بے بسی


بے بسی

محبت میں اپنے اونچے منصب سے اتر کر
میں تیری چاہت کی منزل کی طرف
ایک سال خوردہ کچھوے پر
باگیں کسنے کے بعد
ممکنہ تیزرفتاری سے محو سفر ہوچکا ہوں
کیا تیری بنائی ہوئی آگ، مٹی، ہوا اور پانی
یہ سب دیکھ کر
تجھ سے سرگوشی کرنے کی جراءت کرتے ہیں
کہ ولادت کے دن سے
ہماری گرفت میں آیا ہوا
تیرا دیوانہ کتنا بے بس ہے!
میری دیوقامت سواری
جب پانی پر اپنا سفر شروع کرتی ہے
تو مجھے خیال گزرتا ہے کہ
کبھی اس پر تیرا بھی تخت ہوا کرتا تھا
اور میں کچھوے کے سخت خول پر
اپنی تمام تر شکستگی کے باوجود
خود کو باربار پھسلنے سے بچا کر
اُس تخت کے بارے میں سوچتا ہوں
تو حیران ہوتا ہوں کہ
کیا وہ بھی کسی کچھوے کے خول کا بنا تھا
یا تو نے اُسے مٹی سے بنایا تھا
جیسا کہ مجھے مٹی سے گوشت پوست میں تبدیل کرکے
اور اپنا لافانی لمس عطا کرکے
عناصر اربع کے حصار میں قیدی کی طرح ڈال دیا تھا
اور اس کے در پر وقت کا بے رحم تالا مزین کردیا
اور اس قیدخانے کو
ستاروں سے روشن کرنے کے بعد
تنہائی کی سنگین راتوں کو جنم دیا
اگر ہم کسی تخلیق کار کے اندر پلنے والے خیال کے لیے۔۔۔۔
جو بالآخر تخلیق کار کے وجود سے باہر
ایک فن پارے کی صورت میں ظہور کرتا ہے
اگرچہ اس کا حقیقی عکس اس کے اندر
کسی گوشے ہی میں محفوظ رہتا ہے ۔۔۔۔
لفظ جنم استعمال کرسکتے ہیں تو
تو پھر میں کہ سکتا ہوں کہ
تنہائی کو جنم دینے والی تیری ذات ہے
جس کا پرتو مجھ جیسے ہر خاک زادے کے اندر

تباہی مچاتا رہتا ہے
خاک سے اپنی نسبت ہونے کے باوصف
میں اس خوف سے کہ کہیں ڈوب نہ جاؤں
کچھوے کے سخت خول پر
اپنی ٹانگوں کی گرفت مزید سخت کردیتا ہوں
کیا یہ عناصر اربع تجھ سے
میری بے بسی کے بارے میں سرگوشیاں کرتے ہیں
ایسی بے بسی جو
ڈوب جانے کا خوف طاری کرکے
تنہائی کی اس دیوقامت علامت کے ساتھ
مجھے نئے سرے سے چمٹنے پر مجبور کردیتی ہے!

Be-Basii

Muhabbat main apnay onchay mansab say neechay utar kar
Main teri chahat ki manzil ki taraf
Aek saal-khurda kachway par
BaagaiN kasnay k ba’d
Mumkina taizraftaarii k sath mahw-e-safar ho chuka hoN

Kia tairay banaye hoe aag, mitti, hawa aor paani
Ye sab daikh kar
Tujh se sargoshi karnay ki jur’at kartay hain?
K wiladat k din say
Hamari garift main aaya hoa
Taira deewana kitna be-bas hay!
Mairii daiw-qaamat sawaari
Jab paani par apna safar shuroo karti hay
Tu mujhay khayal guzarta hay k
Kabhi is par taira bhi takht hua kara tha
Aor main kachway k sakht khol par
Apni tamaam-tar shikastagi k sath
Khud ko bar bar phisalnay say bacha kar
Us takht k baray main sochta hoN
Tu hairaan hota hoN k
Kia wo bhi kisi kachway k khol say bana tha
Kia tu nay osay mitti say banaya tha
Jaisa k mujhay mitti say gosht-post main tabdeel kar-k
Aor apna lafaani lams ata kar-k
Anaasir-e-arb’a k hisaar main qaidii ki taraH daal dia tha
Aor os k dar par waqt ka be-rahm taala muzayyan kardia
Aor os qaid khaanay ko
SitaaroN say roshan karnay k bad
Tanhaayi ki sangeen raatoN ko janam dia
Agar ham kisi takhleeq-kaar k andar palnay walay khayal k liye…
Jo bilakhir takhleeq-kaar k wajood say baahir
Aek fanpaaray ki soorat main zahoor karta hay
Agarche is ka haqeeqi aks os k andar
Kisi goshay hi main mahfooz rahta hay…
Lafz Janam istimaal karsaktay hain tu
tu phir main keh sakta hoN k
Tanhaayi ko janam denay wali tairii zaat hay
Jis ka parto mujh jesay har khaak-zaaday k andar
Tabahi machata rehta hay
Khaak say apni nisbat honay k baa-wasf
Main is khof say k kaheeN doob na jaaoN
Kachway k sakht khol par
Apni taangoN ki garift mazeed sakht kardeta hoN
Kia ye anasir-e-arb’a tujh say
Mairii be-basi k baray main sargoshiaN kartay hain
Aesii be-basi jo
Doob jaanay ka khof taari kar-k
Tanhaayi ki is daiw-qaamat alaamat k sath
Mujhe naye siray say chimatnay par majboor kardetii hay!

Advertisements

About Rafiullah Mian

I am journalist by profession. Poet and a story writer.

Posted on July 9, 2012, in Ghair Urozii Nazm and tagged , , , , , , , , , , , , , , , , , . Bookmark the permalink. 15 Comments.

  1. kachwa in this extra ordinarily beautiful poem is a Makhmal main tat ka paiwand for a layman like myself. poets have their own HIKMAT.

    Like

  2. Blood-Ink-Diary

    Rafi,

    Lajawaab, Mian. Tearful and heartfelt – buhut khuub.
    Nothing to say as the ‘hosh’ in hoshiyar’ is lost in me.

    Dil-shaad rahein har lamhe…
    Aadaab

    Like

  3. Iqbal Khursheed

    “بے بسی”
    اس کوتیا کے کوی آپ ہیں، اسے کس طرز پر پکارا جائے، اس کا فیصلہ کرنے کا ادیکار آپ رکھتے ہیں، لیکن میری نظر میں “بے بسی” بہ طور عنوان کافی نہیں، یہ (نظم) تو ایک مہان، آکاش سے اترا خیال ہے، کاش اس کے عنوان سے آفاقی رنگ جھلکتا۔ ۔ ۔

    Like

  4. Iqbal Khursheed

    “میری دیوقامت سواری
    جب پانی پر اپنا سفر شروع کرتی ہے
    تو مجھے خیال گزرتا ہے کہ
    کبھی اس پر تیرا بھی تخت ہوا کرتا تھا”

    سچ کہوں، تو پہلی بار اس پرکار کے ادبھت خیال سے پالا پڑا ہے، اچھا ہے کہ میں سچت رہوں، چوکس ۔ ۔ ۔ یہ دیکھتا ہوا کہ بھگوان اور اس کے بھگت کے درمیان_ بھگت، جو پریم رس میں بھگا سنگھاسن سے اتر آیا ہے_ کیا، کس پرکار کا، کس دشا کی اور جاتا مکالمہ ہوتا ہے۔ ۔ ۔ ۔
    “اُس تخت کے بارے میں سوچتا ہوں
    تو حیران ہوتا ہوں کہ
    کیا وہ بھی کسی کچھوے کے خول کا بنا تھا
    یا تو نے اُسے مٹی سے بنایا تھا”
    شان دار خیال ہے ۔ ۔ ۔

    Like

    • جسے آپ ادبھت خیال کہ رہے ہیں، وہ حقیقتاً ایک کوی کی وہ بے بسی ہے جس نے اسے اس طرح جکڑا ہے کہ وہ دو بائ دو فٹ کی دیواروں میں قید ہے اور وہ اس بند دیواروں سے سر ٹکرارہا ہے۔ جو اس خوف کا بھی شکار ہے کہ اگر اچانک کسی دیوار میں در نکل آیا تو کیا ہوگا؟ باہر کی دنیا کیسی ہوگی؟ اس کی ہول ناکی کی سطح کیا ہوگی؟ کیا وہ بند دیواروں سے ایک ارب گُنا زیادہ دہشت ناک تو نہیں ہوگی؟ اور یقیناً آپ کی طرح میں بھی سچت ہوں کہ ‘وہ’ جسے آپ بھگوان کہ رہے ہیں، اپنی باری پر کیا کہتا ہے، کچھ کہتا بھی ہے یا بے نیازی سے یا ایسی اندرونی مسرت سے جو چہرے سے ظاہر نہ ہوتی ہو، مجھے محض تکتا ہے اور خاموشی کو میرے حق میں بہتر جانتا ہے۔

      Like

  5. Iqbal Khursheed

    متاثر کن!
    مجھے کہنے دیں، یہ خیال اور تجربات کے امتزاج سے جنم لینے والی ایک قابل توجہ نظم ہے، جسے، کم از کم میری نظر میں، نثری نظم کی صنف میں رکھا جانا چاہیے۔ خیال کو نثر سے سہولت میں نظم کیا گیا ہے، نثر کا حسن قائم رہا، اور شاعری لطف بھی ۔ ۔ ۔ مبارک باد کا حق رکھتے ہیں آپ، بے شک

    Like

  6. a very dramatic piece indeed! excellent…..! I am now a big fan of your poetry!

    Like

    • Rebail, I am thankful to your visit on my blog and for expressing your view. but, isn’t it would be a great thing if you telling something about you at least your full and real name. Thanks again.

      Like

  7. میں اس خوف سے کہ کہیں ڈوب نہ جاؤں
    کچھوے کے سخت خول پر
    اپنی ٹانگوں کی گرفت مزید سخت کردیتا ہوں

    zabardasttt Ustad G

    Like

  8. pur Dard, pur Asar , gehray Dukh ki ghammaz, Nasari Nazam
    Jisay prhtay huy Qaari khud gum sum sa hujaay …….. waah
    dherOn Daad-0-Sataaish hazir hay .. Salamat Rahiyye Aamin

    Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: