لمس


لمس

راگ پُروی کا لمس
کائناتی رگوں سے ٹپک کر
میرے فانی جسم کے ذرے ذرے میں
ایسے مل چکا ہے جیسے
روزِ ازل قدرت کے ہاتھوں
مشتِ خاک میں عرقِ تخلیق
اے لمس
آج تو میرا مخاطب ہے
ابدی لہر کی طرح
انسانوں کے گرد
بُنی جانے والی فضا میں
میرا وجود تیرے وجود کا متلاشی رہا ہے
تیرا وجود میرے وجود کو
اپنے نام کی طرح وہ لمس عطا کرتا ہے
جو درد اور سکون کے سنگم پر
لجلجے عرقِ تخلیق سے جنم لیتا ہے
اور اے لمس
میں تجھے
ایک وجود سے دوسرے وجود تک
تیرے سفر کے نہایت لطیف لمحات میں
کیوں نہ ٹھہر کر دیکھوں۔۔۔
کہ تجھے محسوس کرنے والے
جب ارتقائی جست بھرنے کی تمنا میں
اپنے تخلیقی سوتوں پر دیوانگی کے عالم میں
تیشہ چلاتے ہیں
اور خود میں پھوٹ بہنے کے لیے
کائنات کے عظیم الجُثہ غیر مرئ ایٹم کو
اپنے اندر پھاڑ دیتے ہیں
اور
تجھے دیکھنے کی منزل پر آتے ہیں
تو
مجسم خلش بن جاتے ہیں
اے لمس
تو ہمیشہ مسرت کے الوہی ململی پردوں میں
درد کیوں منتقل کرتا ہے۔۔۔

Lams

Raag Purvi ka lams
Kaayinaati ragoN say tapak kar
Meray faani jism k zarray zarray main
Aesay mil chuka hay jaisay
Roz-e-azal qudrat k hathoN
Musht-e-khaak main araq-e-takhleeq

A Lams….
Aaj tuu mera mukhatib hay
Abadi lahr ki tarah
Insano k gird
Bunii jaanay walii fizaa main
Mera wajood teray wajood kaa mutalashi raha hay
Tera wajood meray wajood ko
Apnay naam ki tarah wo lams ata karta hay
Jo dard aor sukoon k sangam par
Lajlajay araq-e-takhleeq say janam leta hay
Aor a lams…
Main tujhay
Aek wajood say doosray wajood tak
Teray safar k nihayat lateef lamhaat main
KioN na thehr kar dekhoN
K tujhay mehsoos karnay walay
Jab irtiqaayi jast bharnay ki tamanna main
Apnay takhleeqii sotoN par deewangi k alam main
Teesha chalatay hain
Aor khud main photo behnay k liye
Kaayinaat k azeem-ul-jussa ghair-marayi atom ko
Apnay andar phaaR detay hain
Aor
Tujhey dekhnay ki manzil par aatay hain
Tu
Mujassam Khalish ban jaatay hain
A Lams
Tuu hamesha masarrat k uloohi malmalii pardon main
Dard kioN muntaqil karta hay…!

Advertisements

About Rafiullah Mian

I am journalist by profession. Poet and a story writer.

Posted on July 3, 2012, in Ghair Urozii Nazm and tagged , , , , , , , , , , , , , , , , , , , . Bookmark the permalink. 8 Comments.

  1. Iqbal Khursheed

    تمھیں یاد ہے دوست، چند روز قبل، اپنے معدے بھرتے سمے _ آہ وہ بھی کیا وقت تھا_ میں نے تم سے الہامی کتابوں کے ادبی ہونے کی بابت بات کی تھی، اور عہد نامہ قدیم اور جدید میں تیرتے ادبی عناصر کا ذکر کیا تھا۔ مجھے پروا نہیں کہ کوئی مجھے سے متفق ہوتا ہے یا نہیں، پر دوست، اس تحریر میں _ جس میں زبان کو برتنے میں خوب مہارت برتی گئی ہے، جس میں خیال کو پیش کرنے میں پختگی پیوست ہے _ ایک الہامی رنگ بھی ہے، وہ رنگ جو سلمان کی غزل الغرلات میں نظر آتا ہے۔ میں خود کو سراہنے سے باز نہیں رکھ سکا

    Like

    • جی ہاں دوست، اور میں نے روایتی طور پر (یعنی جغرافیائ روایت) تمھارے ساتھ اختلاف روا رکھا۔ حالاں کہ میں اس حقیقت سے انکار کی جراءت نہیں کرسکتا کہ الہامی کتابوں کی ایک نمایاں خصوصیت یہ بھی رہی ہے کہ وہ ادبی شاہ کار ہیں۔ کم سے کم الفاظ میں، وسیع تر مفاہیم کے ساتھ حقیقی اساطیر کا نہایت سادہ بیان۔ میں تمھاری اس بات (میری نظم میں الہامی رنگ کی بابت) پر محض اس لیے حیرت کا اظہار کرسکتا ہوں کہ یہ نظم ہوتے سمے میری حالت بہت عجیب سی ہیجان زدہ سی تھی، اور ایسا پہلے کبھی نہ ہوا تھا، اور تم نے اس رمز کو نظم کے دروبست سے پالیا (جانے وہ کس کا لمس تھا) ۔ میں اتنے بھرپور تبصرے کے لیے بہت ممنون ہوں۔ لیکن سلمان کی غزل الغزلات کی بابت کچھ اور بتائیں۔

      Like

  2. Blood-Ink-Diary

    Buhut khoob, Rafi mian.

    ‘Raag Purvi’ – “ham to samajhe the ke ek zaKhm hai bhar jaayegaa
    kyaa Khabar thii ke rag-e-jaa.N me.n utar jaayegaa ” (Parveen Shakir).

    Dil shaad rahein.

    Aadaab,
    Shaheen

    Like

    • wah, kia khoob shair sunaya hay ap nay 🙂
      ye ‘raag purvi’ ka lams hay jo kabhi kabhi jism say pehlay rooh ko choo leta hay aor ….

      Aadaab

      Like

      • Blood-Ink-Diary

        aap ka adhuura sentence…”aor “….?

        Jawaab:

        Jab tabiyat kisi pe aati hain
        Maut ke din kareeb hote hain

        And, this is what the “rooh ko choo leta hay” does — one perishes away, in silence.

        Aadaab

        Like

  3. lams par yeh azeem nazm behad khoobsoorat hai.takhleeq ke lamhaat aur dard aur malmali parde wah kya tarkeeben hain kya khayalaat haiN. the last two lines are the essence. wah kya takhleeq hai. arq e takhleeq..

    Like

    • Ap ka husn-e-nazar hay Shakil Sahib, lekin ap jesay zehn rasa log na hoN tu takhleeqkaar ki kia ahmiat reh jaayegii, Jab-k is kayinaati mazhar main aek cheez ki pehchaan k liye doosri cheez ka hona bohot zaroori hay. Allah ap ko salamat rakhay.

      Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: