روح کا سرور


روح کا سرور

“Suroor of the Soul”

Poetry book by Soumya Vilekar and Shaheen Sultan Dhanji Title by: S.S. Dhanji

Poetry book by Soumya Vilekar and Shaheen Sultan Dhanji
Title painting by: S.S. Dhanji

زمین پر پیدائش سے لے کر تقدیر کے آخری صفحے تک روح کا سفر، سومیا نے جس خوبی اور بصیرت کے ساتھ بیان کیا ہے، وہ بتاتا ہے کہ انسانی وجود اپنا اعتبار تبھی پاتا ہے جب وہ روز و شب کے جاں گسل حالات سے گزرتے ہوئے اپنی روح کو ترقی یافتہ کرے

روح کا سرور‘ انگریزی میں لکھی ایک ایسی کتاب ہے جس کا سفر اگرچہ مادی دنیا میں ہے لیکن یہ روحانی دنیا کی تلاش میں سرگرداں ہے. جہاں انسان پر اس کے نفس کا تسلط نہیں رہتا، جہاں وہ اندھیروں سے نکل کر روشنیوں میں چلا آتا ہے
سومیا کی نظموں کو سمجھنے کے لیے ضروری ہے کہ قاری اپنے اندر روحانی اشاروں کو طاقت ور بنائے. یہ آپ کو ایک ایسے روحانی سنگم تک لے کر جاتی ہیں جہاں ‘سرور’ آپ کا منتظر ہے

صرف یہی نہیں کہ سومیا روحانی نظمیں لکھتی ہے اور وجدانی بصیرت کو کام میں لاتی ہے، بل کہ اس کی شاعری میں ‘ماورائی جمالیات’ ایک ایسا ماحول پیدا کرتی ہے جو پڑھنے والے کو اپنی گرفت میں لے لیتا ہے. اس کا انداز بیان تتلی کے نازک پروں جیسا کومل ہے. وہ بہت خوبصورت انداز میں کہتی ہے کہ زندگی اندھیروں میں بھٹکتی ہے، اگر دل کو روشن کیا جائے تو منزل کی طرف راستہ صاف اور روشن ہوجاتا ہے. اس کی نظموں کی سندرتا دیکھیے، وہ کہتی ہے کہ ہرن کا بچہ ابدی خوشبو کی تلاش میں سرگرداں ہے اور اس حقیقت سے بے خبر ہے کہ مشک تو خود اس کی چھاتی کے درمیان ہے. وہ اپنی نظموں کے ذریعے یہ پیغام دے رہی ہے کہ سکون کی تلاش میں انسان در در کی ٹھوکریں کھاتا ہے لیکن سکون خود اس کے اندر چھپا ہوتا ہے، وہ اگر اپنے وجود پر غور کرے تو سکون پاجائے گا

مختصر یہ کہ سومیا کی شاعری روشنی، بصیرت، من کی خوشی اور سرشاری سے عبارت ہے. وہ سماجی حالات اور خارجی ماحول کے اندھیروں میں روحانیت کے دیے روشن کررہی ہے

♣♣♣♦♦♣♣♣

شاہین دھنجی کی نظمیں اس کتاب میں بلاشبہ شاندار اور منفرد پھولوں کی مانند ہیں جن کی خوش بو ہر لفظ میں محسوس کی جاسکتی ہے

شاہین سلطان دھنجی کے ساتھ میری واقفیت کو کم و بیش ایک سال ہورہا ہے، اس دوران اس نے جتنے نقوش میرے ذہن پر چھوڑے ہیں وہ مختلف النوع ہیں. ایک طرف اس کی انکساری ہے تو دوسری طرف سادگی کے ساتھ پرکاری بھی اور وقار مستزاد. وہ ایک ایسے عالمی سماج کو مشکّل ہوتے دیکھنا چاہتی ہے جہاں امن ہو، سکون ہو. وہ ظلم کے خلاف بلاجھجھک آواز بلند کرنے والی باہمت آرٹسٹ ہے. اس کے ایک ہاتھ میں قلم ہوتا ہے تو دوسرے میں کینوس پر اسٹروک کرنے والا برش اور گھٹنوں پر اس کا پسندیدہ گٹار

شاہین کی شاعری اس کے اندر کی دنیا میں رونما ہونے والے حادثات کے وہ جمالیاتی نقوش ہیں جو حادثے کو بھی زندگی کا ناگزیر حصہ بناکر اس سے لطف اندوز ہونے کا گرُ سکھاتے ہیں. کینوس کی طرح اس کی شاعری بھی اس کی تنہائی کی بہترین ساتھی ہے

روح کا سرور‘ میں شاہین کی نمایندہ نظمیں شامل ہیں. ان نظموں سے پتا چلتا ہے کہ وہ ایک ایسی روح کی تلاش میں ہے جو آزاد منش ہے، جو فنا اور بقا کے فلسفوں سے آزاد ہے. فنا اس کے لیے بقا لے کر آتی ہے، اور بقا میں فنا کے رنگ جھلکتے ہیں
شاہین کی انفرادیت یہ ہے کہ وہ رات کے اندھیروں کو روشنی کے ذریعے دور نہیں کرتی بلکہ انہیں اپنے مخملی شال میں لپیٹ کر اپنی تنہائی کو روشن کرتی ہے جو اس کے دل کو مضبوط بناتی ہے اور محبوب کے لیے ہر قسم کی قربانی کے لیے تیار کرتی ہے. اس کا محبوب ایک ایسی ہستی ہے جو اس کی روح کے اندر تیرتی ہے اور ہر مجبوری سے ماورا ہے. وہ ایک برتر ہستی ہے

Here I am offering my humble words in Roman Urdu as directed by Shaheen!

 “Suroor of the Soul!”

 Zameen par Janam say lekar “Bhaag” k aakhri pannay tak, Rooh ka Safar, Soumya Vilekar  nay Jis khoobi aor Roohani Soojh-boojh k saath kia hay, wo batata hay k maanas wajood apna Aetibaar tabhi paata hay jab wo din-raat k sakht haalaat say guzarte howe apni Rooh ko Taraqqi-yafta karay !

 “Suroor of the Soul” ak aesi kitaab hay jis ka safar physical world main hay – lekin —  ye Roohan dunya (spiritual world) ki Talaash main chakkar kaat raha hay. Jahan Insaan par os ka Nafs (self/ego) Hukoomat nahi karta, jahaN wo andheroN say nikal kar roshnioN main aajata hay!

 Soumya ki nazmoN ko samajhnay k liye zaroori hay k, reader apnay andar Roohani IshaaroN ko shaktimaan karay. Ye nazmain ap ko aek aesay Roohani Sangam tak lekar jaati hain jahaN “suroor” aap ka intizaar kar raha hay!

 Sirf yahi nahi k, Soumya Roohani nazmain likhti hay aor bheetar soojh boojh ko kaam main laati hay – bal-k, in ki shayiri main Maawraayi Jamaaliyaat (Transcendental Aesthetics) aek aesa mahool janam deti hay jo reader ko apni mazboot pakaD main le leta hay. Un ka andaz-e-bayan (Diction) Titli (butterfly) k Pankh jesa Komal hay. Wo bohot Sundar andaz main kehti hay, Znidagi andheroN main bhtakti hay, Agar Dil ko Roshan kia jaaye tu Manzil ki taraf Raasta ujaagar hojata hay. Soumya ki nazmon ki Sundarta dekhiiye;  wo kehti hay k, Hiran ka bacha Laa-zawaal khushboo ki talash main rehta hay, aor is Haqeeqat say bay-khabar rehta hay k Musk tu khud oski chaati k darmiyan hota hay. Wo apni nazmo k zarye ye sandesa de rahi hay, k sukoon ki talash main insaan dar dar ki thokar khaata hay lekin ye sukoon khud os k andar chupa hota hay. Wo agar apnay wajood par dhiyaan day tu sukoon ka raaz paa lega.

 Mukhtasar ye k, Soumya ki shayirii Roshni – soojh boojh – Man ki khushi – aor Sarshaari – ki tasweer hay. Wo samaaji haalaat aor ird-gird maahool k andheroN main Roohaniyat k Diye roshan kar rahi hay !

 **********

 “Shaheen Sultan Dhanji ki nazmain is kitab main bilashuba shandar aor munfarid pholoN jesii hain jin ki khusboo har lafz main mahsoos ki jaskati hay!” (Soumya)

 Shaheen k saath meri jaan-pehchaan ko kam-o-baish ak saal horaha hay. Is doran os nay jitney naqoosh meray zehn par choray hain, wo multiple rangoN k hain. Aek taraf oski “Inkisaari” hay. Doosri taraf “Saadgii aor Waqaar”! Wo aek aesay aalmi samaaj ko haqeeqat main dekhna chahti hay jahan Amn ho, Sukoon ho. Wo Zulm k khilaaf bila-jhajak awaaz buland karnay walai “Baahimmat” Artist hay. Os k aek haath main “Qalam” hota hay tu doosray main “Canvas” par stroke karnay wala “Brush”, aor os ka pasandeeda “Guitar” ghutno (knees) par!

 Shaheen ki shayirii os k “andar ki dunya” main ro-numaa honay walay Hadisaat k “Jamaaliyaati Naqoosh” (Aesthetic Impressions) hain – jo haadsay ko bhi zindagi ka zaroori hissa banakar os say Suroor haasil karnay ka “Hunar” sikhaatay hain. Canvas ki tarah oski shayirii bhi oski Tanhaayi ki saathi hay!

 “Suroor of the Soul” main Shaheen ki numayinda nazmain shaamil hain. In nazmon say pata chalta hay k wo aek aesi Rooh ki talash main hay jo “Azaad-Munish”  hay – jo “Fana” aor “Baqa” ki philosophy say azaad hay. “Fana” os k liye “Baqa” lekar aati hay – aor “Baqa” main “Fana” k Rang jhiil-mill kartay hain.

 Shaheen ki infiradiyat ye hay k wo Raat k andheroN ko Roshni say door nahi karti – bal-k inhain apnay “Makhmali Shaal” (Velvet Shawl) main lapait kar apni tanhaayii ko roshan karti hay. Jo os k Dil ko mazboot banati hay aor mahboob k liye har qism ki Qurbaani k liye tayyar karti hay. Os ka mehboob aek aesi Hasti hay jo oski Rooh k andar Tairti hay aor har majboori say Maawara (Transcend) hay… wo aek Bar-tar hasti hay!

 Is Book aor is k dono writers k liye dheroN duayeN aor achi tamannayeN hain.

Advertisements

About Rafiullah Mian

I am journalist by profession. Poet and a story writer.

Posted on September 17, 2013, in Reviews and tagged , , , , , , , , , , , , , , , , , , . Bookmark the permalink. 6 Comments.

  1. Dearest Rafi,

    As you are aware, I have been away from wordpress, thus, I have not come by to say ‘thank you’ thus-far. Needless to say, I and Soumya are touched by your magnetic review of our book.

    Can’t wait to read your upcoming book, soon!
    Aadaab mian. lots of love.

    Like

  2. Many many thanks for the beautiful words and the intense depth with which you have expressed your thoughts about the book. I dnt have words to express my gratitude nor any words to express myself here after reading the whole review.

    Like

    • Welcome Soumya, although I tried to write this review in most understandable words (in Hindi or Sanskrit) for you (specially in yours portion) but, I realize the difficulty of language. I am very happy that you relish my thoughts about your precious book.
      Stay blessed always!

      Like

  3. آپنه جو کوچه تهرار فرمایا وه باایسه مسرت های اور قبیله تعارف بهی اور بهت هی پورسکون . مره دوا های کی جو کوچه بهی آپ نه تهرار فرمایا وه تمام لگن تک پهونچ سکه. اردو قوایاد که لیهااز سه من نه جو بهه آپ کو لکها اسمان کوچه غلطه حین لکن transliteration من قرب قرب یه اک ام بات های. مرا آداب قبول فرماین .

    Like

    • Bohot shukria Janaab,
      Ap ka Urdu main tabsira parh kar herat bhi hoi aor khushi bhi. ap ki baat poori samajh main aagayi hay is liye G khush hoa.
      wese google Urdu translation main baRi gaR baR hoti hay.
      Ap k aanay ka shukria
      🙂

      Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: