Monthly Archives: July 2011

روشنی کرتے ہیں بچے کتنی دشواری کے ساتھ


دو غزلہ – دوسری غزل

حلف اٹھاتے ہیں دلوں میں عزم غداری کے ساتھ
اور پھر کار_ مُلوکیت ہو بدکاری کے ساتھ

Half uthaate hen diloN main azm-e-ghaddari k sath
Aor phir kaar-e-mulookiat ho badkaari k sath

میں قلم سے تُف یونہی تحریر کرتا جاؤں گا
موت کا پروانہ آئے عرض_ سرکاری کے ساتھ

Main qalam se Tuf yuNhi tehreer karta jaonga
Mot ka parwana aaye arz-e-sarkaari k sath

خاک چاٹیں گی زبانیں، پگڑیاں اچھلیں گی یوں
جب تلک قایم رہیں گے سر یہ سرداری کے ساتھ

Khaak chaateNgi zubanaiN, pagRiaaN uchlengi yuN
Jab talak qaayim rahengay sar ye sardaari k sath

غیرت_ ناہید ہے اقلیم_ ہفت_ کاینات
باعث_ ننگ جہاں ہے ربط درباری کے ساتھ

Gherat-e-naaheed he aqleem-e-haft-e-kaayinaat
Baais-e-nang-e-jahaaN he rabt darbaari k sath

رات دن ڈھوتے ہیں اینٹیں اس جہان_ تار میں
روشنی کرتے ہیں بچے کتنی دشواری کے ساتھ

Raat din dhotay hen einteN is jahaan-e-taar main
Roshni karte hen bachay kitni dushwaari k sath

یہ وبا کی طرح پھیلے ایک سے دوجے تلک
دفن کرنا ہے بہت مشکل وفا ‘کاری‘ کے ساتھ

Ye waba ki tarh phelay aik se doojay talak
Dafn karna he boht mushkil wafa ‘kaari’ k sath

شہر کی ہو رونقیں یا گاؤں کی ہو سادگی
ماں مشقت کررہی ہے اپنی گھرداری کے ساتھ

Shehr ki ho ronaqeiN ya gaaoN ki ho saadgi
Maa mushaqqat kar rahi he apni ghar-daari k sath

عالم_ انساں نے ان کو جب سے تنہا کردیا
رات کو سونے لگا ہوں روز پُھلواری کے ساتھ

Aalam-e-insaaN ne in ko jab se tanha kardia
Raat ko sone laga hoN roz phulwaari k sath

آسماں کی چھت شکستہ ہوگئی غم سے رفیع
صحن میں ٹوٹا تعلق جب شجرکاری کے ساتھ

AasmaaN ki chat shikasta hogayi Gham say Rafii
Sehn main toota ta’aluq jab shajar kaari k sath

کھا گئیں سبزہ زمیں کا یہ لہو کی بارشیں


دو غزلہ – پہلی غزل

یوں روا رکھیں ادائیں تو نے دل داری کے ساتھ
یاد آتی ہے تری افسوس بے زاری کے ساتھ

YuN rawaa rakheeN adaayiN tu ne Dil-daari k sath
Yaad aati he teri afsoos be-zaari k sath

زندگی دشوار تر ہوتی رہی اس واسطے
ایک ٹیڑھی جارہی پرچھائیں تھی دھاری کے ساتھ

Zindagi dushwaar tar hoti rahi is waste
Aik teRhi jaarahi parchaayiN thi dhaari k sath

کھا گئیں سبزہ زمیں کا یہ لہو کی بارشیں
کیا بسائیں بستیاں ہم چرخ_ زنگاری کے ساتھ

Khaa gayiN sabza zameeN ka ye luhoo ki baarisheN
Kia basaayiN bastiaaN hum charkh-e-zangaari k sath

آؤ رگڑیں ایڑیاں اب دشت میں روتے ہوئے
زندگانی ہو رواں پھر چشمہء جاری کے ساتھ

Aao ragReN aiRiaN ab dasht main rotay houe
Znidagaani ho rawaaN phr chashma-e-jaari k sath

خاک ہوجائے گا، خاکی کو یہی غم کھا گیا
اور فخر_ آتش_ جاں سوز ہے ناری کے ساتھ

Khaak hojaayega, khaaki ko yahi gham kha gaya
Aor fakhr-e-aatash-e-jaaN soz he naari k sath

ہوگیا پژمردہ جب سے تن مرا تیرے لیے
دوستی کرلی ہے میں نے من کی سرشاری کے ساتھ

Hogaya pazmurda jab se tan mera teray liye
Dosti karli he main ne man ki sarshaari k sath

عالم اسباب میں ہم سادگی ڈھونڈیں کہاں
روح خود ہے ان گنت پرتوں کی تہ داری کے ساتھ

Aalam-e-asbaab main hum saadgi dhondeN kahaN
Rooh khud he an-ginat partoN ki teh-daari k sath

ماں مری حساسیت سے پھر پریشاں ہی رہی
مسکرائی تھی وہ میری پہلی کلکاری کے ساتھ

Maa meri hissasiat say phir pareshaN hi rahi
Muskuraayi thi wo meri pehli kil-kaari k sath

دل مرا رومال کی مانند خوں سے تر رہے
درد کاڑھے ہیں جنوں نے خوب گل کاری کے ساتھ

Dil mera roomaal ki maanind khooN se tar rahay
Dard kaaRhe hein junoo ne khoob gul-kaari k sath

صبح دم بستر پہ میرے جا بہ جا، ہوتا ہے اب
جاگ جاتے ہیں بہت سے کرب بے داری کے ساتھ

Subh-dam bistar pe meray jaa ba jaa, hota he ab
Jaag jaate hen boht sar karb be-daari k sath

%d bloggers like this: