Monthly Archives: October 2011

شکستگی


شکستگی

پتھروں پہ لکھے ہیں
ان گنت فسانے وہ
جن کے سارے حرفوں میں
لالیاں جھلکتی ہیں
بالیاں بلکتی ہیں
خون تھوکتی ہیں یوں
جیسے پان کی پیکیں
اور ان میں قسمت کی
وہ لکیریں چلتی ہیں
جو کسی نے کھینچی ہوں
اک شکستہ خط کے ساتھ
جن میں ٹوٹ جاتا ہے
ربط ہر قدم پر یوں
جیسے سانس کا رشتہ
ٹوٹ کے بکھرتا ہے
لمحہء معین میں!

Shikastagi

PattharoN pe likhay hein
Anginat Fasanay wo
Jin k saray harfoN main
LaaliaN jhalakti hen
baaliaN bilakti hein
Khoon thokti hen yuN
jese paan ki peekaiN
Aor in main qismat ki
Wo lakeeraiN chalti hein
Jo kisi ne khainchi hoN
ik shikasta khat k sath
Jin main toot jata he
Rabt har qadam par yuN
Jesay saans ka rishta
Toot kay bikharta he
Lamha-e-mu’ayyan main!

%d bloggers like this: