Monthly Archives: October 2012

!کی سال گرہ پر…….


روشن سکے

!کی سال گرہ پر…….

جس موڑ پر
سادگی، سندرتا سے ہم آغوش ہوتی ہے
عین اُسی جگہ میں نے اس جوہر کو پایا
جسے لوگ عموماً محبت کا نام دیتے ہیں
لیکن میں اسے فطرت سے تعبیر کرکے
امکانات کی ایک نئی دنیا بساتا ہوں
اوراسے کسی سانچے میں قید کرنے کی
جسارت نہیں کرسکتا
کیوں کہ
مجھ پر یہ حقیقت برسوں کی ریاضت سے کھل چکی ہے
کہ اپنے اندر سورجوں کی طاقت رکھنے والے ذرّے
کبھی ذرّے سمجھ کر قید نہیں کیے جاسکتے
بظاہر ذرّے نظر آنے والے ان جوہروں کے ساتھ
جب قید کرنے کے لیے چھیڑ چھاڑ کی جاتی ہے
تو یہ برافروختہ ہوکر بے صدا پھٹ پڑتے ہیں
اور انسان پر اپنی حقارت کھل جاتی ہے

جس مقام پر میں
جوہرشناسی کے مسرت ترین تجربے سے گزرا
اس مقام پر ایک ایسا شناختی روشن ہالہ بن چکا ہے
جسے دیکھنے سے ربِّ محبت کی دی ہوئی آنکھ
قاصر معلوم ہوتی ہے
کیوں کہ انسانی وجود میں
دیکھنے کے وصف کے لیے صرف آنکھ ہی نہیں رکھی گئی
بلکہ ماتھے پر روشنی کا سکہّ
اسے وقت کے سرد و گرم سے لے کر
درون ِ ذات کی تاریکیوں تک کی خبر دیتا رہتا ہے
سو، وہ روشن ہالہ
کسی کھوٹے سکے جیسی آنکھ سے نہیں دیکھا جاسکتا
بلکہ اس کے لیے کائناتی معیشت میں کارآمد
روشنی کے سکوں کی ضرورت پڑتی ہے
اور یہ روشن سکے صرف انہی کو ملتے ہیں
جو اپنی نگاہوں کو پاک رکھنے کے فن میں طاق ہوجاتے ہیں

جوہر ِ حقیقی کی حقیقت یہی ہے
کہ وہ اشیا کو اپنی جانب کھینچتا ہے
اس لیے فطرت مجھ پر یہ خیال اسی طرح القا کرتی ہے
کہ اے، ایک دوسرے سے محبت کرنے والے انسانو
محبت تمھارے لیے ایک انوکھا تجربہ ضرور ہوسکتا ہے
لیکن انجام ِ کار
جب تم خود کو ایک حقیر ذرّے کی طرح دیکھتے ہو
تو محبت کے مقام سے کٹ کر حیرت کے مقام پر پہنچتے ہو
اور اس طرح اس روشن ہالے کو دیکھنے سے محروم ہوجاتے ہو
جسے دیکھنے کے لیے بہرحال
!کائناتی معیشت کے سکوں کی روشنی درکار ہوتی ہے

Roshan Sikkay!

Jis moR par
Saadgi, sundartaa say ham-aaghosh hoti hay
Aen usi jaga main nay os Johar ko paayaa
Jisay log umooman Muhabbat ka naam detay hain
Lekin main osay Fitrat say tabeer kar-k

Imakanaat ki aek nayi dunya basata hoN
Aor Usay kisi saanchay main qaid karnay ki jisaarat nahi karsakta
KioN-k
Mujh par ye haqeeqat, barsoN ki riyazat say khul chuki hay
K apnay andar SoorajoN ki taaqat rakhnay walay zarray
Kabhi kabhi zarray samajh kar qaid nahi kiye jasaktay
bazahir zarray nazar aanay walay in joharoN k saath
Jab qaid karnay k liye chaiR chaaR ki jaati hay
Tu ye bar-afrokhta hokar bay-sada phat paRtey hain
Aor insaan par apni haqarat khul jaati hay

Jis maqaam par main

johar-shanasi k masarrat-tareen tajarbay say guzra
Us maqaam par aek aesa shanakhati roshan hala ban chuka hay
Jisay dekhnay se Rabb-e-muhabbat ki di hoi aankh
Qaasir maloom hoti hay!
Kion-k insani wajood main
Dekhnay k wasf k liye sirf aankh hi nahi rakhi gayi
Bal-k maathay par roshni ka sikka
usay waqt k sard-o-garm say lekar
Daroon-e-zaat ki tareekioN tak ki khabar deta rehta hay
So, wo roshan hala
Kisi khotay sikkay jesi aankh say nahi dekha jasakta
Bal-k os k liye kayinaati ma’eeshat main kaaramad
Roshni k sikkoN ki zaroorat parti hay
Aor ye roshan sikkay sirf unhi ko miltay hain
Jo apnii nigaahoN ko pak rakhnay k fun main taaq hojatay hein

Johar-e-haqeeqi ki haqeeqat yahi hay
K wo ahsyaa ko apni jaanib khenchta hay
Is liye fitrat mujh par ye khayal isi taraH alqa karti hay
K, A, aek doosray say muhabbat karnay walay insaano
Muhabbat tumharay liye aek anokha tajarba zaroor hosakta hay
Lekin anjaam-e-kaar
Jab tum khud ko aek haqeer zarray ki taraH dekhtay ho
Tu muhabbat k maqaam say kat kar herat k maqaam par pohnchtay ho
Aor is taraH os roshan halay ko dekhnay say mahroom hojatay ho
Jisay dekhnay k liye baharhaal
Kayinaati ma’eeshat k sikkoN ki roshni darkaar hoti hay!

تشنہ ہونٹوں سے پیاس پی رہا ہوں


تشنہ ہونٹوں سے پیاس پی رہا ہوں
زندگی خود میں ایسی جی رہا ہوں

بیج بونے کو آئے گی خلقت
میں تو بس شق زمین سی رہا ہوں

Tishna hontoN say piyas pee raha hoN

Zindagi khud main, aesii jee raha hoN

Beej bo-nay ko aayegi khalqat

Main tu bus Shaq zameen see raha hoN

 

 

 

%d bloggers like this: