عہدنامہء ہجر


عہدنامہء ہجر

اتار کر تجھے دل سے
ملول کیوں ہوں گا
کہ میں نے
عشق و وفا کے خدا سے رو رو کر
دعائیں مانگیں کہ مجھ کو بھی بے وفا کردے
سنا تھا میں نے
کہ وحشت کے جنگلوں میں کہیں
جلا کے آگ
خدا ہم کلام ہوتا ہے
تو لے گیا تھا میں لوح_جگر کے سب ٹکڑے
وہیں پہ،
کوہ_ شب_ غم کے پاس رو رو کر
میں لوٹ آیا خدا سے معاہدہ کرکے!

Ehed-Naama-e-Hijr

Utaar kar tujhay Dil say

Malool kioN honga

K main nay

Ishq-o-wafa k khuda say ro ro kar

Duayin maangeeN k mujh ko bhi bewafa karday

Suna tha main nay

K wahshat k jangaloN main kahein

Jala k aag

Khuda hamkalaam hota hay

Tu le gaya tha main loh-e-jigar k sub tukRay

WaheeN pe

Koh-e-shab-e-gham k paas ro ro kar

Main lot aaya khuda say mua’hida kar k!

Advertisements

About Rafiullah Mian

I am journalist by profession. Poet and a story writer.

Posted on January 21, 2012, in Nazm and tagged , , , , , , , , , , , , , . Bookmark the permalink. 23 Comments.

  1. راہی۔میری طرف سے تم کو ترقی وکامرانی کی دعا۔جدون ادیب کے ساتھ دوبارہ کام شروع کردیا۔ جدون کی ویب سایئٹ اس کو وزٹ کر کے اپنا مشورہ عنایت کریں۔ اسلم رضا غوری “ماہنامہ معمار” کراچی http://www.urduacademy.co.nf۔

    Like

  2. kya baat hai! thoda samjhee, thoda nahi ummeed hai ke asli matlab samajh gai.

    Like

  3. Zabardast! Tons of likes for this…

    Like

  4. Aala likha hai janab..daad deita hoon:)

    Like

  5. what i understood from this poem’s first verse is ”Tark e Dunia” followed by ”Ma’rfat billah” in the comming verses. WAllaho a’lam bissawab. ”Loh e jigar ke sab tukrrai” superb.

    Like

    • Shahnaz, your observation is very well and seems that you are a poetry lover … a blessing in this era… I guess you are also a poet …!
      Thanks for taking your time to reading my humble poetry ..

      Like

  6. Iqbal Khursheed

    متاثر کن!
    مجھے کہنے دیں، یہ خیال اور تجربات کے امتزاج سے جنم لینے والی ایک قابل توجہ نظم ہے، جسے، کم از کم میری نظر میں، نثری نظم کی صنف میں رکھا جانا چاہیے۔ خیال کو نثر سے سہولت میں نظم کیا گیا ہے، نثر کا حسن قائم رہا، اور شاعری لطف بھی ۔ ۔ ۔ مبارک باد کا حق رکھتے ہیں آپ، بے شک

    Like

    • آپ کی طرف سے اس بھرپور تبصرے کے لیے بے حد ممنون ہوں۔ جہاں تک نظم و نثر کی بات ہے، تو اس کا کلیہ یہ ہے کہ اگر نظم کسی خاص بحر میں ہے تو وہ پابند نظم ہے اور اگر کسی بھی بحر میں نہیں ہے، تو نثر ہے۔ اور یہ نظم ایک خاص بحر میں ہے، جس کا ایک خاص ردھم برقرار ہے۔ اس لیے اسے نثری زمرے میں نہیں رکھا ہے۔

      Like

  7. Beautiful mashallah. But can you explain mua’hida please?

    Like

  8. ……mujh ko bhi be wafa kar de.
    wah kya khayal hai.
    aap ne is se pahle bhi tareekhi waqayat ko apnaya hai. Is khoobsorat Nazm mein to kamal hi kar diya hai. Koh-e-toor par jana har kisi ke bas ki aur himmat ki bat nahin.
    mubarak ho

    Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: