Monthly Archives: March 2012

فدا جس پر ہو دل ناراض میرا


غزل

محبت، دل نشیں، خوش بو، وفا ہو
سراپا بس وہ تسلیم و رضا ہو

Muhabbat, dil-nasheeN, Khush-boo, wafaa ho

Saraapa bus wo tasleem-o-razaa ho

فدا جس پر ہو دل ناراض میرا
جدا وہ جان_من تیری ادا ہو

Fida jis par ho dil naaraaz mera

Juda wo jaan-e-man teri adaa ho

مرا احساس مدہوشی میں جھومے
ترا سایہ شرابی سا نشہ ہو

Mera ahsaas madhoshi main jhoomay

Tera saaya sharabi sa nashaa ho

کبھی تم روز کے جھَنْجھَٹ سے نکلو
کبھی تو موج، مستی اور مزا ہو

Kabhi tum roz ky jhan-jhat say niklo

Kabhi tu moj, masti aor mazaa ho

اگر اقرار کا دن یاد آئے
جدائی کا یہ سَنّاٹا نوا ہو

Agar iqraar ka din yaad aaye

Judaayi ka ye sannaata nawaa ho

تمھارے نام داد_خوش نوائی
ذرا اک بار پھر نغمہ سرا ہو

Tumharay naam daad-e-khush-nawaayi

Zara ik baar phir naghma-saraa ho

مری راتوں کی تاریکی بڑھی ہے
خدا، صبحوں میں کچھ بڑھ کر صبا ہو

Meri raatoN ki taareeki barhi hay

Khuda, subhoN main kuch barh kar sabaa ho

نہ جانے کتنے دفتر کھول بیٹھیں
شکایت عاشقی میں گر روا ہو

Na jaanay kitnay daftar khol baithaiN

Shikayat aashqi main gar rawaa ho

میں انساں کو تڑپتے کیسے دیکھوں
?یہ ڈر ہے، آہ گر میری رسا ہو

Main insaaN ko taRaptay kesay dekhoN

Ye dar hay, aah gar meri rasaa ho?

رفیع اللہ کب سے منتظر ہے
!اگر اُس نے زباں سے کچھ کہا ہو

Rafiiullah kab say muntazir hay

Agar us nay zubaaN say kuch kaha ho!

اپنے خوابوں کو بیچتی ہے وہ


غزل

درد سے درد کھینچتی ہے وہ

اک بری لت ہے، سوچتی ہے وہ

Dard say dard khenchti hay wo

Ik buri lat hay, sochti hay wo

میرے آنسو میں کون روتا ہے

میری آنکھوں سے پوچھتی ہے وہ

Meray aansu man kon rota hay

Meri ankhoN say poochti hay wo

سرد پہروں میں اوڑھنی لے کر

دیر تک مجھ کو سوچتی ہے وہ

Sard pehroN main oRhni lekar

Dair tak mujh ko sochti hay wo

گرد میرے اجاڑ راتوں میں

کس اداسی سے ناچتی ہے وہ

Gird meray ujaaR ratoN main

Kis udasi say nachti hay wo

نیند اس کو یونہی نہیں آتی

اپنے خوابوں کو بیچتی ہے وہ

Neend usko yunhi nahi aati

Apnay khwaboN ko baichti hay wo

اپنی آشُفْتَگی کو وہ جانے

گھاؤ اپنا جو نوچتی ہے وہ

Apni aashuftagi ko wo janay

Ghaao apna jo nochti hay wo

دفن کرتی ہے کوکھ میں جب ایک

اک گماں اور سینچتی ہے وہ

Dafn karti hay kokh main jab aik

Ik gumaN aor sainchti hay wo

کیا پتا، لوٹ کر نہ آئے پھر

سایہ ڈر کر دبوچتی ہے وہ

Kia pata, loat kar na aaye phir

Saya dar kar dabochti hay wo

یہ جام_ سرخ کسی شب اُچھلنے والا ہے


غزل

یہ جام_ سرخ کسی شب اُچھلنے والا ہے
مزاج_زیست یہیں سے بدلنے والا ہے

Ye jaam-e-surkh kisi shab uchalnay wala hay

Mizaj-e-zeest yaheeN say badalnay wala hay

سرک رہی ہیں درون_مکاں قبائیں پھر
مزاج_یار برہنہ نکلنے والا ہے

Sarak rahi hain daroon-e-makaaN qabayiN phir

Mizaj-e-yaar barehna nikalnay wala hay

ستم کیا کہ روایت نئ نئ ڈالی
یہ اژدہا تو مجھی کو نگلنے والا ہے

Sitam kia k riwayat nayi nayi daali

Ye ajdaha tu mujhii ko nigalnay wala hay

ترے دیار میں رقصاں رہا صدی بھر کو
خیال_یار ہے، پھر سے سنبھلنے والا ہے

Tiray dayar main raqsaaN raha sadi bhar ko

Khayal-e-yaar hay, phir say sanbhalnay wala hay

پھر اس کے بعد اُسے بھی قرار آئے گا
سمے کے طاق سے لمحہ پھسلنے والا ہے

Phir is k bad usay bhi qaraar aayega

Samay k taaq say lamha phisalnay wala hay

زوال پر ہیں ستارے مری امیدوں کے
تمھارے پیار کا سورج بھی ڈھلنے والا ہے

Zawaal par hain sitaray meri umeedoN k

Tumharay piyar ka sooraj bhi dhalnay wala hay

مرے نفس کی حرارت ہے حلقہء زنجیر
اب اس کے ضبط کا بندھن پگھلنے والا ہے

Miray nafas ki hararat hay halq-e-zanjeer

Ab us k zabt ka bandhan phigalnay wala hay

ذات کی کہکشاں سے ہٹ کر ہے


غزل

ذات کی کہکشاں سے ہٹ کر ہے
وہ جو ضم ہے وجود کے اندر

آج تک چین سے نہ سوپایا
اک جہاں ہست و بود کے اندر

عشق کے شاہ کو پسند آئی
درد کی رو جنود کے اندر

اس کے ذروں میں رقص جاری ہے
آگ ہے اس جمود کے اندر

کیوں تڑپتی ہے، کیا ہے غم اس کو
ماتمی لے سرود کے اندر

جانے کیا کیا چھپا کے بیٹھی ہے
ذات باری نمود کے اندر

ہیں فسانے ارب کھرب بکھرے
تیرے میرے شہود کے اندر

عاشقا! اٹھ کے گھر جلا اپنا
مسکرا موج دود کے اندر

کیا کہوں اس گریز پائی کو
جو ہے تیرے ورود کے اندر

Zaat ki kahkashaN say hat kar hay
Wo jo zam hay wujood k andar

Aaj tak chain say na so paya
Ik jahaN hast-o-bood k andar

Ishq k shah ko pasand aayi
Dard ki ro Junood k andar

Is k zarroN main raqs jaari hay
Aag hay is jamood k andar

KioN taRapti hay, kia hay gham is ko
Matami Lay sarood k andar

Jaanay kia kia chupa k bethi hay
Zaat-e-baari namood k andar

Hain fasanay arab kharab bikhray
Teray meray shuhood k andar

Aashiqa, uth k ghar jala apna
Muskura moj-e-dood k andar

Kia kahoN is guraiz-paayi ko
Jo hay teray wurood k andar

%d bloggers like this: