بچوں کی نظمیں

بلی کا بچّہ

***

بلی کا بچّہ
ڈوگی کے ڈر سے
تیزی سے بھاگا

بلّی کے ڈر سے
مرغی کے بچے
نکلے تھے گھر سے

کتے کو باندھا
بھیا نے آکر
بلی کو ڈانٹا

بچوں میں بانٹا
کھٹا و میٹھا
دادی نے فانٹا

Billi ka Bacha

***

Billi ka bacha
Dogi k dar say
Taizii say bhaga

Billi ky Dar say
Murghi ky bachay
Niklay thay ghar say

Kuttay ko bandha
Bhayya nay aakar
Billi ko daanta

BachoN main baanta
Khatta o meetha
Daadi nay faanta

****************************************************************************

****************************************************************************

جس چاند پہ پریاں رہتی ہیں
***

جس چاند پہ پریاں رہتی ہیں
اُس چاند کی آؤ بات کریں
یہ چاند جو روز نکلتا ہے
اس چاند کی ہم کیا بات کریں

جس چاند کا قصہ سنتے تھے
سپنوں میں سپنے بنتے تھے
ہم سیر وہیں کی کرتے تھے
اور چاند پہ خوشیاں چنتے تھے

اس چاند کی آؤ بات کریں
جس پر اک بڑھیا رہتی تھی
اک چرخا ساتھ میں ہوتا تھا
وہ چاند پہ تنہا رہتی تھی

اس چاند کی ہم کیا بات کریں
یہ چاند جو روز نکلتا ہے
اس چاند میں کوئی بات نہیں
چہرہ جو روز بدلتا ہے

وہ چاند کبھی بدلا ہی نہیں
باجی جسے ماموں کہتی ہیں
اک ندیا اس پر بہتی ہے
جل پریاں اس میں رہتی ہیں

اس چاند کی آؤ بات کریں
جس چاند پہ پریاں رہتی ہیں

Jis Chaand pe paryaN rehti hein
***

Jis Chaand pe paryaN rehti hein
Us chaand ki aao baat karein
Ye chaand jo roz nikalta he
Is chaand ki hum ki baat karein

Jis chaand ka qissa sunte the
SapnoN mein sapne bunte the
Hum Sair waheeN ki karte the
Aor chand pe khushyaN chunte the

Is chaand ki aao baat karein
Jis par ik buyRhya rehti thi
Ik charkhaa saath mein hota tha
Wo chaand pe tanha rehti thi

Is chaand ki hun kia baat karein
Ye chaand jo roz nikalta hay
Is chaand main koi baat nahi
Chehra jo roz badalta hay

Wo chaand kabhi badla hi nahi
Baaji jise maamoN kehti hein
Ik nadya os par behti hay
Jal paryaaN os main rehti hein

Is chaand ki aao baat karein
Jis chaand pe ParyaaN rehti hein

****************************************************************************

****************************************************************************

بستہ اٹھا، اسکول جا

***

چھٹی کرے، یہ بھول جا
بستہ اٹھا، اسکول جا

پک نک منانے جائیں گے
جب بھی سنے یہ پھول جا

دو ماہ کی ہیں چھٹیاں
گھر کو، اڑا کے دھول، جا

امی لگے جو پوچھنے
اُن کے گلے میں جھول جا

لیکن اے منّے کام کو
اپنا بنا معمول، جا

Basta utha, Iskool jaa

Chutti karay, ye bhool jaa

Basta utha, Iskool jaa

Picnic mananay jaayengay

Jab bhi sunay ye phool jaa

Do maah ki hain chuttiyaN

Ghar ko, Uraa k dhool, jaa

Ammi lagay jo poochnay

Un k galay main jhool jaa

Lekin A munnay kaam ko

Apna bana mamool, jaa

****************************************************************************

****************************************************************************

جب بھی سپنا دیکھیں گے

کتنے سارے سپنے ہیں
جیسے بھی ہیں، اپنے ہیں

سپنوں کی اک دنیا ہے
جیسے چلتی نیّا ہے

بادل بن کر اڑنا ہے
بوند کی صورت گرنا ہے

ڈانٹ پڑے تو رولیں گے
چاند پہ جاکے سو لیں گے

سیپ کہاں ہیں? ڈھونڈیں گے
لہروں سے بھی پوچھیں گے

سیپ میں موتی رہتا ہے
قید کی سختی سہتا ہے

پربت پربت گھومیں گے
قاف کی پریاں ڈھونڈیں گے

جب بھی سپنا دیکھیں گے
دکھ سکھ اپنا کہ دیں گے

Jab bhi sapna dekhaingay

Kitnay saaray sapnay hain

Jesay bhi hain, apnay hain

SapnoN ki ik dunya hay

Jesay chalti nayya hay

baadal ban kar uRna hay

Boond ki soorat girna hay

Daant paray tu ro laingay

Chand pe jaa k so laingay

Seep kahaN hain? dhondaingay

LehroN say poochaingay

Seep main moti rehta hay

Qaid ki sakhti sehta hay

Parbat parbat ghomaingay

Qaaf ki paryaaN dhondaingay

Jab bhi sapna dekhaingay

Dukh sukh apna keh daingay

Advertisements
  1. Lovely poems Rafi sahab! I could understand most words here! Thanks!!

    Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: