Monthly Archives: November 2013

فریبِ خیال


فریبِ خیال

سر رہ گزر جو بجھا پڑا ہے
وہ خواب ہے
یہ جو شہر پر ہے تنا ہوا
یہ وجود خیمہء دود ہے
یہ عذاب ہے

ذرا سادگی ہو ملاحظہ
کہ تڑپ رہی تھیں جو انگلیاں
انہیں چشم خواب میں گھونپ کر
مری چھین لی ہیں بصارتیں

مرے تشنہ لب ترے زیرپا
مری آبرو ترا زَہرخند
تو قدم سے تابہ دَہن ستم
مرے خواب پر، نہ خیال پر
کبھی پڑسکا ترا سایہ چشمِ کرم کا
اے، مرے شہر آرزو سن لے تو
میں ترے قدم سے قدم ملاکے
جواں ہوا

مجھے راکھ اپنی کریدنے کو ملی نہیں
مجھے شک نہیں، ہے یقین یہ
مری زندگی کا جو خواب تھا
وہ اسی میں تھا

شبِ آرزو، شبِ جستجو
اسے روشنی کی کرن سمجھ کے نہ کھا فریب
یہ نشان ِ صبح نہیں نہیں
یہ تو خون ہے

Faraib-e-Khayaal

***
Sar-e-rehguzar jo bujha paRa hay
Wo khwaab hay
Ye jo shehr par hay tanaa hua
Ye wajood khaima-e-duud hay
Ye azaab hay

Zara saadgi ho mulahiza
K tarap rahi thein jo ungliaaN
Unhain chashm-e-khwab main ghonp kar
Meri cheen li hain basarataiN

Meray tishna lab teray zair-e-paa
Meri aabroo tera zahr khand
Tu qadam say taa ba dahan sitam
Meray khwab par na khayaal par
kabhi paR saka tera saaya chashm-e-karam ka
Ae, meray shehr-e-aarzo sun lay tuu
Main teray qadam say qadam mila k
JawaaN hua

Mujhe raakh apni kuraidnay ko mili nahi
Mujhey shak nahi, hay yaqeen ye
Meri zindagi ka jo khwab tha
Wo osi main tha

Shab-e-aarzoo, shab-e-justujoo
isay roshni ki kiran samajh k na khaa faraib
Ye nishaan-e-subh nahi nahi
Ye tu khoon hay!

%d bloggers like this: