Monthly Archives: December 2012

2012 in review


The WordPress.com stats helper monkeys prepared a 2012 annual report for this blog.

Here’s an excerpt:

600 people reached the top of Mt. Everest in 2012. This blog got about 3,100 views in 2012. If every person who reached the top of Mt. Everest viewed this blog, it would have taken 5 years to get that many views.

Click here to see the complete report.

معزز شاعر کی کاینات


معزز شاعر کی کاینات

تمھارے دل کی سنگ لاخ وادی میں
دشوار گزار اور پُرپیچ راستوں کے بیچ
کہیں کسی مقام پر
ایک شکستہ حال جھونپڑی گرم ہوا کے تھپیڑوں سے
اپنی زنگ آلود میخوں کے بل پر
ویسے ہی پھڑپھڑارہی ہے
جیسے دیئے کی جاں بہ لب لو
اندھیروں کو شکست دینے کے بعد بجھنے لگتی ہے
جن لہروں اور ان سے جنم لینے والی آوازوں کو
سنگ دل شاعر پھڑپھڑاہٹ سے تعبیر کر رہا ہے
وہ سنگ لاخ وادی کا دکھ ہے
اور شکستہ حال جھونپڑی ایک معزز شاعر کی کاینات ہے

فطرت کے حاشیہ نویسوں نے
چند بوسیدہ خواہشات کی کٹی پھٹی چادریں اوڑھ کر
خود کو فطرت کے رنگوں میں رنگنے سے
اپنے تئیں کیموفلاژ کرلیا ہے
کیا وہ کٹی پھٹی چادروں سے
پتھروں کو روتے بلکتے نہیں دیکھ سکتے
فطرت نے ان کو بھی پگھل جانے کی کمزوری سے آشنا کیا ہے
لیکن وہ شاعری نہیں کرتے

دنیا کے تمام شاعر
کرہ ارض پر پتھروں کے معبدوں میں محبوس ہیں
لیکن وہ ان سے نظریں چرا کر
اطراف میں کِھل اٹھنے والے رنگین شگوفوں کی
تحریری مصوری میں مگن ہیں
شاعر سے بہتر کون جان سکتا ہے
کہ ارضی کوکھ سے انسان کا جنم مشقت میں ہوا ہے
اور اسے زندگی اس طرح دی گئی ہے
جیسے کوئی شکستہ حال جھونپڑی میں داخل ہو

بوسیدہ خواہشات کی کٹی پھٹی چادریں اوڑھنے والے
خود کو معزز سمجھنے پر مُصر ہیں
اے، دل میں سنگ لاخ وادی تعمیرکرنے والے محبوب
کیا تم انہیں یہ بتاسکتے ہو
!کہ پتھروں کا حسن لازوال ہوتا ہے

Muazziz Shaayir Ki Kaayinat

Tumharay dil ki sang-laakh waadi main
Dushwaar-guzaar aor pur-paich raastoN k beech
KaheeN kisi maqaam par
Aek shikasta-haal jhoNpRi garm hawa k thapaiRoN say
Apni zang-aalood maikhoN k bal par
Wesay hi phaR-phaRa rahi hay
Jesay diye ki jaaN-ba-lab Lo
AndheroN ko shikast denay k bad bujhnay lagti hay
Jin lehroN aor un say janam lenay wali aawazoN ko
Sang-dil shayir phaR-phaRahat say t’abeer kar raha hay
Wo sang-laakh waadi ka dukh hay
Aor shikasta-haal jhonpRi aek muazziz shaayir ki kaayinaat hay

Fitrat k haashiya-naweesoN nay
Chand boseeda Khwahishaat ki kati phati chadaraiN aoRh kar
Khud k fitrat k rangoN main rangnay say
Apnay tayeN camouflage karliya hay
Kia wo kati-phati chadaroN say
PatharoN ko rotay bilaktay nahi daikh saktay
Fitrat nay in ko bhi phigal jaanay ki kamzori say aashna kia hay
Lekin wo shayiri nahi kartay

Dunya k tamam shaayir
Kurra-e-arz par pattharoN k ma’badoN main mahboos haiN
Lekin wo in say nazraiN churaa kar
Atraaf main Khil uthnay walay rangeen shagufooN ki
tahreeri musawwarii main magan hain
Shayir say behtar kon jaan sakta hay
K arzi kokh say insaan ka janam mushaqqat main hua hay
Aor osay zindagi is taraH di gayi hay
Jesay koi shikasta-haal jhonpRi main daakhil ho

Boseeda khwahishaat ki kati phati chadaraiN oRhnay waalay
Khud ko muazziz samajhnay par musir haiN
A, dil main sang-laakh waadi tameer karnay walay mahboob
Kia tum inhain ye bata saktay ho
K pattharoN ka husn laa-zawaal hota hay!

%d bloggers like this: