تاریکیوں کا رقص ہے


میں روشنی بَہ دست کہاں پھر رہا ہوں، حَیف
تاریکیوں کا رقص ہے دِل بَر کے آس پاس

Main Roshni Ba-Dast kahaN phir raha hoN, Haif

TaareekioN ka Raqs hay Dil-Bar k Aas-Paas

Advertisements

Posted on April 13, 2012, in Asha'ar and tagged , , , , , , , , , , . Bookmark the permalink. 6 Comments.

  1. iqbal khursheed

    متاثر کن، اور قابل توجہ
    ہمیشہ کی طرح

    Like

  2. Blood-Ink-Diary

    Aadaab Rafiullah,
    Buhut khoob….It’s beautifully simple, yet, capturing the dance of the humaness in a human, a waltz of emotions.
    Taaziim.
    aabaad rahain dost.

    Like

    • Adaab Shaheen,
      I found a very nice thought in this comment. Waltz of Emotions. It means; emotions dance around one another. Wah. So nice.
      Thanks for your nice comment.
      Always be happy. 🙂

      Like

  3. تاریکیوں کا رقص ہے دِل بَر کے آس پاس

    کیوں جل گیا نہ تاب رخ یار دیکھ کر
    جلتا ہوں اپنی طاقت دیدار دیکھ کر

    لگتا ہے یہ ایک نیا اور انوکھا خیال ہے- دلبر کے گرد تاریکی – شاید دلبر بدل گیا ہے- اپنے وطن کی محبت میں لوگ کیسا محسوس کرتے ہوں گے- یہ دیکھو-

    Like

    • جناب، آپ نے ایک نیا رخ دریافت کیا ہے اس مصرعے کا۔ اسی لیے تو میں ہر بار آپ کا تبصرہ پڑھنےسے پہلے توقع کرنے لگتا ہوں کہ کوئی نئی بات پڑھنے کو ملے گی۔ میں آپ کا نہایت ممنون ہوں۔ سدا سلامت رہیں۔

      Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: