Monthly Archives: May 2012

جانے کیا پَدمَنی پہ اُترا ہے


غزل

یار ہے، دُشمنی پہ اُترا ہے
عالم اک سَنسَنی پہ اُترا ہے

آنکھ حیران کوہِ غم کی ہے
عشق جو مُنحَنی پہ اُترا ہے

وقت کے ناخُدا پریشاں ہیں
جانے کیا پَدمَنی پہ اُترا ہے

ہجر حیران اور لب بستہ
وصل ناگفتَنی پہ اُترا ہے

مُسکراہٹ بھی دے نہیں پاتا
قَحْط ایسا غنی پہ اُترا ہے

وہ اَناکیش رِفعَتوں سے اب
حالتِ جاں کنی پہ اُترا ہے

Ghazal

Yaar hay, dushmani pe utra hay
Aalam ik sansanii pe utra hay

 

Aankh heraan koh-e-gham ki hay
Ishq jo munhanii pe utra hay

 

Waqt k naa-khuda pareshaaN haiN
Jaanay kia padmani pe utra hay

 

Hijr hairaan aor lab-basta
Wasl naaguftanii pe utra hay

 

Muskurahat bhi de nahi paata
Qaht aesa ghanii pe utra hay

 

Wo anaa-kaish rifatoN say ab
Haalat-e-jaaN-kanii pe utra hay


مَصرف


A year old poem…

مَصرف

وہ وقت بھی آئے گا تجھی پر
کہ وقت دریا کی شکل
بہ تو رہا ہی ہوگا
اور اس کے ٹھہرے کنار پر تو
یوں بیٹھ کر انگلیوں پہ اکثر
گھڑی گھڑی کو شمار کرکے
بِتائے گا وقت کو، مگر وہ
نہ بیت پائے گا ایک پَل بھی
نہ دیکھ پائے گا ایک کَل بھی
جہاں کا جتنا بھی وقت ہوگا
وہ تیری مُٹھی میں بند ہوگا
مگر نہ ہوگا تو اِس کا مَصرف۔۔۔

Masraf

Wo waqt bhi aayega tujhi par
K waqt darya ki shakl
Beh tu raha hi hoga
Aor os k thehray kinaar par tuu
YuN baith kar unglioN pe aksar
GhaRi ghaRi ko shumaar kar-k
Bitaayega waqt ko, magar wo
Na beet paayega aik pal bhi
Na daikh paayega aik Kal bhi
Jahan ka jitna bhi waqt hoga
Wo teri mutthi main band hoga
Magar na hoga tu is ka Masraf…

!آخری دم تک


!آخری دم تک

ابتدائے آدم سے
ابتلائے آدم تک۔۔۔
سلسلے غلاظت کے
اب دراز اتنے ہیں
بس، نکال پاتا ہوں، انگلیوں کے پوروں کو
بے کنار دَل دَل سے
جن سے وِرد کرتا ہوں
صبح شام پاکی کی
جن میں جذب ہوتی ہے
نور اِس حقیقت کی۔۔۔۔۔
پاکیاں اُترتی ہیں
عظمتوں سے دَل دَل میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری اک کہانی ہے
جانے کتنے قرنوں پر پھیل کر سسکتی ہے
گرنے والے آنسو کا ذایقہ پرانا ہے
دل لگی پرانی ہے
پیار بھی پرانا ہے
نفرتوں کے دَل دَل میں
چِپچپی پرانی ہے
ابتدائے آدم سے
ابتلائے آدم تک
سوچ کے سبھی پہلو
ایک رخ پہ بہتے ہیں
فرق بس ذرا سا ہے
کل اسی غلاظت کے ڈھیر چھوٹے چھوٹے تھے
آج یہ پہاڑوں کی چوٹیوں سے بھی اُٹھ کر
آسماں کی چھت چھوکر
داغ دار کرنے کی کوششوں میں ہیں بے کل
بے صدا اُچھلتے ہیں
آگ اک اُگلتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سلسلے غلاظت کے
توڑ کر حصارِ جسم
اندروں میں بستے ہیں
جاں گداز جذبوں کو
درد میں تپاتے ہیں، کربِ جاں میں کستے ہیں
بدبوؤں میں روتے ہیں
خوش بوؤں میں ہنستے ہیں
یاخدا ترے بندے
دَل دَلوں میں کیچڑ کے
!کس خوشی سے دھنستے ہیں
جب بِساند اٹھتی ہے ذہن و دل کے آنگن سے
آسماں اٹھاتے ہیں
اپنے ماتمی سر پر۔۔۔۔
پاکیاں طلب کرکے
اِک ذرا سا پوروں کو
وہ نکال پاتے ہیں
سلسلے غلاظت کے ساتھ ساتھ چلتے ہیں
اور آخری دم تک
!ڈبکیاں لگاتے ہیں

 Aakhri dam tak!

Ibtidaay-e-aadam say
Ibtilaay-e-aadam tak….
Silsilay ghalazat k
Ab daraaz itnay hain
Bus, nikaal paata hoN, unglioN k porooN ko
Be-kinaar dal-dal say
Jin say wird karta hoN
Subh-o-Shaam paaki ki

in roman, continue reading

!بے چہرگی


Ye nazm FaceOff k naam say honay wale aek workshop k silsilay main kahi gayi hay.

!بے چہرگی

ہزار چہرے
ہر ایک چہرے پہ ایک چہرہ
سجا ہے ایسا
کہ جیسے سکّے کے دو رخوں میں
بٹی حقیقت
مگر یہ چہرے پہ ایک چہرہ
فسوں ہے یارو!
اور ایسے چہروں کی کیا کمی ہے!
ہر اک نگر میں ہزار چہرے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مری زمیں پر محبتوں کی
ہزار رنگوں میں فصلِ گل کی
ہزار صدیوں سے کھیتیاں لہلہارہی تھیں
یہ اک صدی جو عذاب بن کر
ہمارے گلشن میں آبسی ہے۔۔۔
بتاؤ مجھ کو، نمو کہاں پر ہوئی ہے اس کی
یہ کس ستارے نے اس کو جنما
کہیں پرانی کسی صدی کی
سسکتی، خوں تھوکتی، دمِ مرگ پر تڑپتی
جڑوں نے جوڑا ہے رابطہ کوئی اِس صدی سے
جو تازہ کاری کے اک فسوں سے
ہوئی مُعَنْوَن
کہ جس نے چہروں پہ ایک چہرہ مزید تھوپا
یہ اک اضافی، یہ ایک خونیں
یہ ایک بے درد پتھروں جیسا سخت چہرہ
اور ایسے چہرے ہیں اب ہزاروں
ہر اک نگر میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
!فضا کو دیکھو
یہ کیا فسوں سے بھری نہیں ہے؟
یہاں پہ معصومیت سے کِھلواڑ کس نے کھیلا؟
ہم ہی نے کھیلا
سبھی نے مل کے یہاں پہ لوٹی ہے اس کی عصمت
کبھی زمیں کی حدود کے نام سے ہے لوٹی
کبھی کسی زن کے نرم نقش و نگار اپنے
کریہہ دانتوں سے ایسے نوچے
کہ اپنی پہچان بھول بیٹھے
کبھی تو غیرت پہ تھوک کر اپنی
بیٹیوں کے حقوق کھاکے
اور اِن سے بڑھ کر
کبھی خدا و رسول کے نام پر بھی آئی نہ شرم کوئی
خدائے برتر نے آسماں سے کُھلی ہدایت اتار دی ہے
مگر یہ مُلا، عجیب ملا
عجیب اِن کی شریعتیں ہیں
جو اِن سے کترا کے جائیں تو یہ اُتار دیں اُن کی گردنیں بھی
کبھی سیاسی، کبھی معاشی
ہیں احمقوں کے عجیب نعرے۔۔۔
جہاں پہ جس کو ذرا سا موقع بھی مل گیا ہے
وہیں پہ اُس نے
زمیں کی عصمت بھَنْبھُوڑ دی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ اِس صدی کے کریہہ چہرے ہیں
جن کی تعداد ہے ہزاروں
ہر اک نگر میں
مجھے تو افسوس بس یہی ہے
کہ ہم پڑے ہیں اگر مگر میں
کبھی چھپاتے ہیں اپنا چہرہ
جو خوں سے رنگیں، کٹا پھٹا ہے
کبھی دکھاتے ہیں ایسا چہرہ
ہے جس پہ معصومیت کا پہرہ
ارے، اے لوگو۔۔۔
!عجیب لوگو
یہ کیا تماشا لگارہے ہو
یہ کیسے چہرے دکھارہے ہو
فسوں میں لپٹے
!دھواں سا چہرے
کبھی حقیقت سے بھی نگاہیں ملاؤ لوگو
کہ تم تو لاچارگی کے عالم میں
تازہ کاری کی اِس صدی میں
!بغیر چہرے کے جی رہے ہو

Be-chehragii

Har aek chehray pe aek chehra

Saja hay aesa

K jesay sikkay k do rukhoN main

Bati Haqeeqat

in roman, continue reading

Afsana Khail افسانہ کھیل


افسانہ کھیل

Afsana Khail

Published In quarterly Ijra Karachi (Edition 9 / January-March 2012)

%d bloggers like this: