Monthly Archives: January 2013

قلب ماہیت


An Urdu translation of the English poem “Metamorphosis of the Heart” written by my friend Shaheen Sultan ‘Mashaal’

قلب ماہیت

میری سوچ کے تمام زاویے
ہرلمحہ منعکس ہوتی روشنیوں میں
سرگرداں ہیں
یہ جو طول و عرض
میرے اور تیرے درمیان
کسی نامعلوم نکتے پر جانے کب سے مرکوز ہیں
حقیقت یہیں کہیں آشکار ہے
لیکن چشم بینا پر

لہو کی روشنائی منقلب ہوکر
ہمارے خوابوں کے حاشیے اور لکیریں
تشکیل دینے کے عمل سے گزرنے لگی ہے
جو کل اور آج کے مابین
دھندلی سرحدوں کی طرح کھینچی گئی ہیں
آج، جسے ہم روشن تر بنانا چاہتے ہیں
ہم جانتے ہیں کہ انہی دھندلی سرحدوں نے ہمیں یکجا کیا ہے
لیکن ہم اس کے کناروں کو نمایاں کردینا چاہتے ہیں

میری سانسوں، ریشوں اور دل کے ٹکڑوں پر
لگنے والے زخموں سے درد بہ رہا تھا
تم نے میرے دل سے ایک ایک کرکے
نرمی سے سارے کانٹے چن لیے
اور اس پرمرہم رکھ کر ایک پنکھڑی میں لپیٹ لیا
اور مجھے ایک ایسے وقفے سے آشنا کردیا
جو موسیقی کے دو سُروں کے مابین
کایناتی وقفے جیسا تھا
مجھے لگا
اُرفِی یَس بربط لیے نمودار ہوا ہے
اوریُوریڈِ سی کی زندگی کے لیے حُجّت کرنے لگا ہے

آدھی رات کے سورج تلے
میری ہتھیلی مراقبے کی حالت میں پھیلی ہے
میری حُجّت
سُرمے کی سیاہ لکیروں کے لیے ہے
جو میری آنکھوں کو اس قابل بناسکیں
کہ میں نئی مہربان روشنی کا استقبال کرسکوں
تاکہ دل کی قلب ماہیت ہوسکے

Qalb-e-maahiyat

Meri soch k tamaam zaaviye
Har lamha mun’akis hoti roshnioN main
SargardaaN hain
Ye jo tool-o-arz
Meray aor tairay darmiaan
Kisi naamaloom nuktay par jaanay kab say markuz hain
Haqeeqat yaheeN kaheeN aashkaar hay
Lekin chashm-e-beena par

Luhoo ki roshnaayi munqalib hokar
Hamaaray khwaboN k haashiye aor lakeerain
Tashkeel denay k amal say guzarnay lagi hay
Jo kal aor aaj k maabain
Dhundlii sarhadoN ki tarah khainchii gayi hain
Aaj, jisay hum roshan-tar banana chahtay hain
Hum jaantay hain k inhi dhundlii sarhadoN nay hamain yakja kia hay
Lekin hum is k kinaroN ko numayaN kardena chahtay hain

Meri sansoN, reshoN aor dil k tukRoN par
Lagnay walay zakhmoN say dard beh raha tha
Tum nay meray dil say aik aik kar-k
Narmi say saaray kaantay chun liye
Aor os par marham rakh kar aik pankhRi main lapait lia
Aor mujhay aik aesay waqfay say aashna kardia
Jo moseeqii k do suroN k maabain
Kayinati waqfsay jesa tha
Mujhay laga
Orpheus barbat liye namudaar hua hay
Aor Eurydice ki zindagi k liye hujjat karnay laga hay

Aadhi raat k suraj talay
Mairi hathailii maraqibay ki haalat main phailii hay
Meri hujjat
Surmay ki siyaah lakeeroN k liye hay
Jo meri aankhon ko is qaabil banasakain
k main nayi mehrbaan roshni ka istiqbal karsakooN
Taa-k dil ki qalb-e-maahiyat hosakay!

تیرے پہلو میں شام کرتا ہوں


غزل

تھک کہ جس دم قیام کرتا ہوں
تیرے پہلو میں شام کرتا ہوں

جس نے مجھ کو زمین سونپی ہے
زندگی اس کے نام کرتا ہوں

میرے آبا رہے سدا پُرامن
اس لیے میں بھی کام کرتا ہوں

دفن کرتا ہوں، سانس لیتا ہوں
حسرتیں یوں تمام کرتا ہوں

میرے منھ میں زباں نہیں مرے دوست
میں قلم سے کلام کرتا ہوں

Ghazal

Thak k jis dam qayaam karta hoN
Tiray pehloo main shaam karta hoN

Jis nay mujh ko zameen soNpi hay
zindagi os k naam karta hoN

Mairay aabaa rahay sada purAmn
Isliye main bhi kaam karta hoN

Dafn karta hon, saans leta hoN
HasrataiN yuN tamaam karta hoN

Mairay moo main zubaaN nahi miray dost
Main qalam say kalaam karta hoN

Ghazal By: Rafiullah Mian

Ghazal By: Rafiullah Mian

%d bloggers like this: