اشعار

ڈھونڈ رہا ہوں سائے میں بھی عکس ترا
کچھ دن پہلے روح سے سایہ اترا تھا

***

ذات کی کہکشاں سے ہٹ کر ہے
وہ جو ضم ہے وجود کے اندر

***

اب کوئی آرزو نہیں باقی
ایک خواہش نے دل جلا ڈالا

***

جو کبھی یاس سے جی جاتا ہے
لذت_درد سے جی لیتے ہیں

***

نہ بن شرار کہ جل جائے گا چمن سارا
پھوار_صبح_ حسیں میں اے یار ڈھل جاؤ

***

وہ ہم نہیں جنھیں خوشیاں بھی راس آجائیں
ہمارے واسطے بس غم ہی زندگی ٹھہری

***

ہر قدم پر سوال رکھتا ہے
کتنا میرا خیال رکھتا ہے
میری مسکان پر مگر دل میں
کیوں ہمیشہ ملال رکھتا ہے

***

نکلے ہیں ظلمتوں میں اجالوں کو ڈھونڈنے
ہر سمت اک چراغ پڑا ہے بجھا ہوا

***

ہر مراد بر آئے، زندگی کی راہوں میں
وہ ہے روبرو لیکن، طرز_عاشقی بھی ہو

***

میری ان خشمگیں نگاہوں میں
ایک تصویر چھبتی رہتی ہے
آؤ اب ڈھونڈ لو مجھے پھر سے
زہر آگیں لبوں سے کہتی ہے

***

اس کے چہرے پہ زرد سایہ ہے
میں نے خود اس پہ ظلم ڈھایا ہے
بعد از مرگ وہ وجیہ چہرہ
عکس سنگیں کبود پایا ہے

***

چاند چہروں میں کچھ نہیں رکھا
داغ_دل کا یہی فسانہ ہے

***

تیرے قدموں پہ چل پڑیں گی یہ
میری آنکھوں سے مت الجھنا یوں

***

چاند چہرے سے آنکھ میں پہنچا
رفتہ رفتہ ہوا مکین_ دل

***

خیال_بندگی دے کر اداسی گھیر لیتی ہے
کبھی جو تیری آنکھوں میں خود اپنا عکس پاتا ہوں

***

چاند سے چہروں نے مجھ کو کردیا بے آبرو
رات بھر جاگا کیا میں، چاند سب سوتے رہے

***

وہ بھی بیٹھی رہی میرے پہلو ہی میں، چاندنی میں یونہی ہم نہایا کیے
رات پھر ہم سلگتے رہے دم بہ دم، فاصلے بھی رہے دوریاں بھی رہیں

***

آنکھوں آنکھوں میں بات ہوتی رہی
یوں ہی گہری وہ رات ہوتی رہی

***

بستی خدا کی ہے یہ بے حد وسیع لیکن
بندہ کہاں یہ جائے چھپ کر گناہ کرنے

***

اشک جاں سوز سے جلتے نہیں چراغ_سحر
آندھیوں میں نہ جلائیں گے جب لہو کے چراغ

***

سربلند عشق کی راہوں سے گزر جاتے ہیں
کٹ تو جاتا ہے گوارا نہیں سر خم ہونا

***

آندھیوں میں جلا لہو کے چراغ
تجھ کو جائز ہے پھر امید سحر

***

تحقیق_دل فگاراں، ترتیب_آہ و زاری
کیا عشق سے تکلم، ہر رخ پہ جیسے آری

***

  1. ab koi aarzoo nahiN baaqi
    ek khuahish ne jee jala daala

    kahte hain meri arze tamanna pe woh haNs ke
    deewana to hushyaar kabhi ho nahiN sakta

    Nikle haiN zulmatoN meN ujaloN ko dhoondhne
    har simt ek chiragh paRa hai bujha hua

    Bhatke hue haiN ham roshni ki talaash meN
    Chiraagh sare bujhaao, baRa andhera hai.

    (Yeh aakhri sher mere aziz dost Shamim ka hai). aap ke sare sher bahot achche lage. saath hi kuch sher yaad ate gaye.

    Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: