Monthly Archives: October 2013

ان گنت حوالوں کی اداسی


اَن گنت حوالوں کی اداسی

سَت رنگی آنکھوں میں پِنہاں شوخی
آفاقی حوالوں کے ساتھ
زندگی کے رَمز کا رَس ٹپکاتی ہے
!آفاقیت کیا ہے
تیری آنکھوں کی شکتی
جو دو کناروں کو جوڑے رکھتی ہے
مونا لیزا کیا جانے
جدید دور کا انسان
آنکھوں سے بہنے والی مسکراہٹ
اُس کے چہرے کے نقوش میں تلاش کرتا ہے
اور کایناتی حوالوں سے
!اُسے سمجھنے کی کوشش میں مصروف ہے
تیری آنکھوں کی دِل کش پتلیاں
فطرت کے جتنے حوالے سمیٹ کر
اپنے گردوپیش پر سحر پھونک سکتی ہیں
وہ سب میری شاعری میں مل جائیں گے
لیکن اس حقیقت کا بطلان ممکن نہیں
کہ
میری شاعری اورتیری آنکھوں کے رنگ
کبھی مدغم نہیں ہوسکیں گے
٭٭٭

An-ginat HawaaloN ki Udasi

Sat-rangi aankhoN main pinhaaN shokhi
Aafaaqi hawaaloN k sath
Zindagi k ramz ka rass tapkaati hay
Aafaaqiyat kia hay
Teri aankhoN ki shaktii
Jo do kinaaroN ko joRay rakhti hay
Mona Lisa kia jaanay
Jadeed daor ka insaan
AankhoN say behnay wali muskuraahat
Os ke chehray k naqoosh main talash karta hay
Aor kaayinaati hawaaloN say
Osay samajhnay ki koshish main masroof hay
Tairii aankhoN ki dilkash putliaaN
Fitrat k jitnay hawaalay samait kar
Apnay gard-o-paish par sehr phoonk sakti hain
Wo sab meri shayirii main mill jaayingay
Lekin is haqeeqat ka batlaan mumkin nahi
K
Meri shayirii aor teri aankhoN k rang
Kabhi madgham nahi hosakaingay

کینوس پر مندمل خواہشیں


کینوس پر مندمل خواہشیں

 

جگر کے لہورنگ گوشوں میں تڑپن
کبھی دل کے خانوں میں مچلن
مجھے زخم تم نے نہیں
خود مری خواہشوں نے دیے تھے
وہ جذبوں کا ہیجان تھا
جس نے میرے مکاں کو اجاڑا
٭
نظیر اپنی ملتی نہیں اس جہاں میں
کہ خواہش کو زخم ِ جگر میں بدل کر
نیا خوں بننے سے روکا گیا ہے
٭
مگر خواہشوں کو
مرے جسم و جاں سے
بری طرح لپٹے ہوئے وقت نے
مندمل کردیا ہے
٭
بظاہر تو معصوم ہیں
خواہشیں شارک بن کر
تعاقب میں خوابوں کے رہتی ہیں اکثر
چلیں، کینوس پر تحفظ کی خاطر
انہیں پینٹ کردیں

Canvas par mundamil khwahishaiN

Jigar k laho-rang goshoN main taRpan
Kabhi dil k khaanoN main machlan
Mujhay zakhm tum nay nahi
Khud meri khwahishoN nay diye thay
Wo jazboN ka haijaan tha
Jis nay meray makaaN ko ujaaRa
*
Nazeer apni miltii nahi is jahaN main
K khwahish ko zakhm-e-jigar main badal kar
Naya khoon bannay say roka gaya hay
*
Magar khwahishoN ko
Meray jism-o-jaaN say
Buri tarha liptay howe waqt nay
Mundamil kardia hay
*
Bazaahir tu masoom hain
KhawahishaiN shark ban kar
Ta’aqub main khwaboN k rehti haiN aksar
ChalaiN, canvas par tahaffuz ki khaatir
Inhain paint kardain

تمھارا دکھ


تمھارا دکھ

محبت کی گلیوں میں پھرتی رہی ہوں
شناسائے رازِ دروں ہوں
کہیں پر ہوس ہے
کہیں دل لگی ہے
کہیں ایک جذبہ
جو خالی ہو روحِ وفا سے
یہاں لوگ مجبوریوں کو محبت سے تشبیہ دے کر
محافل میں دادِ سخن لوٹتے ہیں
یہ گلیاں
کہ جن سے میں واقف رہی ہوں
یہاں لوگ اک دوسرے کو
تواتر سے دھوکے میں رکھ کر
محبت کا ناٹک رچاکر
حقیقت کا بطلان کرتے رہے ہیں
٭٭٭

Tumhara Dukh

Muhabbat ki galioN main phirtii rahi hooN
Shanasaay-e-raaz-e-darooN hoN
KaheeN par hawas hay
KaheeN dil-lagi hay
KaheeN aek jazba
Jo khaali ho rooh-e-wafa say
YahaN log majboorioN ko muhabbat say tashbeeh day kar
Mahaafil main daad-e-sukhan loot’tay hain
Ye galiyaaN
K jin say main waqif rahi hooN
Yahan log ik doosray ko
Tawaatur say dhokay main rakh kar
Muhabbat ka naatak rachaa kar
Haqeeqat ka batlaan kartay rahay hain

ہمارے درمیاں


Picture it and write

ہمارے درمیاں

تم

تنگ و تاریک اور شکستہ گلی سے
روز گزر تے ہو
اور سورج تلے جلتی
اُسی پرانی بستی میں جانکلتے ہو
تمھاری زندگی
اسی انتہائی تجربے پر موقوف ہے
اور میں اس امید پر جیتا ہوں
کہ ایک دن تم
اپنے وجود کے اندر دور تک بچھی
کالی پگڈنڈی کو
کسی روشن خیال سے اُجال دوگے

Hamaray darmiyaN

Tum
Tang-o-taareek aor shikasta gali say
Roz guzartay ho
Aor sooraj talay jalti
Osi purani bastii main jaa nikaltay ho
Tumhari zindagi
Isi intihayi tajarbay par moqoof hay
Aor main is umeed par jeeta hoN
K aek din tum
Apnay wajood k andar door tak bichii
Kaali pagdandii ko
Kisi roshan Khayal say ujaal dogay!

%d bloggers like this: