روئے زمیں پر تُو قتل۔ انسان تو کرسکتا ہی نہیں


غزل

اس دنیا میں جینے کا سامان تو کرسکتا ہی نہیں
موت کے ہوتے تیرا بھی ارمان تو کرسکتا ہی نہیں

Is dunya main jeene ka saamaan tu kar sakta hi Nahi

Mot k hote tera bhi armaan tu kar sakta hi Nahi

میرا سخن سے رشتہ کتنا ٹوٹا پھوٹا رہتا ہے
ٹوٹے پھوٹے لفظوں کو دیوان تو کرسکتا ہی نہیں

Mera sukhan say rishta kitna toota phoota rehta hay

Tootay phootay lafzoN ko deewaan tu kar sakta hi Nahi

کچھ سبزہ کرنا ہے مجھ کو، پھول کھلانے ہیں پھر سے
میں اپنے دل کی کھیتی ویران تو کرسکتا ہی نہیں

Kuch sabza karna he mujh ko, phool khilaane hein phir se

Main apne dil ki khaitee veeraan tu kar sakta hi Nahi

باہر رہ کر حسن سے اپنا دل بہلاتا رہتا ہے
من کا وحشی پابند۔ زندان تو کرسکتا ہی نہیں

Baahir reh kar husn se apna dil behlaata rehta hay

Man ka wehshi paaband-e-zindaan tu kar sakta hi Nahi

جان مری حاضر ہے لے لے اک مسکان کے بدلے بھی
تجھ پر یہ انمول انا قربان تو کرسکتا ہی نہیں

Jaan meri Haazir he le le ik muskaan k badley bhi

Tujh par ye anmol ana qurbaan tu kar sakta hi Nahi

زیست پہ تجھ کو ایک ذرا قدرت حاصل ہو تو کہ دے
روئے زمیں پر تُو قتل۔ انسان تو کرسکتا ہی نہیں

Zeest pe tujh ko aik zara qudrat haasil ho to keh de

Rooy-e-zameeN par tuu qatl-e-insaan tu kar sakta hi Nahi

اب جب کے اس کاہکشاں میں میری نیابت طے ہے تو پھر
اپنی سوچ کے کرے کو سنسان تو کرسکتا ہی نہیں

Ab jab k is kaahkashaaN main meri nayabat tay he tu phir

Apni soch k kurray ko sunsaan tu kar sakta hi Nahi

اپنے مصدر سے اک بار کیا تھا وعدہ روحوں نے
اور کسی سے جسم یہاں پیمان تو کرسکتا ہی نہیں

Apne masdar say ik baar kia tha wada roohoN ne

Aor kisi se jism yahaN paimaan tu karsakta hi Nahi

شرف یہ بس آزاد منش لوگوں کو بخشا ہے اس نے
سچی محبت آقا سے دربان تو کرسکتا ہی نہیں

Sharf ye bus aazaad manish logoN ko bakhsha he os ne

Sachi muhabbat aaqa say darbaan tu kar sakta hi Nahi

عشق نے آکر سر پھٹکا تھا در پہ خرد کے جس لمحے
عقل نے جیسا رقص کیا، وجدان تو کرسکتا ہی نہیں

Ishq ne aakar sar phatka tha, dar pe khirad k jis lamhe

Aql ne jesa raqs kia, wijdaan tu kar sakta hi Nahi

فطرت کے آنسو کا کوئی مول نہیں اس دنیا میں
آنکھ سے ٹپکے موتی کو مرجان تو کرسکتا ہی نہیں

Fitrat k aansoo ka koi mol nahi is dunya main

Aankh se tapkay moti ko marjaan tu kar sakta hi Nahi

Advertisements

About Rafiullah Mian

I am journalist by profession. Poet and a story writer.

Posted on June 21, 2011, in Ghazal and tagged , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: