اے انسان


اے انسان

(خود سے ہمکلامی کی حالت میں)

نشانیوں سے بھرا ہوا ہے
یہ سارا سنسار
ایک دن جو ہوا تھا محبوس پتھروں میں
میں لطفِ احساس ہمکلامی سے جُھک رہا تھا
وجود تیرا نشانیوں میں بڑی نشانی
تو سوچتا ہے
ہے تو بھی صانع
مگر زمیں پر تری ہی مانند
پھر رہے ہیں بہت سے خالق
تری یہ کثرت بتا رہی ہے
کہ ایک مستور اور برتر ہے ذہن اعلا
تجھے جو معدوم ہونے دیتا نہیں زمیں پر
زمیں ہو یا آسماں کے طبقے
بنی ہے جوڑی ہر ایک شے کی
تجھے نہ رہنے دیا ہے تنہا

***

تو چلتے پھرتے وجود کو
اس زمین ِ بے روح پر گماں کر
کہ جس کے اجزا ہیں غیر نامی
اور اس کی زرخیز سطح ِ اولا پہ اک بچھونا
نمو ہے یاں محو استراحت
حیات کی تجھ میں دور تک ہے
جڑوں کا اک سلسلہ رواں
اور
دروں سے چشموں کا پھوٹنا
جیسے زندگی مسکراتی جائے
مُحافظت پر ہے تیرے باطن کی، تیرا ظاہر
جہاں میں روئیدگی کی خاطر
یہ دوسرے نامیوں سے مل کر
مگن ہے صدیوں سے چارہ سازی میں
تیرے اندر کھجور کے باغ سرسراتے ہیں
باغ انگور لہلہاتے ہیں
اور جاری یہ سلسلہ ہے

A Insaan!

(Khud say ham-kalami ki haalat main)

NishanioN say bhara hua hay

Ye sara sansaar
Ak din jo hua tha mahboos pattharoN main
Main lutf-e-ahsas-e-hamkalami say jhuk raha tha
Wujood taira nishanioN main baRi nishani
Tu sochta hay
Hay tu bhi saan’i
Magar zameeN par teri hi maanind
Phir rahay hain bohot say khaliq
Teri ye kasrat bata rahi hay
K ak mastoor aor bartar hay zehn-e-ala
Tujhay jo madoom honay deta nahi hay zameeN par
ZameeN ho ya aasmaN k tabqay
Bani hay joRi har ak shay ki
Tujhay na rehnay dia hay tanha

***

Tu chaltay phirtay wujood ko
Is zameen-e-bay rooh par gumaaN kar
K jis k ajzaa hain ghair naami
Aor is ki zarkhaiz sath-e-oola pe ik bichona
Namoo hay yaaN mahv-e-istiraahat
Hayaat ki tujh main door tak hay
JaRoN ka ik silsila rawaaN
Aor
DarooN say chashmoN ka phootna
Jesay zindagi muhkurati jaaye
Muhafazat par hay teray baatin ki, taira zaahir
JahaN main royedigi ki khaatir
Ye dosray naamioN say mil kar
Magan hay sadioN say chara saazi main
Tairay andar khajoor k baagh sarsaratay hain
Baagh-e-angoor lahlahatay hain
Aor jaari ye silsila hay!

Advertisements

About Rafiullah Mian

I am journalist by profession. Poet and a story writer.

Posted on August 30, 2013, in Nazm and tagged , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , . Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: