ابتدائی نظمیں

شکایت
***

مجھے تم سے شکایت ہے
بس اتنی سی
جو ملتے ہو تو اپنی ہی سناتے ہو
کبھی قصہ وفاؤں کا
کبھی جلوہ اداؤں کا
کہ تم نے دن گزارا کیسے میرے بن
شب_تنہائی میں لیں کروٹیں گن گن
کبھی یہ بھی خیال آیا
کہ ناطق ہے محب جاناں تمھارا بھی
محبت ہے زباں اس کی
اسے الفاظ دینے پر بھی قادر ہے
اسے خواہش ہے تم سے بس یہ کہنے کی
“!مجھے تم اچھے لگتے ہو”

Shikaayat
***

Mujhe tum se shikayat he
Bas itni si
Jo milte ho tu apni hi sunaate ho
Kabhi qissa wafaaoN ka
Kabhi jalwa adaaoN ka
K tum ne din guzara kese meray bin
Shab-e-tanhaayi main leeN karwataiN gin gin
Kabhi ye bhi Khayal aaya
K naatiq he Muhibb jaanaN tumhara bhi
Muhabbat he zuaaN oski
Isay alfaaz dene bhi qaadir he
Osay Khwahish he tum se bus ye kehne ki
“Mujhe tum ache achy lagte ho!”
************************************************************************
************************************************************************

دسمبر کی ایک شام
***

مرے وجود کے صحرا کی بات کیا کہیے
کہ دشت ذات میں وحشت کا راج رہتا تھا
مرے وجود میں ٹھہری تھی ماتمی سی فضا
میں زندگی کو سمجھتا تھا ایک کار عبث
گزرتے لمحوں کی پہچان مجھ کو تھی ہی نہیں
خوشی بہت تھی مگر مجھ کو وہ ملی ہی نہیں
مجھے تو قید میں رکھا تھا وقت نے بے کل
پھر ایک، وقت کی رنگیں قبا میں لپٹی ہوئی
کسی حسین سی دیوی نے لی جو انگڑائی
ظہور کرنے لگا حادثہ حسیں، دھیرے
مرے بھی دل کے دھڑکنے میں اک ترنگ آئی
مرے وجود کے صحرا میں رنگ در آئے۔۔۔
جو دشت ذات میں وحشت کاراج تھا، نہ رہا
میں یہ کہوں کہ یہ کل کا ہے واقعہ ہمدم
وہ ایک شام دسمبر کی ایسی بھی اتری
جو میرے ہونٹوں پہ ٹھہری تھی پیاس برسوں کی
خوشا یہ بخت کہ گل رو نے وہ بجھا دی ہے

December Ki Aik Shaam
***

Meray wajood k Sehra ki baat kia kahiye
K dasht-e-zaat main wahshat ka raaj rehta tha
Meray wajood main thehri thi maatami si fiza
Main zindagi ko samajhta tha aik kaar-e-abas
Guzarte lamhoN ki pehchan mujh ko thi hi nahi
Khushi boht thi magar mujh ko wo mili hi nahi
Mujhe tu qaid main rakha tha waqt ne bekal
Phir aik, waqt ki rangeeN qaba main lipti hui
Kisi haseen si devi ne li jo angRaayi
Zahoor karne laga Haadsa haseeN , dheeray!
Meray bhi dil ky dhaRakne main ik tarang aayi
Meray wajood k sehra main rang dar aaye…
Jo dasht-e-zaat main wahshat ka raaj tha, na raha
Main ye kahoN k ye kal ka he waqia hamdam
Wo aik shaam December ki aisi bhi utri
Jo meray hontoN pe thehri thi pyas barsoN ki
Khushaa ye bakht k Gul-Roo ne wo bujha di he!

************************************************************************
************************************************************************

واپسی

چلو اک بار ہم تم بھول جائیں تلخیاں ساری
محبت لفظ کو ہر حرف میں ہم حرزجاں کرلیں
جو دکھ ہیں سب بیاں کرلیں
چلو اک بار ہم تم بھول جائیں تلخیاں ساری
یہ مانا دل بہت ناراض ہیں، رنجور ہیں جاناں
گلے ان میں نہ جانے کب سے یوں مستور ہیں جاناں
اناؤں سے پڑے مخمور ہیں جاناں
چلو آؤ کریں اک آخری کوشش
نکل جائیں بہت ہی دور اس ہنگام دنیا سے
کسی صحرا میں ہوں مہجور!
کندھوں پر نہ ہو بار_ گراں پندار کا کوئی
اٹھائیں رخت بس تنہائی کی صورت
خموشی ہم سفر اپنی
جو گزری اب تلک ہے زندگی اس کا ہر اک لمحہ
ہماری سوچ کے محور کے اندر ہو
ہراک مثبت، ہراک منفی سے برتر ہو
اور اس کے بعد پھر ہم لوٹ آئیں زیست کی جانب
نہ ہو اس زندگی میں رنج کوئی، نے گلہ کوئی
نہ ہو پھر بے نوا کوئی!

Waapsi

Chalo ik baar hum tum bhool jaayiN talkhiyaN sari

Muhabbat lafz ko har harf main hum hirz-e-jaaN karlen

Jo dukh hen sub bayaaN karlen

Chalo ik baar hum tum bhool jaayiN talkhiyaN sari

Ye mana dil boht naraaz hen, ranjoor hen janaN

Gilay in main na jaane kab se yuN mastoor hen janaN

AnaaoN say paRe makhmoor hen janaN

Chalo aao karen ik aakhri koshish

Nikal jaayiN boht hi door is hangaam-e-dunya say

Kisi sehra main hoN mehjoor

kandhoN par na ho baar-e-giraaN pindaar ka koi

UthayiN rakht bus tanhayi ki soorat

Khamoshi hamsafar apni

Jo guzri ab talak hay zindagi, os ka har ik lamha

Hamari soch k mehwar k andar ho

Har ik masbat, har ik manfi say bartar ho

Aor is k bad phir hum lot aayiN zeest ki janib

Na ho is zindagi main ranj koi, nay gila koi

Na ho phir be-nawa koi

************************************************************************

************************************************************************

محروم محبت
***

ہجوم ہے زندگی کا جاری
بکھیرے فطرت نے رنگ ہر سو
طلسم_ رنگ اور بو میں آنکھیں
بس ایک ہی رنگ دیکھتی ہیں
اور ایک ماخذ
کہ چشمہء زر ہی جس سے پھوٹے
میں سوچتا تھا، یہیں تلک زندگی ہے، آگے
عجیب سی بے کلی ہے اور بس
اتاہ گہرائیوں میں ڈوبی
عجیب سی زندگی ہے اور بس
کبھی گھٹن ہے، کبھی اداسی
ہے زندگی کا لباس افسوس
رہوں گا یونہی اداس افسوس
مگر غلط تھا خیال میرا
اسیر اب اس خیال کا ہوں
کمی ہے کچھ تو، ہے ذات ادھوری
میں سوچتا ہوں
کہ ہم محبت کو جسم_ خاکی میں سرد اخگر بناکے چھوڑیں
محال ہے یہ
کہ جسم_ خاکی میں اک شرارہ ہے زندگی کا
اور اس شرارے کو سرد کرنا ہے خود فریبی
اسیر اب اس خیال کا ہوں
جو زندگی کی ضرورتیں ہیں
وہ سب کی سب ہیں مجھے میسر
مگر نہیں تو، بس اک محبت

Mahroom-e-Muhabbat
***

Hajoom he zidnagi ka jaari
Bakheray fitrat ne rang harsoo
Tilism-e-rang aor boo main aankheN
Bas aik hi rang dekhti hein
Aor aik maakhaz
K Chashma-e-zar hi jis se phootay
Main sochta tha, yaheeN talak zidnagi he, aagay
Ajeeb see bekali he aor bus
Utaah gehraayioN me doobi
Ajeeb si zindagi he aor bus
Kabhi ghutan he, kabih udaasi
He zidnagi ka libaas afsoos
Rahonga yunhi udaas afsoos
Magar ghalat tha khayal mera
Aseer ab is khayal ka hoN
Kami he kuch tu, hay zaat adhoori
Main sochta hoN
K hum muhabbat ko jism-e-khaaki main sard akhgar bana k choRein
Mahaal he ye!
K jism-e-khaaki me ik sharara he zindagi ka
Aor is shararay ko sard karna he khud-faraibee
Aseer ab is khayal ka hoN
Jo zidnagi ki zaroorataiN hein
Wo sab ki sab hein mujhe mayassar
Magar nahi tu, bus ik muhabbat

************************************************************************

************************************************************************

صنم

ہیں بہت عام یہاں دولت و دینار کے بت
اور کہیں دل میں پڑے ہیں لب و رخسار کے بت
ہاں خدا بن کے جو پھرتے ہیں ، وہ زردار کے بت
کیسے کیسے ہیں تراشے ہوئے پندار کے بت

رمز آشفتہ مزاجی یوں کھلا پل بھر میں
پوجنا دل میں کسی کو، کسی کو منبر میں

جو تقاضے تھے وفا کے وہ عدم میں سوئے
داغ دل کا ہے کوئی اشک سے اس کو دھوئے
کچھ خبر بھی ہے کہ کب اور کہاں کیا کھوئے
کیا کوئی ہے جو اسے سوچ کے پیہم روئے

یہ فسانہ ہے ، بتاتا ہے حقیقت ہم کو
من میں پوشیدہ صنم سے ہے محبت ہم کو

Sanam

HaiN boht aam yahaN dolat-o-deenar k but
Aor kaheN dil me paRay hein lab-o-rukhsaar k but
HaaN khuda ban k jo phirte hein, wo zardaar k but
Kese kese hen tarashe hoe pindar k but

Ramz aashifta-mizaaji yuN khula pal bhar main
Poojna dil main kisi ko, kisi ko mimbar main

Jo taqaazay the wafa k wo adam main sooye
Daagh dil ka he, koi ashk se is ko dhooye
Kuch khabar bhi hay k kab aor kahaN kia khooye
Kia koi hay jo ise soch k paiham rooye

Ye fasana he , batata he haqeeqat hum ko
Man main posheeda sanam se he muhabbat hum ko

************************************************************************

************************************************************************

آزاد نظم

سوچ

سوچ مرا حاصل
میں نے کب یہ جانا
جب جب مجھ سے دور چلی منزل
منزل ہے قاتل
مجھ کو کب عرفان ہوا?
جب جب میں ٹھہرا
سوچ کہ جس کی وسعت لامحدود
جس نے میری روح کا مرشد بن کر
عشق سمندر کی موجوں پہ مجھ کو تھاما

پار اتارا
اور لب ساحل
ریت کے ذروں میں
میں نے خود کو پایا
ایک حقیر سا تل

Azaad Nazm

Soch

Soch mera haasil
main ne kab ya jana
Jab jab mujh se door chali manzil
Manzil he qaatil
mujh ko kab irfaan hua?
Jab jab main thehraa
Soch k jis ki wus’at laamahdood
Jis ne Meri rooh ka murshid ban kar
Ishq samundar ki mojoN pe mujh ko thaama,

paar utara
Aor lab-e-saahil
Rait k zarroN main
main ne khud ko paya
Aik haqeer sa til

************************************************************************

************************************************************************

نیا سال

نئے سال کا پہلا سورج
کتنا حرارت زا ہے
کل رات یہ سوچ رہا تھا
شاید اب کہ برس
وہ کام یاب ہوجائے
اور لوگ محبت کی گرمی جذب کرلیں!

Naya Saal

Naye saal ka pehla sooraj
Kitna haraarat-zaa hay!
Kal raat ye soch raha tha
Shayad ab k baras
Wo kaamyab hojaye
Aor log Muhabbat ki garmi jazb karleN!

************************************************************************

************************************************************************

ماں

میری خاطر وہ اٹھتی تھی ہر نیم شب
اب نہ ہو پھر کسی دکھ سے وہ آشنا
لوگ کہتے ہیں انمول تحفہ ہے ماں
اس جہاں میں ہے وہ کایناتی دعا
اس کی فطرت میں ہے امتزاج حسیں
جز بہ جز پیکر_ حسن و عشق و وفا

MaaN

Meri khaatir wo uth’ti thi har neem-e-shab
Ab na ho phir kisi dukh se wo aashna
Log kehte hein anmol tuhfa he maaN
Is jahaN me he wo kaayinaati dua
Us ki fitrat main he imtizaaj-e-haseeN
Juz ba juz,paikar-e-husn o ishq-o-wafa

************************************************************************

************************************************************************

اے مزار ماضی
***

تجھ کو دیکھا تو یاد آیا
تیغ_ حیدر کی دھار ہے تو
روئے جس پر سلیم فطرت
ماضی کا وہ مزار ہے تو
وقت کی رہ گزر میں تیری
بھول ہے یہ، غبار ہے تو
گلشن_ عشق تیری منزل
گل رخوں پر بہار ہے تو
!راہ میں کیسے سوگیا ہے!
لمحہ بھر کا سوار ہے تو

A Mazaar-e-Maazi
***

Tujh ko dekha tu yaad aya
Taigh-e-haidar ki dhaar he tu
Roye jis par saleem fitrat
Maazi ka wo mazaar he tu
Waqt ki reh-guzar main teri
Bhool he ye, ghubaar he tu
Gulshan-e-ishq teri manzil
Gul-rukhoN par bahaar he tu
Raah main kese sogaya he!
Lamha bhar ka sawaar he tu

************************************************************************

************************************************************************

صاعقہ

آزردہ ہوں اگر، تو ہے اک دوش بھی ضرور
دیکھو، عدو ہے آج بھی سرمست و پرسرور

اسلام کا خزینہء تسلیم زد میں ہے
مسلم ہے منتظر کہ ہو اک صاعقہ ظہور

جانے ہمارا حشر ہو اندوہ ناک کیا
اسوہ جو آپ کا تھا وہ ٹھکرادیا حضور

اب اور امتحان ہمارا ہو کیا خبر
اک سلسلہء حشر نظر آئے دور دور

Saa’Eqa

Aazardo hon agar tu he ik dosh bhi zaror
Dekho, adu he aaj bhi sarmast o pursuroor

Islaam ka khazeena-e-tasleem zad me he
Muslim he muntazir k ho ik saa’Eqa zahoor

Jaane hamara hashr ho andoh-naak kia
Uswa jo aap ka tha wo thukraa dia Huzoor

Ab aor imtihaan hamara ho kia khabar
Ik silsila-e-hashr nazar aaye door door

************************************************************************

************************************************************************

Advertisements
  1. Ali Yousaf Khan

    Shikayat wali nazzm ki jitni daad di jaye kam hay bhai waah

    Like

  2. شکایت
    ***
    مجھے تم سے شکایت ہے
    بس اتنی سی
    جو ملتے ہو تو اپنی ہی سناتے ہو
    کبھی قصہ وفاؤں کا
    کبھی جلوہ اداؤں کا
    کہ تم نے دن گزارا کیسے میرے بن
    شب_تنہائی میں لیں کروٹیں گن گن
    کبھی یہ بھی خیال آیا
    کہ ناطق ہے محب جاناں تمھارا بھی
    محبت ہے زباں اس کی
    اسے الفاظ دینے پر بھی قادر ہے
    اسے خواہش ہے تم سے بس یہ کہنے کی
    “!مجھے تم اچھے لگتے ہو”
    Shikaayat
    ***

    Be intiha khobsorat nazam likhi hay ap nay im impressed 🙂 .

    Like

  3. dua ka Tootaa hua harf, sard Aah main hai
    teri judae ka manzar abhi nigaah main hai

    teray badalnay kay bavasf tujh ko chahaa hai
    yeh aitaraaf bhi shaamil meray gunaah main hai

    azaab deyga to phir mujh-ko Khwaab bhi deyga
    main mutmain mera dil teri panaah main hai

    bikhar chukaa hai magar muskaraa kay miltaa hai
    woh rakh rakhaao abhi meray kaj-kulaah main hai

    jisay bahaar kay mehmaan Khaali chorhgaye
    woh aik makaan abhi tak makeen ki chaah main hai

    yehi woh din thay jab aik doosray ko payaa thaa
    hamaari saalgirah Theek aglay maah main hai

    main bach bhi jaaoon to tanhae maar Daalay gi
    meray kabilay kaa har fard Qatal-gaah main hai!

    (Perveen shakir)

    Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: