Monthly Archives: April 2012

تاریکیوں کا رقص ہے دِل بَر کے آس پاس


Dedicated to my 2 dearest blogger friends:
Mr. Shakil Akhtar
Shaheen Sultan

غزل

صدیوں سے راکھ سوئی ہو اخگر کے آس پاس
جذبے پڑے ہوئے ہیں یوں مَنظر کے آس پاس

SadyoN say raakh soyi ho akhgar k aas paas
Jazbay paRay houe hain yuN manzar k aas paas

میں روشنی بَہ دَست کہاں پھر رہا ہوں، حَیف
تاریکیوں کا رقص ہے دِل بَر کے آس پاس

Main roshni ba-dast kahan phir raha hoN Haif
TareekioN ka raqs hay dil-bar k aas paas

مجھ میں نمو بَبُول کی یوں ہی نہیں ہوئی
بوئی ہے تم نے کچھ تو خَلِش دَر کے آس پاس

Mujh main namoo babool ki yuNhi nahi hoi
Boyi hay tum nay kuch tu khalish dar k aas paas

مجھ سے الجھ رہے ہیں کہ تعبیر دو ہمیں
وہ خواب جو بکھر گئے بستر کے آس پاس

Mujh say ulajh rahay hain k tabeer do hamain
Wo khwab jo bikhar gaye bistar k aas paas

برپا ہے جس کی سوچ میں ہنگامہء خیال
رسّی تڑپ رہی ہے اُسی سر کے آس پاس

Barpaa hay jis ki soch main hangaama-e-khayaal
Rassi tarap rahi hay usi sar k aas paas

واعظ کو ہو ذرا سا بھی کھٹکا گرفت کا
فتوے اُلجھنے لگتے ہیں مِنبر کے آس پاس

Waaiz ko ho zara sa bhi khatka garift ka
Fatway ulajhnay lagtay hain minbar k aas paas

مجبوریوں کی چُپ ہے کوئی بے سبب نہیں
دکھ بولتے رہے ہیں مِرے گھر کے آس پاس

MajboorioN ki chup hay koi be-sabab nahi
Dukh boltay rahay hain meray ghar k aas paas

برسوں سے تِشنَگی میں تڑپتے خیال کو
چھوڑ آیا کل رفیع سمُندر کے آس پاس

BarsoN say tishnagi main taRaptay khayal ko
ChoR aaya kal Rafii samundar k aas paas

تاریکیوں کا رقص ہے


میں روشنی بَہ دست کہاں پھر رہا ہوں، حَیف
تاریکیوں کا رقص ہے دِل بَر کے آس پاس

Main Roshni Ba-Dast kahaN phir raha hoN, Haif

TaareekioN ka Raqs hay Dil-Bar k Aas-Paas

تیرے ماتھے کا شمس ہے درکار


قطعہ

سایہ بن کر دعا نہ دے مجھ کو
سبز ہاتھوں کا لمس ہے درکار

میرے من کے اندھیرے گہرے ہیں
تیرے ماتھے کا شمس ہے درکار

Saya ban-kar dua na day mujh ko
Sabz haathoN ka lams hay darkaar

Meray man k andheray gehray hain
Teray maathay ka shams hay darkaar

***

***

%d bloggers like this: