!آخری دم تک


!آخری دم تک

ابتدائے آدم سے
ابتلائے آدم تک۔۔۔
سلسلے غلاظت کے
اب دراز اتنے ہیں
بس، نکال پاتا ہوں، انگلیوں کے پوروں کو
بے کنار دَل دَل سے
جن سے وِرد کرتا ہوں
صبح شام پاکی کی
جن میں جذب ہوتی ہے
نور اِس حقیقت کی۔۔۔۔۔
پاکیاں اُترتی ہیں
عظمتوں سے دَل دَل میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری اک کہانی ہے
جانے کتنے قرنوں پر پھیل کر سسکتی ہے
گرنے والے آنسو کا ذایقہ پرانا ہے
دل لگی پرانی ہے
پیار بھی پرانا ہے
نفرتوں کے دَل دَل میں
چِپچپی پرانی ہے
ابتدائے آدم سے
ابتلائے آدم تک
سوچ کے سبھی پہلو
ایک رخ پہ بہتے ہیں
فرق بس ذرا سا ہے
کل اسی غلاظت کے ڈھیر چھوٹے چھوٹے تھے
آج یہ پہاڑوں کی چوٹیوں سے بھی اُٹھ کر
آسماں کی چھت چھوکر
داغ دار کرنے کی کوششوں میں ہیں بے کل
بے صدا اُچھلتے ہیں
آگ اک اُگلتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سلسلے غلاظت کے
توڑ کر حصارِ جسم
اندروں میں بستے ہیں
جاں گداز جذبوں کو
درد میں تپاتے ہیں، کربِ جاں میں کستے ہیں
بدبوؤں میں روتے ہیں
خوش بوؤں میں ہنستے ہیں
یاخدا ترے بندے
دَل دَلوں میں کیچڑ کے
!کس خوشی سے دھنستے ہیں
جب بِساند اٹھتی ہے ذہن و دل کے آنگن سے
آسماں اٹھاتے ہیں
اپنے ماتمی سر پر۔۔۔۔
پاکیاں طلب کرکے
اِک ذرا سا پوروں کو
وہ نکال پاتے ہیں
سلسلے غلاظت کے ساتھ ساتھ چلتے ہیں
اور آخری دم تک
!ڈبکیاں لگاتے ہیں

 Aakhri dam tak!

Ibtidaay-e-aadam say
Ibtilaay-e-aadam tak….
Silsilay ghalazat k
Ab daraaz itnay hain
Bus, nikaal paata hoN, unglioN k porooN ko
Be-kinaar dal-dal say
Jin say wird karta hoN
Subh-o-Shaam paaki ki

Jin main jazb hoti hay
Noor is haqeeqat ki…..
PaakiaN utarti hain
Azmaton say dal-dal main
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Mairi ik kahani hay
Jaanay kitnay qarno par phail kar sisakti hay
Girnay walay aansu ka zaayiqa purana hay
Dil-lagi purani hay
Piyar bhi purana hay
NafratoN k dal-dal main
Chip-chipi purani hay
Ibtidaa-e-aadam say
Ibtilaay-e-aadam tak
Soch k sabhi pehloo
Aek rukh pe behtay hain
Farq bus zara sa hay
Kal isi ghalazat k dhair chotay chotay thay
Aaj ye pahaRoN ki chotioN say bhi uth kar
AasmaaN ki chat choo kar
Daagh-daar karnay ki koshishoN main hain bay-kal
Bay-sada uchaltay hain
Aag ik ugaltay hain
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Silsilay ghalazat k
ToR kar hisaar-e-jism
AndarooN main bastay hain
JaaN-gudaz jazboN ko
Dard main tapaatay hain, karb-e-jaaN main kastay hain
Bad-bowoN main rotay hain
Khush-bowoN main hanstay hain
Yaa Khuda teray banday
Dal-daloN main keechaR k
Kis khushi say dhanstay hain!
Jab bisaand uth’ti hay zehn-o-dil k aangan say
AasmaaN uthatay hain
Apnay maatami sar par….
PaakiaaN talab kar k
Ik zara say porooN ko
Wo nikaal paatay hain
Silsilay ghalazat k sath sath chaltay hain
Aor aakhri dam tak
DubkiaaN lagatay hain!

Advertisements

About Rafiullah Mian

I am journalist by profession. Poet and a story writer.

Posted on May 18, 2012, in Nazm and tagged , , , , , , , , , , , , , , , . Bookmark the permalink. 14 Comments.

  1. Khoob khoob…eise hi likhte rahein aur agei barrte rahein:)

    Like

  2. my words mite be too small to comment on something this heart touching. I am a fan of urdu poetry and admire it since the age when children usually dont take interest in it.

    Like

  3. بے شک، ابتدائے آدم سے ابتلائے آدم تک غلاظت کے سلسلے اتنے دراز ہیں کہ تاریخ سیاہ دلدل معلوم ہوتی ہے۔ آپ کی کہانی، ہر دوسرے شخص کی کہانی ہے، جو جانے کتنے قرنوں پر پھیلی سسکتی ہے۔
    “گرنے والے آنسو کا ذایقہ پرانا ہے۔”
    کیا انوکھا جملہ ہے۔ بہت خوب، نظم میں دمکتے تجربات حرکت کرتے ہیں، حیران کرتے ہیں، امکانات پیدا کرتے ہیں۔
    متاثر کن!!

    Like

    • لگتا ہی نہیں ہے کہ آپ شاعری کے دلدادہ لوگوں میں سے نہیں ہیں۔
      اتنے اچھے تبصرے پر شکریہ قبول کریں جناب۔

      Like

  4. Blood-Ink-Diary

    Rafi, buhut khoob.
    I think others have said it beautifully, my words are failing me…
    Tasleem.
    Dil shaad rahein.

    Like

  5. dil doob doob jata hai aap ki is tasweer kushayi par aur haqeeqat jo bahot ghaleez hai usko waisa hi dikhane par. pahle ki nazm be chehrgi aur ab yeh, lagta hai aap ka hissas dil bahot hi beqarar hai. Allah aap ko sukoon ataa kare. Aameen

    Like

    • These days I am haunted by such thoughts, wanting to feel a true sense of complete purity, knowing that it’s not possible without getting into a soul. Dua k liye mamnoon hoN Janaab. Main khud bhi yahi dua mangta rehta hoN. Allah apko izzat aor sihat ata karta rahay.

      Like

  6. Humera Mahboob

    ALLAH ALLAH….KIA HI GEHRA KHAYAL HY
    BUS, NIKAAL PAATA HON, UNGLION K POROON KO
    Lajab!

    Like

  7. ابتدائے آدم سے
    ابتلائے آدم تک۔۔۔
    سلسلے غلاظت کے
    اب دراز اتنے ہیں
    بس، نکال پاتا ہوں، انگلیوں کے پوروں کو
    بے کنار دَل دَل سے

    buhut fikr angaiz kalaam
    Soch k Dareechon ko Waa karta hua
    buhut gehra khayaal,buhut si Daad haazir hay
    Salamat Rahen .. Aamin

    Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: