Monthly Archives: June 2011

یوں ہوا چلی


یوں ہوا چلی

***

یوں ہوا چلی
گرد سے اٹا، تن بدن مرا
وہ اٹھا چلی
یوں ہوا چلی
میں کہ خواب گر، غرق سر بہ سر
حسن و عشق میں، رنگ و نور میں
زندگی کی تھی بس یونہی طلب
میرے اس دل_ ناصبور میں
لہر وقت کی، سخت سنگ دل
سب بہا چلی
یوں ہوا چلی
نقش جاں فزا، رنگ دل رُبا
حسن کی ردا پر نقوش تھے ایسے جا بہ جا
فن کے آسماں پر نجوم تھے
قافلے سبھی جو وفا کے تھے، پرہجوم تھے
نقش مٹ گئے، رنگ اتر گئے
تارے بجھ گئے
قافلے لٹے
میں کھڑا ہوں اب، اپنے عہد میں
چارسو مرے سمتیں مٹ گئیں
ہوں خجل خجل، روح مضمحل
سوچتا ہوں میں
کب وفا چلی
یوں ہوا چلی۔۔!۔

YuN Hawa Chali

***

YuN Hawa Chali
Gard se ataa, tan-badan mera
Wo uTha chali
YuN Hawa Chali
Main k khwab-gar, gharq sar-ba-sar
Husn-o-ishq me, rang-o-noor main
Zindagi ki thi bus yuNhi talab
Meray is dil-e-naasaboor main
Lehr waqt ki, sakht sang-dil
Sub baha chali
YuN Hawa Chali
Naqsh jaaNfaza, rang dil-rubaa
Husn ki ridaa par naqoosh thay aesay ja-ba-ja
Fan k aasmaaN par najoom thay
Qaaflay sabhi jo wafa k thay, purhujoom thay
Naqsh mit gaye, rang utar gaye
Taaray bujh gaye!
Qaaflay lutay!
Main khara hoN ab, apne ehd main
Chaarsoo meray simteN mit gayiN
HooN khajil khajil, rooh muzmahil
Sochta hoN main
Kab wafa chali
YuN Hawa Chali

روئے زمیں پر تُو قتل۔ انسان تو کرسکتا ہی نہیں


غزل

اس دنیا میں جینے کا سامان تو کرسکتا ہی نہیں
موت کے ہوتے تیرا بھی ارمان تو کرسکتا ہی نہیں

Is dunya main jeene ka saamaan tu kar sakta hi Nahi

Mot k hote tera bhi armaan tu kar sakta hi Nahi

میرا سخن سے رشتہ کتنا ٹوٹا پھوٹا رہتا ہے
ٹوٹے پھوٹے لفظوں کو دیوان تو کرسکتا ہی نہیں

Mera sukhan say rishta kitna toota phoota rehta hay

Tootay phootay lafzoN ko deewaan tu kar sakta hi Nahi

کچھ سبزہ کرنا ہے مجھ کو، پھول کھلانے ہیں پھر سے
میں اپنے دل کی کھیتی ویران تو کرسکتا ہی نہیں

Kuch sabza karna he mujh ko, phool khilaane hein phir se

Main apne dil ki khaitee veeraan tu kar sakta hi Nahi

باہر رہ کر حسن سے اپنا دل بہلاتا رہتا ہے
من کا وحشی پابند۔ زندان تو کرسکتا ہی نہیں

Baahir reh kar husn se apna dil behlaata rehta hay

Man ka wehshi paaband-e-zindaan tu kar sakta hi Nahi

جان مری حاضر ہے لے لے اک مسکان کے بدلے بھی
تجھ پر یہ انمول انا قربان تو کرسکتا ہی نہیں

Jaan meri Haazir he le le ik muskaan k badley bhi

Tujh par ye anmol ana qurbaan tu kar sakta hi Nahi

زیست پہ تجھ کو ایک ذرا قدرت حاصل ہو تو کہ دے
روئے زمیں پر تُو قتل۔ انسان تو کرسکتا ہی نہیں

Zeest pe tujh ko aik zara qudrat haasil ho to keh de

Rooy-e-zameeN par tuu qatl-e-insaan tu kar sakta hi Nahi

اب جب کے اس کاہکشاں میں میری نیابت طے ہے تو پھر
اپنی سوچ کے کرے کو سنسان تو کرسکتا ہی نہیں

Ab jab k is kaahkashaaN main meri nayabat tay he tu phir

Apni soch k kurray ko sunsaan tu kar sakta hi Nahi

اپنے مصدر سے اک بار کیا تھا وعدہ روحوں نے
اور کسی سے جسم یہاں پیمان تو کرسکتا ہی نہیں

Apne masdar say ik baar kia tha wada roohoN ne

Aor kisi se jism yahaN paimaan tu karsakta hi Nahi

شرف یہ بس آزاد منش لوگوں کو بخشا ہے اس نے
سچی محبت آقا سے دربان تو کرسکتا ہی نہیں

Sharf ye bus aazaad manish logoN ko bakhsha he os ne

Sachi muhabbat aaqa say darbaan tu kar sakta hi Nahi

عشق نے آکر سر پھٹکا تھا در پہ خرد کے جس لمحے
عقل نے جیسا رقص کیا، وجدان تو کرسکتا ہی نہیں

Ishq ne aakar sar phatka tha, dar pe khirad k jis lamhe

Aql ne jesa raqs kia, wijdaan tu kar sakta hi Nahi

فطرت کے آنسو کا کوئی مول نہیں اس دنیا میں
آنکھ سے ٹپکے موتی کو مرجان تو کرسکتا ہی نہیں

Fitrat k aansoo ka koi mol nahi is dunya main

Aankh se tapkay moti ko marjaan tu kar sakta hi Nahi

درد


نظم

درد

درد اک داغ بن گیا دل پر
داغ سے قبل، زخم کی صورت
درد رویا تھا خون کے آنسو
آج کل درد رو نہیں سکتا
آج کا وقت کھو نہیں سکتا
*****
داغ سادہ دکھائی دیتا ہے
درد اس میں بہت ہے پے چیدہ
زندگی اُس سے بڑھ کے پے چیدہ
داغ کو دیکھ زاویے سے الگ
****
داغ جب سوکھنے لگے دل پر
ایک ٹھہراؤ آنے لگتا ہے
درد لہروں کو زیر کرتا ہے
***
موت برحق ہے، موت پے چیدہ
درد کو موت آ نہیں سکتی
**
زندگی بس یہیں دھڑکتی ہے
*

Nazm

Dard

Dard ik daagh ban gaya dil par

Daagh say qabl, Zakhm ki soorat

Dard roya tha Khoon k aansoo

Aaj kal dard ro nahi sakta

Aaj ka waqt kho nahi sakta

*****

Daagh saada dikhayi deta hay

Dard is main boht hay paycheeda

Zindagi os se baRh k paycheeda

Daagh ko daikh zaawiye se alag

****

Daagh jab sookhne lage dil par

Aik thehraao aane lagta hay

Dard lehroN ko zair karta hay

***

Mot bar-haq hay, mot paycheeda

Dard ko mot aa nahi sakti

**

Znidagi bus yaheeN dhaRakti hay

*

Afsana: Mard Nahi Rote افسانہ: مرد نہیں روتے


افسانہ

مرد نہیں روتے

Published In quarterly Ijra Karachi (Edition 10 / April-June 2012)

%d bloggers like this: