طرحی غزلیں

کیا کہوں، اور کہنے کو کیا رہ گیا
***

دشت_وحشت میں، میں اور خدا رہ گیا
“کیا کہوں، اور کہنے کو کیا رہ گیا”

میرے دوراں کا ہے مسئلہ بے حسی
جو کہا، ہونٹ پر ہی دھرا رہ گیا

ان ہواؤں میں زہر_ہلال تو ہے
ان کی زد میں جو آیا، گھلا رہ گیا

جل کے بجھ بھی گئے سب مجسم دیے
ایک امید کا بس دیا رہ گیا

سنگ سب ہی چلے اور خوش ہے رفیع
وہ جو محبوب تھا، اے خدا، رہ گیا

Kia kahoN aor kehne ko kia reh gaya
***

Dasht-e-wahshat main, main aor khuda reh gaya
“Kia kahoN aor kehne ko kia reh gaya”

Meray doraaN ka hay masala be-hisi
Jo kaha, hont par hi dhara reh gaya

In hawaaoN main zehr-e-haalahal tu hay
In ki zad main jo aaya, ghulaa reh gaya

Jal k bujh bhi gaye sub mujassam diye
Aik ummed ka bus dia reh gaya

Sang sab hi chalay aor khush he Rafii
Wo jo mahboob tha, A Khuda, reh gaya

**************************************************************************

**************************************************************************

“ہوائے تند کو شاید کبھی خبر بھی نہ ہو”

جہاں، کہ دھوپ کے رستے میں اک شجر بھی نہ ہو
وہاں تو میرے خدا، پھر کوئی سفر بھی نہ ہو

JahaN, k dhoop k rastay main ik shajar bhi na ho
WahaN tu meray khuda, phir koi safar bhi na ho

یوں خاک اڑے سبھی محلوں میں بھی، وہ دن آئے
کہ پھر سے سونا غریبوں کا اک نگر بھی نہ ہو

YuN khaak uRay sabhi mehloN main bhi, wo din aaye
K phir se suuna ghareeboN ka ik nagar bhi na ho

دیا، غریب کے در کا ہے آخری امید
“ہوائے تند کو شاید کبھی خبر بھی نہ ہو”

Dia, ghareeb k dar ka hay aakhri ummeed
“Hawaaye tund ko shayad kabhi khabar bhi na ho”

یہ کیسے ہو، کہ جہاں رنگ و بو سے ہو مہکا
غبار_ قوس قزح میں کوئی سفر بھی نہ ہو

Ye kesay ho, k JahaaN rang-o-buu say ho mehka
Ghubaar-e-qos-e-qazaH main koi safar bhi na ho

خوشی کے کھیت جہاں لہلہائے رہتے ہوں
وہاں پہ درد کی مٹی کی اک ڈگر بھی نہ ہو

Khushi k khait jahaN lehluhaaye rehtay hoN
WahaN pe dard ki matti ki ik dagar bhi na ho

**************************************************************************

**************************************************************************

ہر اک مقام پہ نقش سفر بناتا ہوں
جہاں ہو درد کی منزل، ادھر بناتا ہوں

Har ik maqaam pe naqsh-e-safar banata hoN

JahaaN ho dard ki manzil, udhar banata hoN

صحیفہٴ دل بے درد سے اترتی ہے
تو پھر میں درد کی تازہ خبر بناتا ہوں

Saheefa-e-dil-e-be-dard say utarti hay

Tu phir main dard ki taza khabar banata hoN

مرے وجود میں دل ٹوٹ کر بکھرتا ہے
میں کینوس پہ وہ چہرہ اگر بناتا ہوں

Meray wajood main dil toot kar bikharta hay

Main Canvas pe wo chehra agar banata hoN

کہ دل کے درد و الم میں کمی نہ رہ جائے
بہاکے خون میں اپنا جگر بناتا ہوں

K dil k dard-o-alam main kami na reh jaaye

Baha k khoon main apna jigar banata hoN

نہ جانے کیوں میں کبھی مطمئن نہیں ہوتا
گھروندے توڑ کے بار_ دگر بناتا ہوں

Na jaanay kioN main kabhi mutmaien nahi hota

Gharonday toR k baar-e-digar banata hoN

بہاکے آنسو انہیں خشک کرتا رہتا ہوں
میں درد ساز نہیں ہوں، حجر بناتا ہوں

Bahaa k aansu inheN khushk karta rehta hon

Main dard-saaz nahi hoN, hajar banata hoN

**************************************************************************

**************************************************************************

عامیوں کے شہر میں ہر زاویہ بدتر کھلے

کب مقدر ہے کھلا، بس روگ ہی بہتر کھلے

AamioN k shehr main har zawia bad-tar khulay

Kab muqaddar hay khula, bus rog hi behtar khulay

ہائے رسوائی، سربازار جو اس پر کھلا

سرہی کھل جائے گا اپنا جب تلک دل بر کھلے

Haaye ruswaayi, sar-e-bazaar jo os par khula

Sar hi khul jaayega apna jab talak Dilbar khulay

دیس میں پردیس اک تعمیر ہے کب سے یہاں

ظلم کے بازار میں اب ہرقدم محشر کھلے

Dais main pardais ik tameer hay kab say yahaN

Zulm k bazaar main ab har qadam mahshar khulay

عشق خود دیتا ہے اظہارِ وفا کا حوصلہ

ورنہ کیا پھرتے نہیں آزاد، یاں بربر کھلے

Ishq khud deta hay izhar e wafa ka hosla

Warna kia phirtay nahi azaad, yaaN barbar khulay

راکھ ہوجاتا ہے دل فن کار کا ہائے مگر

آتشِ بے دود کی صورت میں یہ اخگر کھلے

Raakh hojata hay dil fankaar ka haaye magar

Aatash e bedood ki soorat main ye akhgar khulay

زندگانی خاک ہو، سارے تعلق راکھ ہوں

خواب میں اک بار ہی، پر وہ رخِ انور کھلے

Zindagani khaak ho, saaray ta’alluq raakh hoN

Khwab main ik baar hi, par wo rukh-e-anwar khulay

تو کہ ہے محروم خودداری کی لذت سے تو پھر

تیرا پورا قد عدو کے سامنے کیوں کرکھلے

Too k hay mahroom khud-dari ki lazzat say tu phir

Tera poora qad adoo k saamnay kioN kar khulay

رازداں تو بن گیا، کیوں کر جیوں گا اب رفیع

میں خوشی سے مرنہ جاؤں، اور وہ مرمر کھلے

RaazdaaN tu ban gaya, kioN kar jiyoN ga ab Rafi

Main khushi say mar na jaaoN, aor wo mar mar khulay

**************************************************************************

**************************************************************************

“کب دیکھیے کہ ہوں میری آنکھیں لہو لہو”

اُس شہر دل خراش کی شامیں لہو لہو

جس کی زمیں پہ پڑتی ہوں کرنیں لہو لہو

Os shehr e dil kharash ki shamaiN luho luho

Jis ki zameeN pe paRti hoN kirnain luho luho

جس عہد میں پڑا ہوں فقط اس کا دوش ہے

کم گو کی تجھ کو لگتی ہیں باتیں لہو لہو

Jis ehd main paRa hoN fiqat os ka dosh hay

Kam-go ki tujh ko lagti hein bataiN luho luho

پلکوں میں بس گئی ہے کسی کی نگاہ ناز

“کب دیکھیے کہ ہوں میری آنکھیں لہو لہو”

PalkoN main bas gayi hay kisi ki nigaah e naaz

“Kab dekhiye k hoN meri aankhien luho luho”

گرنے لگی ہیں تیری سماعت پہ بجلیاں
ہونے لگی ہیں میری ندائیں لہو لہو

Girne lagi hein teri sama’at pe bijliaaN

Hone lagi hein meri nidaayiN luho luho

شاید کہ دل میں صدق نہیں ہے ابھی تلک

ہر سمت ہورہی ہیں دعائیں لہو لہو

Shayad k dil main sadq nahi hay abhi talak

Har simt horahi hein duayiN luho luho

کس طرح خواب دیکھوں یہاں امن کا رفیع
ارمان میری آنکھوں سے برسیں لہو لہو

Kis tarh khwab dekhoN yahaN amn ka Rafii

Armaan meri aankhoN say  barsaiN luho luho

**************************************************************************

**************************************************************************

ایک مَحرم رہا ہے آنکھوں میں

اس لیے غم رہا ہے آنکھوں میں

Aik Mahram raha hay aankhoN main

Is liye gham raha hay aankhoN main

گرچہ آنسو ہوں میری پلکوں پر
شوخ مدغم رہا ہے آنکھوں میں

Garche aansu hoN meri palkoN par

Shokh madgham raha hay aankhoN main

کیسے کہ دوں کہ وہ نہیں آیا
وہ تو ہردم رہا ہے آنکھوں میں

Kesay keh dooN k wo nahi aaya

Wo tu har dam raha hay aankhoN main

اب گریزاں ہے، اب وہ مائل ہے
ایک سنگم رہا ہے آنکھوں میں

Ab guraizaaN hay, ab wo maayil hay

Aik sangam raha hay aankhoN main

دل نے بھی تو اسے جگہ دے دی
جو مکرّم رہا ہے آنکھوں میں

Dil nay bhi tu osay jaga de di

Jo mukarram raha hay aankhoN main

اس لیے کچھ نہ دیکھ پایا ہوں
میرا ہم دم رہا ہے آنکھوں میں

Is liye kuch na daikh paya hoN

Mera ham-dam raha hay aankhoN main

**************************************************************************

**************************************************************************

تری تو ہے کہ جو پرچھائی ہے تعاقب میں
مجھے یہ ڈر ہے کہ ہرجائی ہے تعاقب میں

Teri tu hay k jo parchaayi hay ta’aqub main
Mujhe ye dar hay k harjaayi hay ta’aqub main

وہ موت کا بھی تو مژدہ سنا رہا ہے یونہی
کہ جیسے زیست کی شہنائی ہے تعاقب میں

Wo mot ka bhi tu muzda suna raha he yunhi
K jesay zeest ki shehnaayi hay ta’aqub main

ہزار ہا ہیں مگر بھیڑ خوف سے لرزاں
نقوش پا پہ یوں تنہائی ہے تعاقب میں

Hazaar haa hein magar bheeR khof say larzaaN
Naqoosh-e-paa pe yuN tanhaayi hay ta’aqub main

خوشی ہے گر تری قسمت میں، بیٹھ جا ہمدم
یہ چیز بھی کبھی مل پائی ہے تعاقب میں

Khushi hay gar teri qismat main, baith jaa hamdam
Ye cheez bhi kabhi mil paayi hay ta’aqub main

**************************************************************************

**************************************************************************

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: