Monthly Archives: May 2013

ورق سفید ہے


ورق سفید ہے

میں اک صدی سے پریشاں ہوں
سوچتا ہوں
لہو سے لکھتے
مرا قلم اگل رہا ہے سفیدی
یہ کیا تماشا ہے
کہا تھا تم نے کہ نظمیں مری
لہو رنگ ہیں
صریرخامہء بے رنگ تو سنی نہ کبھی
مگر یہ کیا کہ بصارت پہ اب یقیں ہی نہیں
سماعتیں بھی ہیں شرمندہ
زمیں دوز مکانوں میں
ڈری سہمی ہوئیں
وَرق پہ آج بھی نظمیں وہی تڑپتی ہیں
ورق سفید ہے
نظمیں نظر نہیں آتیں
صریر خامہ کو سننے کی تاب کیا رکھتے
سماعتوں پہ تو اترا نہیں مرے ہمدم
طلسم شب کا سکوت
مگر یہ سرخ لہو نے لباس کیوں بدلا
کفن پہن کے مرے لفظ کیا کہیں گے ابھی
یہ مر کے امن کی نظمیں کسے سنائیں گے
صدا عدم کی سنے گا
تو کون ہے ایسا
کہ ہم تو زیست کے نغمے بھی سن نہیں سکتے
میں اک صدی سے پریشاں ہوں
سوچتا ہوں
لہو سے لکھتے
مرے قلم میں سفیدی کہاں سے آئی ہے
میں سوچتا ہوں
مرے خوں کا خون کس نے کیا

Waraq Sufaid hay

Main ik sadi say pareshaaN hoN
Sochta hoN
Luhoo say likhtay
Mera qalam ugal raha hay sufaidii
Ye kia tamasha hay
Kaha tha tum nay k nazmain merii
Luhoo-rang hain
Saree-e-khaama-e-bay-rang tu sunii na kabhi
Magar ye kia k basaarat pe ab yaqeeN hi nahi
Sama’ataiN bhi hain sharminda
ZameeN-doz makanoN main
Dari sehmi hoieN
Waraq pe aaj bhi nazmain wahi taRapti hain
Waraq sufaid hay
Nazmain nazar nahi aateeN
Saree-e-khaama ko sunnay ki taab kia rakhtay
Sama’atoN pe tu utraa nahi meray hamdam
Tilism-e-shab ka sukoot
Magar ye surkh luhoo nay libaas kioN badla
Kafan pehehn k meray lafz kia kahaingay abhi
Ye mar k amn ki nazmain kisay sunayingay
Sada adam ki sunega
Tu kon say aesaa
K hum tu zeest k naghmay bhi sun nahi saktay
Main ik sadi say pareshaN hoN
Sochta hoN
Luhoo say likhtay
Meray qalam main sufaidii kahaN say aayi hay
Main sochta hoN
Meray khooN ka khoon kis nay kia

%d bloggers like this: