Category Archives: Nazm

فریبِ خیال


فریبِ خیال

سر رہ گزر جو بجھا پڑا ہے
وہ خواب ہے
یہ جو شہر پر ہے تنا ہوا
یہ وجود خیمہء دود ہے
یہ عذاب ہے

ذرا سادگی ہو ملاحظہ
کہ تڑپ رہی تھیں جو انگلیاں
انہیں چشم خواب میں گھونپ کر
مری چھین لی ہیں بصارتیں

مرے تشنہ لب ترے زیرپا
مری آبرو ترا زَہرخند
تو قدم سے تابہ دَہن ستم
مرے خواب پر، نہ خیال پر
کبھی پڑسکا ترا سایہ چشمِ کرم کا
اے، مرے شہر آرزو سن لے تو
میں ترے قدم سے قدم ملاکے
جواں ہوا

مجھے راکھ اپنی کریدنے کو ملی نہیں
مجھے شک نہیں، ہے یقین یہ
مری زندگی کا جو خواب تھا
وہ اسی میں تھا

شبِ آرزو، شبِ جستجو
اسے روشنی کی کرن سمجھ کے نہ کھا فریب
یہ نشان ِ صبح نہیں نہیں
یہ تو خون ہے

Faraib-e-Khayaal

***
Sar-e-rehguzar jo bujha paRa hay
Wo khwaab hay
Ye jo shehr par hay tanaa hua
Ye wajood khaima-e-duud hay
Ye azaab hay

Zara saadgi ho mulahiza
K tarap rahi thein jo ungliaaN
Unhain chashm-e-khwab main ghonp kar
Meri cheen li hain basarataiN

Meray tishna lab teray zair-e-paa
Meri aabroo tera zahr khand
Tu qadam say taa ba dahan sitam
Meray khwab par na khayaal par
kabhi paR saka tera saaya chashm-e-karam ka
Ae, meray shehr-e-aarzo sun lay tuu
Main teray qadam say qadam mila k
JawaaN hua

Mujhe raakh apni kuraidnay ko mili nahi
Mujhey shak nahi, hay yaqeen ye
Meri zindagi ka jo khwab tha
Wo osi main tha

Shab-e-aarzoo, shab-e-justujoo
isay roshni ki kiran samajh k na khaa faraib
Ye nishaan-e-subh nahi nahi
Ye tu khoon hay!

کینوس پر مندمل خواہشیں


کینوس پر مندمل خواہشیں

 

جگر کے لہورنگ گوشوں میں تڑپن
کبھی دل کے خانوں میں مچلن
مجھے زخم تم نے نہیں
خود مری خواہشوں نے دیے تھے
وہ جذبوں کا ہیجان تھا
جس نے میرے مکاں کو اجاڑا
٭
نظیر اپنی ملتی نہیں اس جہاں میں
کہ خواہش کو زخم ِ جگر میں بدل کر
نیا خوں بننے سے روکا گیا ہے
٭
مگر خواہشوں کو
مرے جسم و جاں سے
بری طرح لپٹے ہوئے وقت نے
مندمل کردیا ہے
٭
بظاہر تو معصوم ہیں
خواہشیں شارک بن کر
تعاقب میں خوابوں کے رہتی ہیں اکثر
چلیں، کینوس پر تحفظ کی خاطر
انہیں پینٹ کردیں

Canvas par mundamil khwahishaiN

Jigar k laho-rang goshoN main taRpan
Kabhi dil k khaanoN main machlan
Mujhay zakhm tum nay nahi
Khud meri khwahishoN nay diye thay
Wo jazboN ka haijaan tha
Jis nay meray makaaN ko ujaaRa
*
Nazeer apni miltii nahi is jahaN main
K khwahish ko zakhm-e-jigar main badal kar
Naya khoon bannay say roka gaya hay
*
Magar khwahishoN ko
Meray jism-o-jaaN say
Buri tarha liptay howe waqt nay
Mundamil kardia hay
*
Bazaahir tu masoom hain
KhawahishaiN shark ban kar
Ta’aqub main khwaboN k rehti haiN aksar
ChalaiN, canvas par tahaffuz ki khaatir
Inhain paint kardain

تمھارا دکھ


تمھارا دکھ

محبت کی گلیوں میں پھرتی رہی ہوں
شناسائے رازِ دروں ہوں
کہیں پر ہوس ہے
کہیں دل لگی ہے
کہیں ایک جذبہ
جو خالی ہو روحِ وفا سے
یہاں لوگ مجبوریوں کو محبت سے تشبیہ دے کر
محافل میں دادِ سخن لوٹتے ہیں
یہ گلیاں
کہ جن سے میں واقف رہی ہوں
یہاں لوگ اک دوسرے کو
تواتر سے دھوکے میں رکھ کر
محبت کا ناٹک رچاکر
حقیقت کا بطلان کرتے رہے ہیں
٭٭٭

Tumhara Dukh

Muhabbat ki galioN main phirtii rahi hooN
Shanasaay-e-raaz-e-darooN hoN
KaheeN par hawas hay
KaheeN dil-lagi hay
KaheeN aek jazba
Jo khaali ho rooh-e-wafa say
YahaN log majboorioN ko muhabbat say tashbeeh day kar
Mahaafil main daad-e-sukhan loot’tay hain
Ye galiyaaN
K jin say main waqif rahi hooN
Yahan log ik doosray ko
Tawaatur say dhokay main rakh kar
Muhabbat ka naatak rachaa kar
Haqeeqat ka batlaan kartay rahay hain

اے انسان


اے انسان

(خود سے ہمکلامی کی حالت میں)

نشانیوں سے بھرا ہوا ہے
یہ سارا سنسار
ایک دن جو ہوا تھا محبوس پتھروں میں
میں لطفِ احساس ہمکلامی سے جُھک رہا تھا
وجود تیرا نشانیوں میں بڑی نشانی
تو سوچتا ہے
ہے تو بھی صانع
مگر زمیں پر تری ہی مانند
پھر رہے ہیں بہت سے خالق
تری یہ کثرت بتا رہی ہے
کہ ایک مستور اور برتر ہے ذہن اعلا
تجھے جو معدوم ہونے دیتا نہیں زمیں پر
زمیں ہو یا آسماں کے طبقے
بنی ہے جوڑی ہر ایک شے کی
تجھے نہ رہنے دیا ہے تنہا

***

تو چلتے پھرتے وجود کو
اس زمین ِ بے روح پر گماں کر
کہ جس کے اجزا ہیں غیر نامی
اور اس کی زرخیز سطح ِ اولا پہ اک بچھونا
نمو ہے یاں محو استراحت
حیات کی تجھ میں دور تک ہے
جڑوں کا اک سلسلہ رواں
اور
دروں سے چشموں کا پھوٹنا
جیسے زندگی مسکراتی جائے
مُحافظت پر ہے تیرے باطن کی، تیرا ظاہر
جہاں میں روئیدگی کی خاطر
یہ دوسرے نامیوں سے مل کر
مگن ہے صدیوں سے چارہ سازی میں
تیرے اندر کھجور کے باغ سرسراتے ہیں
باغ انگور لہلہاتے ہیں
اور جاری یہ سلسلہ ہے

A Insaan!

(Khud say ham-kalami ki haalat main)

NishanioN say bhara hua hay

Ye sara sansaar
Ak din jo hua tha mahboos pattharoN main
Main lutf-e-ahsas-e-hamkalami say jhuk raha tha
Wujood taira nishanioN main baRi nishani
Tu sochta hay
Hay tu bhi saan’i
Magar zameeN par teri hi maanind
Phir rahay hain bohot say khaliq
Teri ye kasrat bata rahi hay
K ak mastoor aor bartar hay zehn-e-ala
Tujhay jo madoom honay deta nahi hay zameeN par
ZameeN ho ya aasmaN k tabqay
Bani hay joRi har ak shay ki
Tujhay na rehnay dia hay tanha

***

Tu chaltay phirtay wujood ko
Is zameen-e-bay rooh par gumaaN kar
K jis k ajzaa hain ghair naami
Aor is ki zarkhaiz sath-e-oola pe ik bichona
Namoo hay yaaN mahv-e-istiraahat
Hayaat ki tujh main door tak hay
JaRoN ka ik silsila rawaaN
Aor
DarooN say chashmoN ka phootna
Jesay zindagi muhkurati jaaye
Muhafazat par hay teray baatin ki, taira zaahir
JahaN main royedigi ki khaatir
Ye dosray naamioN say mil kar
Magan hay sadioN say chara saazi main
Tairay andar khajoor k baagh sarsaratay hain
Baagh-e-angoor lahlahatay hain
Aor jaari ye silsila hay!

ورق سفید ہے


ورق سفید ہے

میں اک صدی سے پریشاں ہوں
سوچتا ہوں
لہو سے لکھتے
مرا قلم اگل رہا ہے سفیدی
یہ کیا تماشا ہے
کہا تھا تم نے کہ نظمیں مری
لہو رنگ ہیں
صریرخامہء بے رنگ تو سنی نہ کبھی
مگر یہ کیا کہ بصارت پہ اب یقیں ہی نہیں
سماعتیں بھی ہیں شرمندہ
زمیں دوز مکانوں میں
ڈری سہمی ہوئیں
وَرق پہ آج بھی نظمیں وہی تڑپتی ہیں
ورق سفید ہے
نظمیں نظر نہیں آتیں
صریر خامہ کو سننے کی تاب کیا رکھتے
سماعتوں پہ تو اترا نہیں مرے ہمدم
طلسم شب کا سکوت
مگر یہ سرخ لہو نے لباس کیوں بدلا
کفن پہن کے مرے لفظ کیا کہیں گے ابھی
یہ مر کے امن کی نظمیں کسے سنائیں گے
صدا عدم کی سنے گا
تو کون ہے ایسا
کہ ہم تو زیست کے نغمے بھی سن نہیں سکتے
میں اک صدی سے پریشاں ہوں
سوچتا ہوں
لہو سے لکھتے
مرے قلم میں سفیدی کہاں سے آئی ہے
میں سوچتا ہوں
مرے خوں کا خون کس نے کیا

Waraq Sufaid hay

Main ik sadi say pareshaaN hoN
Sochta hoN
Luhoo say likhtay
Mera qalam ugal raha hay sufaidii
Ye kia tamasha hay
Kaha tha tum nay k nazmain merii
Luhoo-rang hain
Saree-e-khaama-e-bay-rang tu sunii na kabhi
Magar ye kia k basaarat pe ab yaqeeN hi nahi
Sama’ataiN bhi hain sharminda
ZameeN-doz makanoN main
Dari sehmi hoieN
Waraq pe aaj bhi nazmain wahi taRapti hain
Waraq sufaid hay
Nazmain nazar nahi aateeN
Saree-e-khaama ko sunnay ki taab kia rakhtay
Sama’atoN pe tu utraa nahi meray hamdam
Tilism-e-shab ka sukoot
Magar ye surkh luhoo nay libaas kioN badla
Kafan pehehn k meray lafz kia kahaingay abhi
Ye mar k amn ki nazmain kisay sunayingay
Sada adam ki sunega
Tu kon say aesaa
K hum tu zeest k naghmay bhi sun nahi saktay
Main ik sadi say pareshaN hoN
Sochta hoN
Luhoo say likhtay
Meray qalam main sufaidii kahaN say aayi hay
Main sochta hoN
Meray khooN ka khoon kis nay kia

مسافر ِ غم


مسافر ِ غم

مرے ریگ زار بدن میں ہے
وہ مسافر غم جوگیا
کہ جسے کہیں تو قرار ہو
چلو، جوگ سے اسے پیار ہو
چلو، رقص میری حیات کا
کہیں تھم کے سانس تو لے ذرا
کسی جوگ مایا خیال میں
کسی صوفیانہ جلال میں
مرے دل، مسافر بے نوا
ترا والہانہ مآل ہو

Musafiri-e-Gham

Meray raig-zaar-e-badan main hay
Wo musafir-e-gham-e-jogiyaa
K jisay kaheeN tu qaraar ho
Chalo, jog say isay piyar ho
Chalo, raqs meri hayaat ka
KaheeN tham k saans tu lay zara
Kisi jog-maya khayal main
Kisi sofiyana jalal main
Meray dil, musafir-e-bay-nawa
Tera waalihana ma’aal ho

بچپنا


بچپنا

کسی بچے کی مانند اس کی آنکھوں میں
شرارت تیرتی ہے یوں
کہ جیسے زندگی کے پانیوں پر اک
محبت کا پرندہ تیرتا ہو اور
اسے دو پل ٹھہر کر سانس لینے کو
مُیَسّر ہو نہ کوئی اک جزیرہ بھی
مگر وہ مسکراتی ہوں

انہی آنکھوں کے آنگن میں
کسی کو چاہنے کا اک تصوّر رقص کرتا ہو
کبھی رقصاں، کبھی ساکت
کبھی جھومے مسرّت میں
کبھی مبہوت رہ جائے
مگر اٹکھیلیاں کھیلے
محبت کے حسیں، اس نیلے آنگن میں
سیہ، روشن درختوں میں کہیں چُھپ کر
کہیں سے چاند کی صورت ذرا سی رونمائی کو
نکل آئے
دبا کر ہونٹ دانتوں میں
کہیں محبوب کو ڈھونڈے
اُسے پاکر پھر اس کی اور بڑھ جائے
مگر اُس کے پلٹنے سے بھی پہلے خود پلٹ جائے
درختوں میں کہیں چھپ کر
یہی اٹکھیلیاں کھیلے

اگر آنکھوں کے اس نیلے سمُندر پر
شرارت، تیرنے والی
جزیرے کے کہیں مٹتے ہوئے آثار بھی پالے
تو دم لینے کو اترے اور
اُسے یہ گیان حاصل ہو
کہ اُس کا بچپنا تو مُدتوں پہلے
خود اس نیلے سمُندر میں پھسل کر ڈوبتے لمحے
ذرا سا مسکرایا تھا
بھیانک خواب کی صورت

Bachpana

Kisi bachay ki maanind os ki aankhoN main
Shararat tairtii hay yuN
K jesay zindagi k paanioN par ik
Muhabbat ka parinda tairta ho aor
Osay do pal theher kar saans lenay ko
Muyassar ho na koi ik jazeera bhi
Magar wo muskurati hoN

in roman, continue reading

!تم نے دیر کردی


!تم نے دیر کردی

تم نے تجہیز و تکفین میں دیر کردی بہت
میں تو کب لوٹ کر آچکا
اُن ہی پگ ڈنڈیوں پر۔۔۔۔۔
سفر کرکے طے)
جو طویل اور اذیّت سے بھرپور تھا
(اور دفنادیا اپنا مُردہ
۔۔۔جو قبروں کے بیچ اس طرح سے بچھی ہیں
کہ جیسے اس اُمید پر
ہر کسی کو گزرنے کی دیتی رہی ہوں اجازت
کہ اک دن تو اِن کی بھی ہوگی ہری گود
اور ان کے اندر پلے گی تمنّا

کسی تیسرے نے اگر یہ تماشا کیا ہو
کہ ہم لڑرہے تھے محبت کی ڈوئل
تو ممکن ہے دنیا کو وہ یہ بتائے
کہ کچھ دیر میں دونوں اپنے ہی ہاتھوں
!فنا ہوگئے تھے

Tum nay dair kardi!

Tum nay tajheez-o-takfeen main dair kardi bohot
Main tu kab laot kar aachuka
Un hi pag-dandioN par….
Safar kar-k tay
Jo taweel aor aziyyat say bharpoor tha
Aor dafnaa dia apna murda
….Jo qabroN k beech is tarah say bichi hain
K jesay is ummeed par
Har kisi ko guzarnay ki daitii rahi hoN ijaazat
K ik din tu in ki bhi hogi hari gaod
Aor in k andar palaigii tamanna

Kisi teesray nay agar ye tamasha kia ho
K hum laR rahay thay muhabbat ki Duel
Tu mumkin hay dunya ko wo ye bataaye
K kuch dair main dono apnay hi haathoN
Fana hogaye thay!

مَصرف


A year old poem…

مَصرف

وہ وقت بھی آئے گا تجھی پر
کہ وقت دریا کی شکل
بہ تو رہا ہی ہوگا
اور اس کے ٹھہرے کنار پر تو
یوں بیٹھ کر انگلیوں پہ اکثر
گھڑی گھڑی کو شمار کرکے
بِتائے گا وقت کو، مگر وہ
نہ بیت پائے گا ایک پَل بھی
نہ دیکھ پائے گا ایک کَل بھی
جہاں کا جتنا بھی وقت ہوگا
وہ تیری مُٹھی میں بند ہوگا
مگر نہ ہوگا تو اِس کا مَصرف۔۔۔

Masraf

Wo waqt bhi aayega tujhi par
K waqt darya ki shakl
Beh tu raha hi hoga
Aor os k thehray kinaar par tuu
YuN baith kar unglioN pe aksar
GhaRi ghaRi ko shumaar kar-k
Bitaayega waqt ko, magar wo
Na beet paayega aik pal bhi
Na daikh paayega aik Kal bhi
Jahan ka jitna bhi waqt hoga
Wo teri mutthi main band hoga
Magar na hoga tu is ka Masraf…

!آخری دم تک


!آخری دم تک

ابتدائے آدم سے
ابتلائے آدم تک۔۔۔
سلسلے غلاظت کے
اب دراز اتنے ہیں
بس، نکال پاتا ہوں، انگلیوں کے پوروں کو
بے کنار دَل دَل سے
جن سے وِرد کرتا ہوں
صبح شام پاکی کی
جن میں جذب ہوتی ہے
نور اِس حقیقت کی۔۔۔۔۔
پاکیاں اُترتی ہیں
عظمتوں سے دَل دَل میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری اک کہانی ہے
جانے کتنے قرنوں پر پھیل کر سسکتی ہے
گرنے والے آنسو کا ذایقہ پرانا ہے
دل لگی پرانی ہے
پیار بھی پرانا ہے
نفرتوں کے دَل دَل میں
چِپچپی پرانی ہے
ابتدائے آدم سے
ابتلائے آدم تک
سوچ کے سبھی پہلو
ایک رخ پہ بہتے ہیں
فرق بس ذرا سا ہے
کل اسی غلاظت کے ڈھیر چھوٹے چھوٹے تھے
آج یہ پہاڑوں کی چوٹیوں سے بھی اُٹھ کر
آسماں کی چھت چھوکر
داغ دار کرنے کی کوششوں میں ہیں بے کل
بے صدا اُچھلتے ہیں
آگ اک اُگلتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سلسلے غلاظت کے
توڑ کر حصارِ جسم
اندروں میں بستے ہیں
جاں گداز جذبوں کو
درد میں تپاتے ہیں، کربِ جاں میں کستے ہیں
بدبوؤں میں روتے ہیں
خوش بوؤں میں ہنستے ہیں
یاخدا ترے بندے
دَل دَلوں میں کیچڑ کے
!کس خوشی سے دھنستے ہیں
جب بِساند اٹھتی ہے ذہن و دل کے آنگن سے
آسماں اٹھاتے ہیں
اپنے ماتمی سر پر۔۔۔۔
پاکیاں طلب کرکے
اِک ذرا سا پوروں کو
وہ نکال پاتے ہیں
سلسلے غلاظت کے ساتھ ساتھ چلتے ہیں
اور آخری دم تک
!ڈبکیاں لگاتے ہیں

 Aakhri dam tak!

Ibtidaay-e-aadam say
Ibtilaay-e-aadam tak….
Silsilay ghalazat k
Ab daraaz itnay hain
Bus, nikaal paata hoN, unglioN k porooN ko
Be-kinaar dal-dal say
Jin say wird karta hoN
Subh-o-Shaam paaki ki

in roman, continue reading

%d bloggers like this: