Monthly Archives: May 2011

آرہی ہے ٹھیکری سے درد کی تازہ کھنک


غزل

جسم سے ہٹ کر کبھی سنسار میں تنہا رہا
اور کبھی یہ دکھ کہ میں اخبار میں تنہا رہا

Jism say hat kar kabhi sansaar main tanha raha

Aor kabhi ye dukh k main akhbaar main tanha raha

اپنے کمرے کے در و دیوار میں تنہا رہا
گھر سے نکلا تو کھلے بازار میں تنہا رہا

Apne kamray k dar-o-deewar main tanha raha

Ghar say nikla tu khulay bazaar main tanha raha

دیکھنے آتے رہے انبوہ کے انبوہ اور
میں کسی فن کار کے شہ کار میں تنہا رہا

Dekhne aate rahe anboh k anboh aor

Main kisi fankaar k sheh-kaar main tanha raha

قربتوں میں فاصلوں کا دکھ ملا اس واسطے
خود میں اپنے ہی دل_ سرشار میں تنہا رہا

QurbatoN main faasloN ka dukh mila is waaste

Khud main apne hi dil-e-sarshaar main tanha raha

کھالیا اک عمر دھوکا، پھر کھلا، اس بزم میں
پرکشش تھا جو، اُسی کردار میں تنہا رہا

Khaa lia ik umr dhoka, phir khula, is bazm main

Purkashish tha jo, osi kirdaar main tanha raha

تُو نہ سمجھا ہے مرے اخلاص کو، کچھ غم نہیں
کیاکہوں، میں اپنے ہی گھر بار میں تنہا رہا

Tu na samjha hay meray ikhlaas ko, kuch gham nahi

Kia kahoN, main apne hi ghar baar main tanha raha

تھے بہت جو تیری قربت میں پھلے پھولے، وہیں
ایک تھا ایسا، تری سرکار میں تنہا رہا

Thay boht jo teri qurbat main phalay-phoolay, waheeN

Aik tha aesa, teri sarkaar main tanha raha

اک طرف یاروں کی محفل میں ملیں تنہائیاں
اک طرف برسوں تلک اغیار میں تنہا رہا

Ik taraf yaaroN ki mehfil main mileeN tanhaayiaN

Ik taraf barsoN talak aghyaar main tanha raha

گاؤں کی پرکیف سانسوں نے مجھے کھینچا، مگر
خوشبوؤں میں، دامن_ کہسار میں تنہا رہا

GaaoN ki purkaif saansoN nay mujhe khencha, magar

KhushbowoN main, daaman-e-kohsaar main tanha raha

کوئی کرتا کیا مدد میری، دکھاتا کیا اُسے
اک خیال_ باعث_ آزار میں تنہا رہا

Koi karta kia madad meri, dikhata kia osay

Ik khayal-e-baais-e-azaar main tanha raha

اجنبیت کا کھلا اظہار پھولوں نے کیا
اور میں شرمندہ سا گل زار میں تنہا رہا

Ajnabiyat ka khula izhaar pholoN nay kia

Aor main sharminda sa gulzaar main tanha raha

ظالموں نے کیسی کیسی قامتوں کو ڈھادیا
نوحہ گر اک کوچہٴ مسمار میں تنہا رہا

ZaalimoN nay kesi kesi qaamatoN ko dhaa dia

Noha-gar ik koocha-e-mismaar main tanha raha

آرہی ہے ٹھیکری سے درد کی تازہ کھنک
قافلہ تاریخ کے اسرار میں تنہا رہا

Aarahi hay theekri say dard ki taaza khanak

Qaafila taareekh k asraar main tanha raha

کایناتی وسعتوں میں گردشیں ہوں یا سکوت
آدمی تو ثابت و سیٌار میں تنہا رہا

Kaayinati wus’atoN main gardisheN hoN ya sakoot

Aadmi tu saabit-o-sayyaar main tanha raha

غم خوشی کے گاؤں میں رقصاں رہا ہرپل رفیع
موسموں کے ہر حسیں تہوار میں تنہا رہا

Gham khushi k gaaoN main raqsaaN raha har pal Rafii

Mosimon k har haseeN tehwaar main tanha raha

زخم سینے پہ مسکرا رہا ہے


غزل

کوئی آسیب ہے‘ خوش آ رہا ہے
دل مرا درد ہی اٹھا رہا ہے

Koi Aasaib hey, Khush Aa raha hey

Dil mera dard hi utha raha hey

دفن کرکے میں خود کو‘ آرہا ہوں

وہ ابھی ضبط آزما رہا ہے

Dafn kar k main khud ko, aa raha hoN

Wo abhi zabt aazma raha hay

درد کو نیند آگئی  لیکن

زخم سینے پہ مسکرا رہا ہے

Dard ko neend aagayi lekin

Zakhm seenay pe muskura raha hay

جانے کیوں انتظار ہے تمھیں اب

کیا یہ لاشا تمھیں بلا رہا ہے

Jaane kioN intizaar hay tumhein ab

Kia ye laasha tumhein bula raha hay

ٹیس خود ہی پہ مسکرا رہی ہے

داغ دل پر جو بلبلا رہا ہے

Tees khud hi pe muskura rahi hay

Daagh dil par jo bilbila raha hay

اُن لبوں پر تھی شرمگیں ہنسی اور

میرے ہونٹوں پہ قہقہہ رہا ہے

Un laboN par thi sharmgeeN hansi aor

Meray hontoN pe qehqaha raha hay

میرے اور تیرے درمیاں، بتا اب

کتنی صدیوں کا فاصلہ رہا ہے

Meray aor teray darmiaNn bata ab

Kitni sadyoN ka faasla raha hay

وہ رویہ ترا، جو کھا گیا دل

اب تری ہمرہی کو کھا رہا ہے

Wo rawayya tera, jo khaa gaya dil

Ab teri hamrahi ko khaa raha hay

اے ربٌ_ کن کردے اشارہ اب مری تکمیل کا


غزل

تو نے مکمل کردیا تھا مدعا انجیل کا
اے ربٌ_ کن کردے اشارہ اب مری تکمیل کا

Tu nay mukammal kar dia tha mudd’aa injeel ka

A rabb-e-kun karday ishara ab meri takmeel ka

تخلیق کے اک کرب سے گزرا ہوں ربٌ العالمیں
دل پر وہ فن پارہ تو اب اترے مری تخئیل کا

Takhleeq k ik karb say guzraa hoN rabbul-aalameeN

Dil par wo fanparaa tu ab utray meri takhyeel ka

جب خاک بن کر آرزوئیں دل کی ساری مٹ گئیں
تب اک وسیلہ بن گیا تھا ذات کی تکمیل کا

Jab khaak ban kar aarzoeiN dil ki saari mit gayin

Tab ik waseela ban gaya tha zaat ki takmeel ka

پھر درد کا اک رقص تھا، میرا جنوں تھا اور میں
پھر کیف بے پایاں رہا تھا نفس کی تحلیل کا

Phir dard ka ik raqs tha, mera junooN tha aor main

Phir kaif be-payaaN raha tha nafs ki tehleel ka

انجام نے مجھ کو اچانک آلیا اور ڈھے گیا
ٹھہرا تھا جس کو دیکھنے، منظر تھا وہ تفصیل کا

Anjaam ne mujh ko achanak aalia aor dhay gaya

Thehra tha jis ko dekhne, manzar tha wo tafseel ka

فرصت سے اس کو دیکھنے کی آرزو دل میں رہی
فطرت نے اٹھ کر یہ کہا، ہے مسئلہ تعجیل کا

Fursat say os ko dekhne ki aarzo dil main rahi

Fitrat nay uth kar ye kaha, hay mas’ala ta’jeel ka

کب تک تمھاری عزتیں پامال ہوں گی اس طرح
اٹھ کر حقیرو روک دو، اب ہاتھ یہ تذلیل کا

kab tak tumhari izzateiN paamaal hoNgi is taraH

Uth kar haqeero rok do, ab haath ye tazleel ka

مرے وجود میں دل ٹوٹ کر بکھرتا ہے


طرحی غزل

ہر اک مقام پہ نقش سفر بناتا ہوں
جہاں ہو درد کی منزل، ادھر بناتا ہوں

Har ik maqaam pe naqsh-e-safar banata hoN

JahaaN ho dard ki manzil, udhar banata hoN

صحیفہٴ دل بے درد سے اترتی ہے
تو پھر میں درد کی تازہ خبر بناتا ہوں

Saheefa-e-dil-e-be-dard say utarti hay

Tu phir main dard ki taza khabar banata hoN

مرے وجود میں دل ٹوٹ کر بکھرتا ہے
میں کینوس پہ وہ چہرہ اگر بناتا ہوں

Meray wajood main dil toot kar bikharta hay

Main Canvas pe wo chehra agar banata hoN

کہ دل کے درد و الم میں کمی نہ رہ جائے
بہاکے خون میں اپنا جگر بناتا ہوں

K dil k dard-o-alam main kami na reh jaaye

Baha k khoon main apna jigar banata hoN

نہ جانے کیوں میں کبھی مطمئن نہیں ہوتا
گھروندے توڑ کے بار_ دگر بناتا ہوں

Na jaanay kioN main kabhi mutmaien nahi hota

Gharonday toR k baar-e-digar banata hoN

بہاکے آنسو انہیں خشک کرتا رہتا ہوں
میں درد ساز نہیں ہوں، حجر بناتا ہوں

Bahaa k aansu inheN khushk karta rehta hon

Main dard-saaz nahi hoN, hajar banata hoN

میرے چہرے پر جہنم میرے من کا پھر سے بھڑکا


غزل

میرے چہرے پر جہنم میرے من کا پھر سے بھڑکا
برف کے سورج میں آکر شعلہ تن کا پھر سے بھڑکا

Meray chehray par jahannum, meray man ka phir say bhaRka

Barf k sooraj main aakar, shula tan ka phir say bhaRka

کوہ اک احساس کا ہے، بوجھ اس پر ہے خلش کا
بے حسی کی اوس پڑ کر، دل دمن کا پھر سے بھڑکا

Koh ik ihsaas ka hay, bojh os par hay khalish ka

Be-hisi ki aos paR kar, Dil daman ka phir say bhaRka

دوزخوں سے ایک خواہش کے لیے گزرا ابھی تھا
حیف اے دل! وہ تصور اک عدن کا پھر سے بھڑکا

DozakhoN say aik khwahish k liye guzraa abhi tha

Haif ae dil! wo tasawwur ik adan ka phir say bhaRka

آسماں نے کیا اشارہ کردیا ہے آنکھ سے پھر
اک بجھا سا تل زمینوں کے ذقن کا پھر سے بھڑکا

AasmaaN ne kia ishara kardia hay aankh say phir

Ik bujha saa til zameenoN k Zaqan ka phir say bhaRka

عیش و عشرت میں مگن تھا، شست کی زد میں جو آیا
لی ہے انگڑائی فضا میں، تن زغن کا پھر سے بھڑکا

Aish-o-ishrat main magan tha, shist ki zad main jo aaya

Lee hay angRaayi fizaa main, tan zaghan ka phir say bhaRka

سانس خوش بو سے ہو ہم آہنگ کیوں کر، اے بہارو
صبح دم تنٌور لے کر من پون کا پھر سے بھڑکا

Saans khushboo say ho ham-aahang kioN kar, ae bahaaro!

Subh dam tannuur lekar, man pawan ka phir say bhaRka

اس اندھیرے کو گالیاں مت دو


غزل

وقت جب بھی عناد کو جنمے
لمحہ لمحہ فساد کو جنمے

Waqt jab bhi Enaad ko janmay

Lamha lamha fasaad ko janmay

جلتے بجھتے ہوئے چراغوں میں
باد وحشت تضاد کو جنمے

Jalte bujhte houe charaghoN main

Baad-e-wehshat tazaad ko janmay

موسم بد مزاج ، بد طینت
کیسے خوش بو نژاد کو جنمے

Mosim-e-bad-mizaaj, Bad-teenat

Kesay khushboo najjaad ko janmay

ہے دعا شہر کا ہر اک حصہ
مل کے اک اتحاد کو جنمے

Hay dua shehr ka har ik hissa

Mil k ik ittihad ko janmay

کیا خبر یہ غموں کا عالم بھی
یاں کسی دن سواد کو جنمے

Kia khabar ye ghamoN ka aalam bhi

YaaN kisi din sawaad ko janmay

تو جو دیکھے مجھے محبت سے
اک نظر اعتماد کو جنمے

Tu jo dekhay mujhe muhabbat say

Ik nazar etimaad ko janmay

پھر سے مٹی مری سلگ اٹھے
پھر سے تازہ بلاد کو جنمے

Phir say mitti meri sulag utthe

Phir say tazaa bilaad ko janmay

اس اندھیرے کو گالیاں مت دو
کیا پتا، ماہ زاد کو جنمے

Is andheray ko gaaliaN mat do

Kia pata maahzaad ko janmay

دل مرا روح اک نئی لے کر
درد رفتہ کی یاد کو جنمے

Dil mera rooh ik nayi lekar

Dard-e-rafta ki yaad ko janmay

وہ ہے فن کار اک جدا سب سے
خود ہی اپنی نہاد کو جنمے

Wo hay fankaar ik juda sub say

Khud hi apni nihaad ko janmay

Afsana Shaheed افسانہ شہید


افسانہ

شہید

ایک تصویر جو کرمچ پہ اتر آئی ہے


غزل

مجھ کو معصومئ اظہار پہ حیرت حیرت
میرے بچوں کو ہے چہکار پہ حیرت حیرت

Mujh ko masoomi-e-izhaar pe herat herat

Meray bachoN ko hay Chehkaar pe herat herat

سب کو نے رنگئ دوراں کی شکایت لیکن

ہر طرف ایک سے آثار پہ حیرت حیرت

Sub ko ne-rang-e-doraaN ki shikayat lekin

Har tarfaf aik say aasaar pe herat herat

ایک تصویر جو کرمچ پہ اتر آئی ہے
درج ہے چہرہء فن کار پہ حیرت حیرت

Aik tasweer jo Kirmich pe utar aayi hay

Darj hay Chehra-e-fankaar pe herat herat

دیکھتا ہے یونہی منظر جو چھپاکر آنسو
اس کو ہے دیدہ سرشار پہ حیرت حیرت

Dekhta hay yunhi manzar jo chupaa kar aansu

Us ko hay deeda-e-sarshaar pe herat herat

دائرے سینے پہ بنتے نہیں دیکھے اس نے
ڈوبتے وقت تھی منجدھار پہ حیرت حیرت

Daayire seenay pe bante nahi dekhay os ne

Doobte waqt thi manjdhaar pe herat herat

اس کی آہوں کو تو بخشی تھی صبا کی خوش بو
نوحہء ہجر بنے یار پہ حیرت حیرت

Os ki aahoN ko tu bakhshii thi saba ki khusboo

Noha-e-hijr bane yaar pe herat herat

طائر_ وقت بدن نوچتا رہتا ہے رفیع
خستہ دل کو نہیں منقار پہ حیرت حیرت

Taayir-e-waqt badan nochta rehtaa hay Rafii

Khasta Dil ko nahi Minqaar pe herat herat

الفت کے انتظام سے ہم آگے بڑھ گئے


غزل

لمحوں کے احترام سے ہم آگے بڑھ گئے

یوں وقت کے نظام سے ہم آگے بڑھ گئے

LamhoN k ehtiram say hum aage barh gaye

Yun waqt k nizam say hum aage barh gaye

 گرد۔ سفر میں تم نے کیا تھا ہمارے نام

اس درد کے مقام سے ہم آگے بڑھ گئے

Gard e safar main tum nay kia tha hamaray naam

Us dard k maqaam say hum aage barh gaye

کب تک مقام ہجر پہ ماتم کناں رہیں

الفت کے انتظام سے ہم آگے بڑھ گئے

Kab tak maqaam e hijr pe maatam kunaN rahein

Ulfat k intizam say hum aage barh gaye

 پھر سے جہان دل کی ہے تزئین نو شروع

پھر درد انہدام سے ہم آگے بڑھ گئے

phir say jahan e dil ki hay tazyeen e no shuroo

phir dard e inhidaam say hum aage barh gaye

وحدت سے لے کے کثرت انفاس کے گواہ

اک درجہ انقسام سے پم آگے بڑھ گئے

 Wahdat say le k kasrat e anfaas k gawah

Ik darja inqisaam say hum aage barh gaye

 اے منتقم مزاج چلے آؤ خشمگیں

اپنے تو انتقام سے ہم آگے بڑھ گئے

A muntaqim mizaaj chale aao khashmageeN

apne tu intiqaam say hum aage barh gaye

 یہ مسئلہ رہا کہ جہاں وہ رکے رفیع

اس حدٌ اختتام سے ہم آگے بڑھ گئے

 Ye masala raha k jahan wo rukay Rafi

Os hadd e ikhtitaam say hum aage barh gaye

خود کش محبت


نظم

خود کش محبت

عشق کے در پہ پاؤں دھرا
یہ تھی میری خطا
کیا پتا تھا ملے گی مجھے اک انوکھی سزا
اور جنموں پہ پھیلا رہے گا یہی سلسلہ
وہ تھا محبوب یا کوئی خود کش حسیں
جس نے میرے بدن ہی نہیں
روح کے بھی سبھی چیتھڑے
یوں اڑائے کہ پھر ریت اور اوس میں
اور مرے جسم اور روح کے درمیاں
اک ذرا فرق کرنا بھی مشکل ہوا
میں اسے اپنے ہی چھیتڑوں میں ابھر کر نکل آنے والی ہر اک آنکھ سے
اور ہر چشم حیران سے
دیکھتا رہ گیا
سوچتا رہ گیا
اور جب میرے جسم اور جاں کی ہر اک آنکھ مرنے لگی
اپنے محبوب کو ڈھونڈتا رہ گیا
جانے کتنی تھیں صدیاں جو گزریں اسی حالت نیست میں
ساری دنیا سے منھ موڑ کر ایک لیلا چلی
ڈھونڈ کر میرے جسم اور جاں کے سبھی چھیتڑے
چاہتوں کے حسیں طشت میں رکھ دیے
مجھ کو پھر لے کے آئی نئی زیست میں
پھر اڑانے مرے جسم اور جان کے چھیتڑے
اپنی خود کش محبت کے اک وار سے۔۔۔۔

Nazm

Khud-kush Muhabbat

Ishq k dar pe paaoN dhara

ye thi meri khataa

kia pata tha milegi mujhay ik anokhi saza

Aor janmoN pe phela rahega yahi silsila

Wo tha mehboob ya koi khud-kush haseeN

Jis ne meray badan hi nahi

Rooh k bhi sabhi cheetRay

YuN uRaaye k phir rait aor Os main

Aor meray jism aor Rooh k darmiaaN

Ik zara farq karna bhi mushkil hua

Main osay apne hi cheetRoN main ubhar kar nikal aane wali har ik aankh say

Aor har chashm e heraan say

Dekhta reh gaya

Sochta reh gaya

Aor jab meray jism aor jaaN ki har ik aankh marne lagi

Apne mehboob ko dhoondta reh gaya

Jaane kitni thieN sadyaN jo guzreeN isi haalat e Neest main

Saari dunya say moo moR kar aik laila chali

Dhoond kar meray jism aor jaaN k sabhi cheetRay

ChaahatoN k haseeN tasht main rakh diye

Phir sabhi apne khooN say musaffa kiye

Aor sub see diye

Mujh ko phir le k aayi nayi zeest main

Phir uRaane meray jism aor jaan k cheetRay

Apni khud-kush muhabbat k ik waar say…!

%d bloggers like this: