فرش پر بچوں کے دو ٹوٹے کھلونے دیکھ کر


غزل

بہ گئے پنچھی، تھا قسمت میں پروں کا ٹوٹنا
اک قیامت ڈھا گیا تھا ساحلوں کا ٹوٹنا

Beh gaye panchi, tha qismat main paroN ka tootna

Ik qayamat dha gaya tha saahiloN ka tootna

فرش پر بچوں کے دو ٹوٹے کھلونے دیکھ کر
یاد آیا اک انا سے دو دلوں کا ٹوٹنا

Farsh par bachoN k do tootay khilone dekh kar

Yaad aya ik Ana say do diloN ka tootna

دل کی بستی کی طرح افلاک بھی ہوں گے تباہ
اک جھلک دکھلا گیا ہے زاویوں کا ٹوٹنا

Dil ki basti ki taraH aflaak bhi honge tabaah

Ik jhalak dikhla gaya hay zaawioN ka tootna

ہم سفر میں تھے ابھی کہ بن گئے پتھر کے بت
اک خبر جاں کاہ تھی وہ منزلوں کا ٹوٹنا

Hum safar main thay abhi k ban gaye patthar k but

Ik khabar jaaN-kaah thi wo manziloN ka tootna

کس محبت سے بنائے دل میں اہرام وفا
دیکھتا جاتا ہو ں مرمر کے سلوں کا ٹوٹنا

Kis muhabbat say banaaye dil main ahraam e wafa

dekhta jata hoN mar mar k siloN ka tootna

درد کیا ہوتا ہے جانا، خود بچھڑ جانے کے بعد
ورنہ سنتے آرہے تھے قافلوں کا ٹوٹنا

Dard kia hota he jana, khud bichaR janay k bad

Warna sunte aarahe thay qaafiloN ka tootna

ڈھل رہی ہے ناامیدی میں ملن کی آس یوں
سلسہ در سلسلہ جیسے پلوں کا ٹوٹنا

Dhal rahi he naa-umeedi main milan ki aas, yuN

Silsila dar silsila jesay pulooN ka tootna

میرے دل کی سرزمیں سے پھوٹتے ہیں ان دنوں
آؤ دیکھو، روتے روتے آبلوں کا ٹوٹنا

Meray dil ki sarzameeN say phooth’te hein in dinoN

Aao dekho, rote rote AabloN ka tootna

یہ زمیں اور آسماں ملتے ہیں شاید اک جگہ
کچھ نہیں مشکل یہاں بھی فاصلوں کا ٹوٹنا

Ye zameeN aor aasmaaN milte hein shayad ik jaga

Kuch nahi mushkil yahaN bhi faasiloN ka tootna

تیرے جھکنے سے مکین۔ دل بھی جھک جاتاہےخود
تو سمجھتا ہے اسے کیوں حوصلوں کا ٹوٹنا

Teray jhukne say makeen e dil bhi jhuk jaata he khud

Tu samajhta hay isay kioN hosloN ka tootna

میں اگر دیکھوں سماجی زاویے سے اس کو تو
مجھ کو لگتا ہے ضروری سلسلوں کا ٹوٹنا

Main agar dekhoN samaaji zaawiye say isko tu

Mujh ko lagta hay zaroori silsiloN ka tootna

کیا تعلق ٹوٹنا اتنا ہی آساں ہے رفیع
جس طرح ہم دیکھتے ہیں بلبلوں کا ٹوٹنا

Kia ta’alluq tootna itna hi asaaN hay Rafi?

Jis taraH hum dekhte hein bulbuloN ka tootna

Advertisements

About Rafiullah Mian

I am journalist by profession. Poet and a story writer.

Posted on April 26, 2011, in Ghazal and tagged , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , . Bookmark the permalink. 7 Comments.

  1. Reblogged this on HEART BEATS یہ دھواں سا کہاں سے اٹھتا ہے and commented:
    wonderful shayri and great thoughts

    Like

  2. میرے دل کی سرزمیں سے پھوٹتے ہیں ان دنوں
    آؤ دیکھو، روتے روتے آبلوں کا ٹوٹنا
    تیرے جھکنے سے مکین۔ دل بھی جھک جاتاہےخود
    تو سمجھتا ہے اسے کیوں حوصلوں کا ٹوٹنا

    Bohat zabardast. (: Especially the last couplet.

    Like

    • Bohot shukria Maria, meray blog par aamad k liye.
      Khushi hoi k ap khud bhi Urdu main nazmain likhti hain English k sath sath. Shukria couplet ko pasanad karnay k liye.
      Aap aati rahiye.
      Ak baar phir shukria

      Like

  3. یہ زمیں اور آسماں ملتے ہیں شاید اک جگہ
    کچھ نہیں مشکل یہاں بھی فاصلوں کا ٹوٹنا
    very good shayri. please keep it up.

    Like

  4. Blood-Ink-Diary

    Aadaab Rafi Mian,

    “Kia ta’alluq tootna itna hi asaaN hay Rafi?
    Jis taraH hum dekhte hein bulbuloN ka tootna” — Buhut khuub – the sharp pang that is silent.
    yeh dil bhi…ajeeb hote hain jo uff nahi kertay. likhtey raho.

    Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: