Blog Archives

لباس


♣ لباس ♣

ایک سہانی صبح
سرہانے مرجھایا پھول دیکھا
ملال گھیرتے وقت
ہوا نے بتایا
یہ کل رات تک کِھلا تھا
صرف ایک رات کے سفر سے ہار گیا
میرا دل اس خیال سے دھڑکا
راتوں کا سفر بہت ہلاکت خیز ہوتا ہے
پھول بدن کو اٹھاکر
باغیچے کی کیاری کی مٹی پر
کسی کتبے کی طرح رکھا
پلٹتے سمے
ایک پھول نے مسکراکرکہا
ملول مت ہو
میری مسکراہٹ مستعار لے لو
تازہ دم ہوکر
امید کا نیا لباس پہن لو

 

Libas

Ak suhani subh
Sarhanay murjhaya phool dekha
Malaal ghairtay waqt
Hawa nay bataya
Ye kal raat tak khila tha
Sirf ak raat k safar say haar gaya
Mera dil is khayal say dhaRka
Raton ka safar bohot halakat khaiz hota hay
Phool badan ko utha kar
Bagheechay ki kiyari ki mitti par
Kisi kutbay ki tarah rakha
Palat’tay samay
Aik phool nay muskura kar kaha
Malool mat ho
Meri muskurahat musta’ar lelo
Taza dam hokar
Umeed ka naya libas pehen lo

درد


نظم

درد

درد اک داغ بن گیا دل پر
داغ سے قبل، زخم کی صورت
درد رویا تھا خون کے آنسو
آج کل درد رو نہیں سکتا
آج کا وقت کھو نہیں سکتا
*****
داغ سادہ دکھائی دیتا ہے
درد اس میں بہت ہے پے چیدہ
زندگی اُس سے بڑھ کے پے چیدہ
داغ کو دیکھ زاویے سے الگ
****
داغ جب سوکھنے لگے دل پر
ایک ٹھہراؤ آنے لگتا ہے
درد لہروں کو زیر کرتا ہے
***
موت برحق ہے، موت پے چیدہ
درد کو موت آ نہیں سکتی
**
زندگی بس یہیں دھڑکتی ہے
*

Nazm

Dard

Dard ik daagh ban gaya dil par

Daagh say qabl, Zakhm ki soorat

Dard roya tha Khoon k aansoo

Aaj kal dard ro nahi sakta

Aaj ka waqt kho nahi sakta

*****

Daagh saada dikhayi deta hay

Dard is main boht hay paycheeda

Zindagi os se baRh k paycheeda

Daagh ko daikh zaawiye se alag

****

Daagh jab sookhne lage dil par

Aik thehraao aane lagta hay

Dard lehroN ko zair karta hay

***

Mot bar-haq hay, mot paycheeda

Dard ko mot aa nahi sakti

**

Znidagi bus yaheeN dhaRakti hay

*

پھر کوئی عفریت جنم دے گی مٹی


غزل

بادل کو صحرا کی خموشی کا غم ہے
جتنا کڑکے، برسے، اتنا ہی کم ہے

Baadal ko sehra ki khamoshi ka gham hay

Jitna kaRkay, barsay, utna hi kam hay

وقت دعا ہے، آؤ مل کر مانگیں وہ
جس کی خلش ہے، اپنے اندر جو کم ہے

Waqt e dua hay, Aao mil kar maangeiN wo

Jis ki khalish hay, apne andar jo kam hay

آدم کی اولاد انہیں تب تک مارے
جب تک بے بس اور لاچاروں میں دم ہے

Aadam ki olaad unhein tab tak maaray

Jab tak be-bas aor laacharoN main dam hay

پھر کوئی عفریت جنم دے گی مٹی
کوکھ جلی اک بار ہوئی پھر سے نم ہے

Phir koi ifreet janam degi Mitti

Kokh jali ik baar hui phir say nam hay

خوش رہنے کو سارے جتن کرڈالو تم
کیا سمجھے ہو، یار کا غم تھوڑا غم ہے

Khush rehnay ko saaray jatan kardaalo tum

Kia samjhe ho! yaar ka gham thoRa gham hay

رب نے رکھے ہیں عالم میں لاکھوں رنج
ان کا خمیر اک درد جدائی میں ضم ہے

Rab ne rakhe hein aalam main laakhoN ranj

In ka khameer ik dard e judaayi main zam hay

من کو جلاکر راکھ بنائے، ایسی آگ
عشق ہے، گر شعلے میں زندہ شبنم ہے

Man ko jalaa kar raakh banaaye aesi aag

Ishq hay, gar sholay main zinda shabnam hay

مجھ کو رفیع اب فرق نہیں پڑنے والا
خوش ہے یا نم دیدہ ہے، جو ہمدم ہے

Mujh ko Rafi ab farq nahi paRne wala

Khush hay ya namdeeda hay, jo hamdam hay

%d bloggers like this: