Monthly Archives: January 2012

تیرے کوچے کی آخری شب میں


غزل

تم نہ تھے وسوسوں کے گھیرے تھے
گرد میرے بلا کے پھیرے تھے

Tum na thay, WaswasoN k ghairay thay

Gird meray bala k phairay thay

تیرے کوچے کی آخری شب میں
غم، خموشی، گھنے اندھیرے تھے

Teray koochay ki aakhri shab main

Gham, Khamoshi, Ghanay andheray thay

تم نے رکھا تھا سینت کر جن کو
سچ تو یہ ہے، وہ خواب میرے تھے

Tum nay rakha tha saint kar jin ko

Sach tu ye hay, wo khwab meray thay

دل میں پھر جشن کا اک عالم تھا

روح میں درد کے پھریرے تھے

Dil main phir jashn ka ik aalam tha

Rooh main dard k pharairay thay

کمرہ گھر کا گرا دیا آخر
خواہشوں کے جہاں بسیرے تھے

Kamra ghar ka gira dia aakhir

KhwahishoN k jahaN basairay thay

فاصلوں کی ڈگر پہ قدموں کے
سب نشاں میرے تھے، کہ تیرے تھے

FaasloN ki dagar pe qadmoN k

Sub nishaN meray thay, k tairay thay

جب تماشا محل میں برپا تھا
جھونپڑی میں قضا کے ڈیرے تھے

Jab tamasha Mahal main barpaa tha

JhonpRi main qaza k phairay thay

نیند میں ہم رفیع کچھ کچھ تھے
اور وہ بھی ملے سویرے تھے

Neend main hum Rafii kuch kuch thay

Aor wo bhi milay sawairay thay

دل گرچہ یہ ناراض ہے‘ آﺅ صاحب


غزل

دل گرچہ یہ ناراض ہے‘ آﺅ صاحب
خوش کتنا وہ غماز ہے‘ آﺅ صاحب

Khush hay k jo ghammaz hay, Aao Saahib

Dil garche ye naraaz hay, Aao Saahib

سوچوگے تو وحشت سے نہ آ پاؤ گے

انجام کا آغاز ہے، آؤ صاحب

Sochogay tu wahshat say na aapaogay

Anjaam ka aghaaz hay, Aao Saahib

بہتوں نے تمھیں سوچ کے چاہا ہوگا

چاہت مری ممتاز ہے، آؤ صاحب

BohtoN nay tumhain soch k chaha hoga

Chahat meri mumtaaz hay, Aao Saahib

غصے میں محبت ہے، محبت میں نشہ

ہر راز میں اک راز ہے، آؤ صاحب

Ghussay main muhabbat hay, muhabbat main nasha

Har raaz main ik raaz hay, Aao Saahib

جو بیت گیا ہے، سو پریشاں مت ہو

حالت بڑی ناساز ہے، آؤ صاحب

Jo beet gaya hay, So pareshaN mat ho

Haalat baRi nasaaz hay, Aao Saahib

تم بھی اگر آنے کے تمنائی ہو

میرے لیے اعزاز ہے، آؤ صاحب

Tum bhi agar aaney k tamannayi ho

Mairay liye ezaaz hay, Aao Saahib

عہدنامہء ہجر


عہدنامہء ہجر

اتار کر تجھے دل سے
ملول کیوں ہوں گا
کہ میں نے
عشق و وفا کے خدا سے رو رو کر
دعائیں مانگیں کہ مجھ کو بھی بے وفا کردے
سنا تھا میں نے
کہ وحشت کے جنگلوں میں کہیں
جلا کے آگ
خدا ہم کلام ہوتا ہے
تو لے گیا تھا میں لوح_جگر کے سب ٹکڑے
وہیں پہ،
کوہ_ شب_ غم کے پاس رو رو کر
میں لوٹ آیا خدا سے معاہدہ کرکے!

Ehed-Naama-e-Hijr

Utaar kar tujhay Dil say

Malool kioN honga

K main nay

Ishq-o-wafa k khuda say ro ro kar

Duayin maangeeN k mujh ko bhi bewafa karday

Suna tha main nay

K wahshat k jangaloN main kahein

Jala k aag

Khuda hamkalaam hota hay

Tu le gaya tha main loh-e-jigar k sub tukRay

WaheeN pe

Koh-e-shab-e-gham k paas ro ro kar

Main lot aaya khuda say mua’hida kar k!

عکس ترا


ڈھونڈ رہا ہوں سائے میں بھی عکس ترا
کچھ دن پہلے روح سے سایہ اترا تھا

***********

کتنوں نے دلوں میں تمھیں سوچا ہوگا


کتنوں نے دلوں میں تمھیں سوچا ہوگا
چاہت مری ممتاز ہے، آؤ صاحب

چاہت مری ممتاز ہے، آؤ صاحب

2011 in review


The WordPress.com stats helper monkeys prepared a 2011 annual report for this blog.

Here’s an excerpt:

A San Francisco cable car holds 60 people. This blog was viewed about 1,100 times in 2011. If it were a cable car, it would take about 18 trips to carry that many people.

Click here to see the complete report.

%d bloggers like this: