkay, barsay, utna hi kam hay

وقت دعا ہے، آؤ مل کر مانگیں وہ
جس کی خلش ہے، اپنے اندر جو کم ہے

Waqt e dua hay, Aao mil kar maangeiN wo

Jis ki khalish hay, apne andar jo kam hay

آدم کی اولاد انہیں تب تک مارے
جب تک بے بس اور لاچاروں میں دم ہے

Aadam ki olaad unhein tab tak maaray

Jab tak be-bas aor laacharoN main dam hay

پھر کوئی عفریت جنم دے گی مٹی
کوکھ جلی اک بار ہوئی پھر سے نم ہے

Phir koi ifreet janam degi Mitti

Kokh jali ik baar hui phir say nam hay

خوش رہنے کو سارے جتن کرڈالو تم
کیا سمجھے ہو، یار کا غم تھوڑا غم ہے

Khush rehnay ko saaray jatan kardaalo tum

Kia samjhe ho! yaar ka gham thoRa gham hay

رب نے رکھے ہیں عالم میں لاکھوں رنج
ان کا خمیر اک درد جدائی میں ضم ہے

Rab ne rakhe hein aalam main laakhoN ranj

In ka khameer ik dard e judaayi main zam hay

من کو جلاکر راکھ بنائے، ایسی آگ
عشق ہے، گر شعلے میں زندہ شبنم ہے

Man ko jalaa kar raakh banaaye aesi aag

Ishq hay, gar sholay main zinda shabnam hay

مجھ کو رفیع اب فرق نہیں پڑنے والا
خوش ہے یا نم دیدہ ہے، جو ہمدم ہے

Mujh ko Rafi ab farq nahi paRne wala

Khush hay ya namdeeda hay, jo hamdam hay

فرش پر بچوں کے دو ٹوٹے کھلونے دیکھ کر


غزل

بہ گئے پنچھی، تھا قسمت میں پروں کا ٹوٹنا
اک قیامت ڈھا گیا تھا ساحلوں کا ٹوٹنا

Beh gaye panchi, tha qismat main paroN ka tootna

Ik qayamat dha gaya tha saahiloN ka tootna

فرش پر بچوں کے دو ٹوٹے کھلونے دیکھ کر
یاد آیا اک انا سے دو دلوں کا ٹوٹنا

Farsh par bachoN k do tootay khilone dekh kar

Yaad aya ik Ana say do diloN ka tootna

دل کی بستی کی طرح افلاک بھی ہوں گے تباہ
اک جھلک دکھلا گیا ہے زاویوں کا ٹوٹنا

Dil ki basti ki taraH aflaak bhi honge tabaah

Ik jhalak dikhla gaya hay zaawioN ka tootna

ہم سفر میں تھے ابھی کہ بن گئے پتھر کے بت
اک خبر جاں کاہ تھی وہ منزلوں کا ٹوٹنا

Hum safar main thay abhi k ban gaye patthar k but

Ik khabar jaaN-kaah thi wo manziloN ka tootna

کس محبت سے بنائے دل میں اہرام وفا
دیکھتا جاتا ہو ں مرمر کے سلوں کا ٹوٹنا

Kis muhabbat say banaaye dil main ahraam e wafa

dekhta jata hoN mar mar k siloN ka tootna

درد کیا ہوتا ہے جانا، خود بچھڑ جانے کے بعد
ورنہ سنتے آرہے تھے قافلوں کا ٹوٹنا

Dard kia hota he jana, khud bichaR janay k bad

Warna sunte aarahe thay qaafiloN ka tootna

ڈھل رہی ہے ناامیدی میں ملن کی آس یوں
سلسہ در سلسلہ جیسے پلوں کا ٹوٹنا

Dhal rahi he naa-umeedi main milan ki aas, yuN

Silsila dar silsila jesay pulooN ka tootna

میرے دل کی سرزمیں سے پھوٹتے ہیں ان دنوں
آؤ دیکھو، روتے روتے آبلوں کا ٹوٹنا

Meray dil ki sarzameeN say phooth’te hein in dinoN

Aao dekho, rote rote AabloN ka tootna

یہ زمیں اور آسماں ملتے ہیں شاید اک جگہ
کچھ نہیں مشکل یہاں بھی فاصلوں کا ٹوٹنا

Ye zameeN aor aasmaaN milte hein shayad ik jaga

Kuch nahi mushkil yahaN bhi faasiloN ka tootna

تیرے جھکنے سے مکین۔ دل بھی جھک جاتاہےخود
تو سمجھتا ہے اسے کیوں حوصلوں کا ٹوٹنا

Teray jhukne say makeen e dil bhi jhuk jaata he khud

Tu samajhta hay isay kioN hosloN ka tootna

میں اگر دیکھوں سماجی زاویے سے اس کو تو
مجھ کو لگتا ہے ضروری سلسلوں کا ٹوٹنا

Main agar dekhoN samaaji zaawiye say isko tu

Mujh ko lagta hay zaroori silsiloN ka tootna

کیا تعلق ٹوٹنا اتنا ہی آساں ہے رفیع
جس طرح ہم دیکھتے ہیں بلبلوں کا ٹوٹنا

Kia ta’alluq tootna itna hi asaaN hay Rafi?

Jis taraH hum dekhte hein bulbuloN ka tootna

چشم_نرگس کی طرح جو رودیا


غزل

چشم_نرگس کی طرح جو رودیا
نور اپنی آنکھ کا پھر کھو دیا

Chashm-e-nargis ki tarah main rodia
Noor apni aankh ka phir kho dia

بے حسی کا قافلہ آگے چلا
اور جنوں وابستگی کا رودیا

Be-hisi ka qaafla aagay chala
Aor junooN wabistagi ka rodia

روئے گا اس یاد کو جو ہے حسیں
مطمئن ہوں، میں نے جو اس کو دیا

Royga os yaad ko jo he haseeN
Mutmain hoN, main ne jo Os ko dia

بے خبر، وہ آج بھی ہے تیرے پاس
تو نے جو اپنی تئیں ہے کھو دیا

Be-khabar, wo aaj bhi he tere pas
Tu ne jo apni tayin he kho dia

دے جو سب کو زندگی کی روشنی
میرے اندر ہے فروزاں وہ دیا

De jo sub ko zindagi ki roshni
Mere andar he farozaN wo dia

جس کو فرصت ہی نہیں میرے لیے
ہاں، اُسی کو اک جہان_ نو دیا

Jis ko fursat hi nahi mere liye
Han, osi ko ik jahan-e-no dia

نفرتوں میں جو بہت ہے مستعد
پیار کے لمحوں کو وہ بھی رودیا

NafratoN main jo boht he musta’id
Piyar k lamho ko wo bhi rodia

دامن_دل پر پشیمانی کا داغ
اور گہرا ہوگیا، تب رو دیا

Daaman-e-dil par pashemani ka daagh
Aor gehra hogaya , tab ro dia

تجھ میں اک شہر محبت کا بسا کر دیکھا


غزل

تجھ میں اک شہر محبت کا بسا کر دیکھا
اور پھر اپنے ہی ہاتھوں اسے ڈھاکر دیکھا

Tujh main ik shehr muhabbat ka basakar dekha
Aor phir apne hi haathoN ose dhaa kar dekha

مقبرہ شان سے تعمیر کیا الفت کا
پھر کفن اوڑھ کے اک بار اسے جاکر دیکھا

Maqbara shaan se tameer kia ulfat ka
Phir kafan Orh k ik baar osay jakar dekha

برف زادوں سے حرارت کی توقع کیسی
ان کے احساس میں اک عمر سماکر دیکھا

Barf-zaadoN se hararat ki tawaqqu kesi
Un k ahsaas main ik umr samakar dekha

ڈس رہی ہے سر_محشر ابھی تنہائی تمھیں
مجھ کو لوگوں سے کبھی تم نے ہٹاکر دیکھا?

Das rahi he sar-e-mahshar abhi tanhaayi tumhen
Mujh ko logoN se kabhi tum ne hata kar dekha

روشنی اور اندھیرے میں نہ تھا فرق رفیع
اس لیے آج دیا میں نے بجھاکر دیکھا

Roshni aor andheray main na tha farq Rafii
Is liye aaj diya main ne bujhakar dekha

 

وہ تو اک خواب تھا، جب تک اسے دیکھا میں نے


غزل

آج جب خود سے اسے میں نے گھٹاکر دیکھا
دل کی آنکھوں میں بہت دور تلک ڈر دیکھا

Aaj Jab khud se osay main ne Ghata kar dekha
Dil ki aankhoN main boht door talak dar dekha

مجھ کو لگتا ہے محبت کی کمی ہے مجھ میں
اس لیے پیاسی نظر سے اسے اکثر دیکھا

Mujh ko lagta he muhabbat ki kami he mujh main

Is liye piyasi nazar say osay aksar dekha

اس کے احساس کی دنیا میں گزاری اک عمر
سرد ہوتے ہوئے سورج کا بھی منظر دیکھا

Os k ahsaas ki dunya main guzaari ik umr
Sard hotay hoe sooraj ka bhi manzar dekha

وہ تو اک خواب تھا، جب تک اسے دیکھا میں نے
محو ہوکر، دو جہانوں سے نکل کر دیکھا

Wo tu ik khwab tha, Jab ose dekha main ne
Mahw hokar, do jahanoN se nikal kar dekha

ہاں، مبارک ہو اسے اس کی انا کی رفعت
میں نے آکاش میں تاروں کا پیمبر دیکھا

Han, mubarak ho osay os ki Ana ki raf’at
Main ne aakash main taaroN ka payambar dekha

میں بسا اس میں تھا، وہ ہی نہیں پایا جو سنبھال
لڑکھڑانے پہ رفیع اس نے بپھر کر دیکھا

Main basa os me tha, wo hi nahi paaya jo Sanbhaal
LaRkhaRanay pe Rafii os ne biphar kar dekha

حصہ


حصہ
***

کئی ہفتے گزرجانے کے بعد
آتی ہو تم جب بھی
جھگڑتی ہو
وہ لمحے جن کو ہم تم گن بھی سکتے ہیں
اگر چاہیں توان کو چن بھی سکتے ہیں
انہیں اک آس کا پیکر بناکر جی بھی سکتے ہیں
انہیں تم پھینک دیتی ہو شقاوت سے
اک ایسی آگ میں
جس سے مرا ناتا نہیں کچھ بھی
وہ ہے تقدیر کا شاید کوئی حصہ
جو تم سے جڑ گیاہے اور چھٹکارا بہت مشکل
مگر میرا جو حصہ ہے
وہ لمحے چند، جن کو گن بھی سکتے ہیں
انہیں تم راکھ کردیتی ہو آکر ایک لمحے میں
بتاؤں کیوں?
کئی ہفتے گزر جانے کے بعد
آتی ہو تم جب بھی
!جھگڑتی ہو
بتاؤ کیوں?

Hissa
***

Kayi haftay guzar janay k bad
Aati ho tum jab bhi
JhagaRti ho!
Wo lamhe jin ko hum tum gin bhi sakte hein
Agar chahen tu un ko chun bhi sakte hein
Unhen ik aas ka paikar banakar jee bhi sakte hein
OneheiN tum phaink deti ho shaqawat se
Ik aisi aag main
Jis se mera nata nahi kuch bhi
Wo hay taqdeer ka shayad koi hissa
Jo tum se juR gaya he aor chutkara boht mushkil
Magar mera jo hissa he
Wo lamhe chand, jin ko gin bhi sakte hein
Unhein tum raakh kardeti ho aakar aik lamhay main
Bataao kioN?
Kayi haftay guzar jaanay k bad
Aati ho tum jab bhi
JhagaRti ho
Bataao kioN?

گیتی پہ ابھی نوحہ کناں سرو سمن ہے


غزل

غارت گر_تہذیب کے ہاتھوں میں وطن ہے
ہر سو مرے گھر آہ و بکا، رنج و محن ہے

Ghaarta gar-e-tehzeeb k haathoN main watan he
Har soo mere ghar aah-o-baka, ranj o mihan he

یاں نفس پرستوں کی ہوس کا ہے یہ عالم
رستے میں پڑی نعش بھی بے گوروکفن ہے

YaaN nafs parastoN ki hawas ka he ye aalam
Rastay main paRi laash bhi be-gor-o-kafan he

ہر راہ درندوں سے ہے پامال وطن میں
آسیب زدہ یوں ہی پڑا دارورسن ہے

Har raah darindoN se he paamaal watan main
Aasaib-zada yuN hi paRa daar-o-rasan he

ہم آج تمدن سے نظر کیسے ملائیں
بے آبرو تہذیب کا عریاں جو بدن ہے

Hum aaj tamaddun se nazar kese milaayiN
Be-aabro tehzeeb ka uryaaN jo badan he

کم ظرف کی ہوتی ہے نظر تخت_شہی پر
یہ دیکھ کے شرمندہ بہت کوہ و دمن ہے

Kam-zarf ki hoti he nazar takht-e-shahi par
Ye dekh k sharminda boht koh-o-daman he

اک سمت لہو رنگ ہوا زیست کا مقتل
اک سمت سخن ور ہیں، بہ ایں رنگ سخن ہے

Ik simt luho-rang hua zeest ka maqtal
Ik simt sukhan-war hein, ba-eeN rang-e-sukhan he

خوشیوں کی بہار آئے، مقدر میں نہیں ہے
گیتی پہ ابھی نوحہ کناں برگ_ سمن ہے

KhushioN ki bahaar aaye, muqaddar main nahi he
Gaitee pe abhi noha kunaaN barg-e-saman he

کج فہمیءحالات کو کہتے ہیں ہنر یہ
اندھیر ہے، خورشید کہیں جس کو، کرن ہے

Kaj-fehmi-e-haalaat ko kehte hein hunar ye
Andher he, khursheed kahaiN jis ko, kiran he

دشتِ غرقاب میں، زندگی زندگی


غزل

نقشِ برآب میں، زندگی زندگی

روحِ برفاب میں، زندگی زندگی

Naqsh e bar aab main, zindagi zindagi

Rooh e barfaab main, zindagi zindagi

ہجر میں تربہ تر، آنسوؤں کی قسم

دشتِ غرقاب میں، زندگی زندگی

Hijr main tar-ba-tar, aanuooN ki qasam

Dasht e gharqaab main, zindagi zindagi

جُز پریشان ہو تو عدم کا گماں

حسنِ آداب میں، زندگی زندگی

Juz pareshan ho tu adam ka gumaaN

Husn e adaab main, zindagi zindagi

خامۂ عشق ہے لوحِ تقدیر پر

اس کے ہر باب میں، زندگی زندگی

Khaama-e-ishq hay, loh e taqdeer par

Is k har baab main, zindagi zindagi

دوست پی تو سہی، ہے یہ جامِ حیات

دل کی ہر قاب میں، زندگی زندگی

Dost pee tu sahi, hay ye jaam e hayaat

Dil ki har qaab main, zindagi zindagi

شب کے سینے ہی سے روشنی کا جنم

اس لیے خواب میں، زندگی زندگی

Shab k seenay hi say roshni ka janam

Is liye khwab main, zindagi zindagi

زرد ہونٹوں کی بس اک صدا ہے یہی

ارضِ شاداب میں، زندگی زندگی

Zard hontoN ki bus ik sada hay yahi

Arz e shadaab main, zindagi zindagi

اس کے دھاروں سے سیراب ہم ہوں رفیع

چشمِ زرتاب میں، زندگی زندگی

Is k dhaaroN say siaraab hum hoN Rafi

Chasm-e-zartaab main, zindagi zindagi


چلی یہ صدی ہے سلگتے سلگتے


غزل

چلی یہ صدی ہے سلگتے سلگتے
کٹی زندگی ہے سلگتے سلگتے

Chali ye sadi he sulagte sulagte
Kati zindagi he sulagte sulagte

بہت شور ہے اور سماعت نہیں ہے
صدا رورہی ہے سلگتے سلگتے

Boht shor he aor sama’at nahi he
Sada ro rahi he sulagte sulagte

نہ کہ پا رہے ہیں، نہ سہ پارہے ہیں
یہ کیا بے بسی ہے سلگتے سلگتے

Na keh paa rahe hein, na seh paa rahe hein
Ye kia be-basi he sulagte sulagte

ہر اک در پہ مقتل سجا ہے زمیں پر
یونہی زندگی ہے سلگتے سلگتے

Har ik dar pe maqtal saja he zameeN par
Yunhi zindagi he sulagte sulagte

سماج اپنا سارا اندھیروں میں ڈوبا
خفا روشنی ہے سلگتے سلگتے

Samaaj apna sara andheroN main dooba
Khafa roshni he sulagte sulagte

غموں کا تو عالم ہی دیگر رہا ہے
ملی ہر خوشی ہے سلگتے سلگتے

GhamoN ka tu aalam hi deegar raha he
Mili har khshi he sulagte sulagte

جو انسانیت سے بچھڑنے لگا تو
مرا آدمی ہے سلگتے سلگتے

Jo insaaniat se bichaRne laga tu
Mara aadmi he sulagte sulagte

نہ پائی مرادوں بھری زندگی، پَر
محبت تو کی ہے سلگتے سلگتے

Na paayi muradoN bhari zindagi, par
Muhabbat tu ki he sulagte sulagte

دل و جاں سے ہر دم دھواں اٹھ رہا ہے
یونہی دل بری ہے سلگتے سلگتے

Dil o jaaN se har dam dhuwaaN uth raha he
Yunhi dil-bari he sulagte sulagte

مسیحا ہماری طرف بھیج دے اب
دعا اٹھ رہی ہے سلگتے سلگتے

Maseeha hamari taraf bhej de ab
Dua uth rahi he sulagte sulagte

میں سمجھا تھا باد_صبا جس کو آخر
گزر ہی گئی ہے سلگتے سلگتے

Main samjha tha baad-e-saba jis ko , aakhir
Guzar hi gayi he sulagte sulagte

افسانہ تحفہ


افسانہ  Afsana

تحفہ  Tuhfa

نوٹ: یہ افسانہ او ہنری کی مشہور کہانی ‘دی گفٹ آف دی میگی’ سے ماخوذ ہے۔

Afsana Tuhfa

%d bloggers like this: