Category Archives: Ghazal

زیست کا اہتمام لب سے ہے


غزل

عنبریں ہے کلام، سب سے ہے
زیست کا اہتمام لب سے ہے

نرم سورج پگھل رہا ہے عبث
سر پہ ٹھہری یہ شام جب سے ہے

اے شب و روز! تم نہیں بے زار؟
زندگی شاد کام کب سے ہے

اس کو سمجھا ہے خود کلامی تو
ہوش میں ہوں، کلام ربّ سے ہے

دن میں خورشید اب جلادے گا
لب پہ جو ابتسام شب سے ہے

وہ مرے اور پاس ہے آیا
دل مرا ہم کلام جب سے ہے

Ghazal

AmbareeN hey kalaam, sab sey hey
Zeest ka ahtamaam lab sey hey

Narm sooraj phigal raha hey abas
Sar pe thehrii ye shaam jab sey hey

Ae shab-o-roz! tum nahi be-zaar?
Zindagi shaad-kaam kab sey hey

Is ko samjha hey khud-kalami tuu
Hosh main hooN, kalam Rabb sey hey

Din main khursheed ab jalaa dega
Lab pe jo ibtisaam shab sey hey

Wo merey aor paas hey aaya
Dil mera ham-kalam jab sey hey

اپنی دنیا سے تو میں، پارہ پارہ اٹھتا ہوں


غزل

دریا دریا بہتا ہوں، قطرہ قطرہ اٹھتا ہوں
صدیاں صدیاں بیت چکیں، لمحہ لمحہ اٹھتا ہوں

آکر دیکھو کٹیا میں، دنیا کیسی سمٹی ہے
تم نے دیکھا کیسے میں، جلوہ جلوہ اٹھتا ہوں

نسلوں کا ہے بھاری بوجھ، منزل منزل جانا ہے
پیری ہے یا دہشت ہے، لرزہ لرزہ اٹھتا ہوں

مولا تیری دنیا میں، خود کو پورا دیکھوں گا
اپنی دنیا سے تو میں، پارہ پارہ اٹھتا ہوں

کہساروں پر جاکر میں غم کی راتیں کاٹوں گا
دیکھو، اب تو جھیلوں پر، ہالہ ہالہ اٹھتا ہوں

Ghazal

Darya darya behta hoN, qatra qatra uth’ta hoN

Sadiya sadiyan beet chukeeN, lamha lamha uth’ta hoN

Aakar dekho kuTyaa main, dunya kesi simti hay

Tum ne dekha kese main jalwa jalwa uth’ta hoN

NasloN ka hay bhaari bojh, manzil manzil jana hay

Peeri hay ya dahshat hay, larza larza uth’ta hoN

Mola tairii dunya main khud ko poora dekhonga

Apni dunya say tu main paara paara uth’ta hoN

KuhsaaroN par jakar main gham ki raatain katonga

Daikho, ab tu jheeloN par hala hala uth’ta hoN

زمیں کی کشکول میں دعا ہے


غزل

بلند کتنی تری عطا ہے
حقیر کتنی مری وفا ہے

میں جان قربان تجھ پہ کردوں
خیال کتنا یہ جاں فزا ہے

یہ تیری میری محبتوں کا
خمار کتنا خرد کشا ہے

حدِ نشاطِ وصال کیا ہو
ذرا سی دوری بڑی سزا ہے

جنوں ہے جھوٹ اور جنوں بغاوت
یہ میرے جاناں کا فیصلہ ہے

مری شب ماہ تاب کی خیر
تمھارا سورج تو ڈھل چکا ہے

جو کھل رہے ہیں در آسماں میں
زمیں کی کشکول میں دعا ہے

یہ فرق ہے کہ گلی وہی ہے
ضمیر اپنا بھٹک رہا ہے

مجھے محبت تلاشنے دو
مریض دل کی یہی دوا ہے

Ghazal

Buland kitni tri ata hay
Haqeer kitni mri wafa hay

Main jaan qurbaan tujh pe kardooN
Khayal kitna ye jaaN-faza hay

Ye tairi mairi muhabbatoN ka
Khumaar kitna khirad-kusha hay

Had-e-nishat-e-wisaal kia ho
Zara si doori baRi saza hay

JunooN hay jhoot aor junoo baghawat
Ye meray jaanaN ka faisla hay

Mri shab-e-maahtaab ki khair
Tumhara sooraj tu dhal chuka hay

Jo khul rahay hain dar aasmaaN main
ZameeN ki kashkol main dua hay

Ye farq hay k gali wahi hay
Zameer apna bhatak raha hay

Mujhe muhabbat talashnay do
Mareez-e-dil ki yahi dawa hay

انساں گزیدہ شہر کے خوابوں کی باس میں


غزل

انجان ریت میں مرے ہاتھوں سے پل گیا
بس ڈوبنے کو تھا کہ اچانک سنبھل گیا

اک تجربہ تھا، اس میں اگانے کنول گیا
آیا ہوا نہ پھر کبھی قسمت کا بَل گیا

نظروں نے کھایا بل وہ، کہ پھر ہٹ نہیں سکیں
خمیازہ تھا ترا، مری آنکھیں بدل گیا

برسوں مرا زمیں سے عقیدہ جڑا رہا
کج رو کی اک ادا سے جڑوں سے اچھل گیا

ہم لوگ اپنے خول میں سمٹے ہیں اس قدر
لمحوں کا سایہ دھوپ میں جلنے نکل گیا

اک شوق خود نمائی نے اکسا دیا اُسے
فن پارہ تھا مرا، مرے فن کو کچل گیا

میری ریاضتوں نے وفا کو جِلا تو دی
اُس بے وفا کے سامنے سارا عمل گیا

اے رقص جاں تجھے تو خبر ہے وجود کی
کیسا خلا تھا میرا ہنر جو نگل گیا

تپتی زمیں پہ پیاس سے آنکھیں ابل پڑیں
ظالم کو کتنا رنج تھا، ان کو مسل گیا

پہچان کی ہوس نے کیا اتنا نامراد
جبل مراد پر کوئی رکھ کر غزل گیا

انساں گزیدہ شہر کے خوابوں کی باس میں
اس طور بے کلی تھی، مرا جی مچل گیا

Ghazal

Read the rest of this entry

وجودِ شوق میں اقلیم غم اسی لیے ہے


غزل

ترے دمن میں تو  یارائے آب جو ہی نہیں
سمندروں میں سمٹنے کی آرزو ہی نہیں

وجودِ شوق میں اقلیم غم اسی لیے ہے
نہ جانے کتنے ہی عالم ہیں، ایک تو ہی نہیں

یہ رات جن سے مری، شعلہ سا بنی ہوئی ہے
یہ آنسوؤں کے بھی یاقوت ہیں، لہو ہی نہیں

تلاش کس کی ہے بے چین ہیں جو سناٹے
رگوں میں تیرتے رہتے ہیں کوبہ کو ہی نہیں

میں آج بے سروساماں پڑا ہوں در پہ ترے
کلیجہ چیر کے رکھ دے، وہ ہاؤ ہو ہی نہیں

جو مجھ کو چاہے گا، آئے گا خود ہی کٹیا میں
کسی کا ہاتھ پکڑنے کی مجھ میں خو ہی نہیں

Ghazal

Teray daman main tu yaraay-e-aab-joo hi nahi
SamundaroN main simatne ki aarzoo hi nahi

 

Wujood-e-shoq main Iqleem-e-gham isi liye hey
Na jaane kitne hi aalam hain, ak tuu hi nahi

Ye raat jin say meri, shula saa bani hoi hey
Ye aansuooN k bhi yaaqoot hain, luhoo hi nahi

Talash kis ki hay baichain hain jo sannatay

Ragon main tairte rehte hain koobakoo hi nahi

Main aaj bay-sar-o-saamaaN paRa hoN dar pe terey
Kaleeja cheer k rakh day, wo haao-hoo hi nahi

Jo mujh ko chahega, aayega khud hi Kutyaa main
Kisi ka haath pakaRne ki mujh main khuu hi nahi

لوگ اس گلی کے پھر، دیر تک تڑپتے ہیں


Aek arsay bad Ghazal k sath hazir hoa hoN!

غزل

خواب میں نکل کر تم، کیا تلاش کرتے ہو
روشنی میں آکے پھر، لمحہ لمحہ مرتے ہو

رات پر عجب سکتہ، اور تمھاری تڑپن یہ
کس قدر تحرّک کی زندگی بسرتے ہو

من میں پھیلے اندھیارے، راکھ ہوں گے کب جل کر
آگ کے سمندر میں روز تم اترتے ہو

لوگ اس گلی کے پھر، دیر تک تڑپتے ہیں
دل میں درد لے کر تم، واں سے جب گزرتے ہو

دل، کہ پالیا آخر، تم نے مدعا اپنا
قلزم محبت میں ڈوبتے ابھرتے ہو

آدمی ٹھہر جاؤ تم کسی تو حالت پر
اِس گھڑی بکھرتے ہو، اُس گھڑی سنورتے ہو

دستِ آسماں کو سوچ، گود اس زمیں کی سوچ
جب بھی تم اجڑتے ہو، جب بھی تم نکھرتے ہو

Ghazal

Khwab main nikal kar tum, kia talash kartay ho
Roshni main aa kay phir, lamha lamha martay ho

Raat par ajab sakta, aor tumhari taRpan ye
Kis qadar taharruk ki zindagi basartay ho

Man main phailay andhyaaray, raakh hongay kab jal kar
Aag k samundar main roz tum utartay ho

Log os gali k phir, dair tak taRaptay hain
Dil main dard lay kar tum, waaN say jab guzartay ho

Dil, k paalia aakhir, tum nay mudda’aa apna
Qulzim-e-muhabbat main doobtay ubhartay ho

Aadmi theher jaao, tum kisi tu haalat par
Is ghaRi bikhartay ho, us gaRi sanwartay ho

Dast-e-aasmaaN ko soch, goud is zameeN ki soch
Jab bhi tum ujaRartay ho, jab bhi tum nikhartay ho

تیرے پہلو میں شام کرتا ہوں


غزل

تھک کہ جس دم قیام کرتا ہوں
تیرے پہلو میں شام کرتا ہوں

جس نے مجھ کو زمین سونپی ہے
زندگی اس کے نام کرتا ہوں

میرے آبا رہے سدا پُرامن
اس لیے میں بھی کام کرتا ہوں

دفن کرتا ہوں، سانس لیتا ہوں
حسرتیں یوں تمام کرتا ہوں

میرے منھ میں زباں نہیں مرے دوست
میں قلم سے کلام کرتا ہوں

Ghazal

Thak k jis dam qayaam karta hoN
Tiray pehloo main shaam karta hoN

Jis nay mujh ko zameen soNpi hay
zindagi os k naam karta hoN

Mairay aabaa rahay sada purAmn
Isliye main bhi kaam karta hoN

Dafn karta hon, saans leta hoN
HasrataiN yuN tamaam karta hoN

Mairay moo main zubaaN nahi miray dost
Main qalam say kalaam karta hoN

Ghazal By: Rafiullah Mian

Ghazal By: Rafiullah Mian

سانس لیتا رہے یقینِ دل


غزل

ایک چہرہ جو ہے قرینِ دل
سانس لیتا رہے یقینِ دل

روح اب بھی رگوں میں تیرتی ہے
سنگ سی سخت ہے زمینِ دل

مرکزے کا طواف جاری ہے
واقفِ حال ہے رہینِ دل

تیرے احساس کی حرارت سے
پھر دھڑکنے لگی جبینِ دل

چاند چہرے سے آنکھ میں پہنچا
رفتہ رفتہ ہُوا مکینِ دل

کتنا یہ جزْرومَد اُٹھائے گا
سینہ اُس کا بنی کمینِ دل

خود تو وہ روشنی سراپا ہے
اُس کا احساس ہے نگینِ دل

حد نہیں اُس کی بے نیازی کی
جستجو ہے، تو ہے دفینِ دل

Ghazal

Aek chehra jo hay qareen-e-dil
Saans laita rahay yaqeen-e-dil

Rooh ab bhi ragoN main tairtii hay
Sang si sakht hay zameen-e-dil

Markazay ka tawaaf jaari hay
Waaqif-e-haal hay raheen-e-dil

Tairay ahsaas ki hararat say
Phir dhaRaknay lagi jabeen-e-dil

Chaand chehray say aankh main pohncha
Rafta rafta hua makeen-e-dil

Kitna ye jazr-o-mad uthaayega
Seena us ka bani kameen-e-dil

Khud tu wo roshni saraapa hay
Uska ahsaas hay nageen-e-dil

Had nahi uski bay-niyaazi ki
Justujoo hay, tu hay dafeen-e-dil

جانے کیا پَدمَنی پہ اُترا ہے


غزل

یار ہے، دُشمنی پہ اُترا ہے
عالم اک سَنسَنی پہ اُترا ہے

آنکھ حیران کوہِ غم کی ہے
عشق جو مُنحَنی پہ اُترا ہے

وقت کے ناخُدا پریشاں ہیں
جانے کیا پَدمَنی پہ اُترا ہے

ہجر حیران اور لب بستہ
وصل ناگفتَنی پہ اُترا ہے

مُسکراہٹ بھی دے نہیں پاتا
قَحْط ایسا غنی پہ اُترا ہے

وہ اَناکیش رِفعَتوں سے اب
حالتِ جاں کنی پہ اُترا ہے

Ghazal

Yaar hay, dushmani pe utra hay
Aalam ik sansanii pe utra hay

 

Aankh heraan koh-e-gham ki hay
Ishq jo munhanii pe utra hay

 

Waqt k naa-khuda pareshaaN haiN
Jaanay kia padmani pe utra hay

 

Hijr hairaan aor lab-basta
Wasl naaguftanii pe utra hay

 

Muskurahat bhi de nahi paata
Qaht aesa ghanii pe utra hay

 

Wo anaa-kaish rifatoN say ab
Haalat-e-jaaN-kanii pe utra hay


تاریکیوں کا رقص ہے دِل بَر کے آس پاس


Dedicated to my 2 dearest blogger friends:
Mr. Shakil Akhtar
Shaheen Sultan

غزل

صدیوں سے راکھ سوئی ہو اخگر کے آس پاس
جذبے پڑے ہوئے ہیں یوں مَنظر کے آس پاس

SadyoN say raakh soyi ho akhgar k aas paas
Jazbay paRay houe hain yuN manzar k aas paas

میں روشنی بَہ دَست کہاں پھر رہا ہوں، حَیف
تاریکیوں کا رقص ہے دِل بَر کے آس پاس

Main roshni ba-dast kahan phir raha hoN Haif
TareekioN ka raqs hay dil-bar k aas paas

مجھ میں نمو بَبُول کی یوں ہی نہیں ہوئی
بوئی ہے تم نے کچھ تو خَلِش دَر کے آس پاس

Mujh main namoo babool ki yuNhi nahi hoi
Boyi hay tum nay kuch tu khalish dar k aas paas

مجھ سے الجھ رہے ہیں کہ تعبیر دو ہمیں
وہ خواب جو بکھر گئے بستر کے آس پاس

Mujh say ulajh rahay hain k tabeer do hamain
Wo khwab jo bikhar gaye bistar k aas paas

برپا ہے جس کی سوچ میں ہنگامہء خیال
رسّی تڑپ رہی ہے اُسی سر کے آس پاس

Barpaa hay jis ki soch main hangaama-e-khayaal
Rassi tarap rahi hay usi sar k aas paas

واعظ کو ہو ذرا سا بھی کھٹکا گرفت کا
فتوے اُلجھنے لگتے ہیں مِنبر کے آس پاس

Waaiz ko ho zara sa bhi khatka garift ka
Fatway ulajhnay lagtay hain minbar k aas paas

مجبوریوں کی چُپ ہے کوئی بے سبب نہیں
دکھ بولتے رہے ہیں مِرے گھر کے آس پاس

MajboorioN ki chup hay koi be-sabab nahi
Dukh boltay rahay hain meray ghar k aas paas

برسوں سے تِشنَگی میں تڑپتے خیال کو
چھوڑ آیا کل رفیع سمُندر کے آس پاس

BarsoN say tishnagi main taRaptay khayal ko
ChoR aaya kal Rafii samundar k aas paas

%d bloggers like this: