Blog Archives

زیست کا اہتمام لب سے ہے


غزل

عنبریں ہے کلام، سب سے ہے
زیست کا اہتمام لب سے ہے

نرم سورج پگھل رہا ہے عبث
سر پہ ٹھہری یہ شام جب سے ہے

اے شب و روز! تم نہیں بے زار؟
زندگی شاد کام کب سے ہے

اس کو سمجھا ہے خود کلامی تو
ہوش میں ہوں، کلام ربّ سے ہے

دن میں خورشید اب جلادے گا
لب پہ جو ابتسام شب سے ہے

وہ مرے اور پاس ہے آیا
دل مرا ہم کلام جب سے ہے

Ghazal

AmbareeN hey kalaam, sab sey hey
Zeest ka ahtamaam lab sey hey

Narm sooraj phigal raha hey abas
Sar pe thehrii ye shaam jab sey hey

Ae shab-o-roz! tum nahi be-zaar?
Zindagi shaad-kaam kab sey hey

Is ko samjha hey khud-kalami tuu
Hosh main hooN, kalam Rabb sey hey

Din main khursheed ab jalaa dega
Lab pe jo ibtisaam shab sey hey

Wo merey aor paas hey aaya
Dil mera ham-kalam jab sey hey

جانے کیا پَدمَنی پہ اُترا ہے


غزل

یار ہے، دُشمنی پہ اُترا ہے
عالم اک سَنسَنی پہ اُترا ہے

آنکھ حیران کوہِ غم کی ہے
عشق جو مُنحَنی پہ اُترا ہے

وقت کے ناخُدا پریشاں ہیں
جانے کیا پَدمَنی پہ اُترا ہے

ہجر حیران اور لب بستہ
وصل ناگفتَنی پہ اُترا ہے

مُسکراہٹ بھی دے نہیں پاتا
قَحْط ایسا غنی پہ اُترا ہے

وہ اَناکیش رِفعَتوں سے اب
حالتِ جاں کنی پہ اُترا ہے

Ghazal

Yaar hay, dushmani pe utra hay
Aalam ik sansanii pe utra hay

 

Aankh heraan koh-e-gham ki hay
Ishq jo munhanii pe utra hay

 

Waqt k naa-khuda pareshaaN haiN
Jaanay kia padmani pe utra hay

 

Hijr hairaan aor lab-basta
Wasl naaguftanii pe utra hay

 

Muskurahat bhi de nahi paata
Qaht aesa ghanii pe utra hay

 

Wo anaa-kaish rifatoN say ab
Haalat-e-jaaN-kanii pe utra hay


%d bloggers like this: