Blog Archives

انساں گزیدہ شہر کے خوابوں کی باس میں


غزل

انجان ریت میں مرے ہاتھوں سے پل گیا
بس ڈوبنے کو تھا کہ اچانک سنبھل گیا

اک تجربہ تھا، اس میں اگانے کنول گیا
آیا ہوا نہ پھر کبھی قسمت کا بَل گیا

نظروں نے کھایا بل وہ، کہ پھر ہٹ نہیں سکیں
خمیازہ تھا ترا، مری آنکھیں بدل گیا

برسوں مرا زمیں سے عقیدہ جڑا رہا
کج رو کی اک ادا سے جڑوں سے اچھل گیا

ہم لوگ اپنے خول میں سمٹے ہیں اس قدر
لمحوں کا سایہ دھوپ میں جلنے نکل گیا

اک شوق خود نمائی نے اکسا دیا اُسے
فن پارہ تھا مرا، مرے فن کو کچل گیا

میری ریاضتوں نے وفا کو جِلا تو دی
اُس بے وفا کے سامنے سارا عمل گیا

اے رقص جاں تجھے تو خبر ہے وجود کی
کیسا خلا تھا میرا ہنر جو نگل گیا

تپتی زمیں پہ پیاس سے آنکھیں ابل پڑیں
ظالم کو کتنا رنج تھا، ان کو مسل گیا

پہچان کی ہوس نے کیا اتنا نامراد
جبل مراد پر کوئی رکھ کر غزل گیا

انساں گزیدہ شہر کے خوابوں کی باس میں
اس طور بے کلی تھی، مرا جی مچل گیا

Ghazal

Read the rest of this entry

خود کش محبت


نظم

خود کش محبت

عشق کے در پہ پاؤں دھرا
یہ تھی میری خطا
کیا پتا تھا ملے گی مجھے اک انوکھی سزا
اور جنموں پہ پھیلا رہے گا یہی سلسلہ
وہ تھا محبوب یا کوئی خود کش حسیں
جس نے میرے بدن ہی نہیں
روح کے بھی سبھی چیتھڑے
یوں اڑائے کہ پھر ریت اور اوس میں
اور مرے جسم اور روح کے درمیاں
اک ذرا فرق کرنا بھی مشکل ہوا
میں اسے اپنے ہی چھیتڑوں میں ابھر کر نکل آنے والی ہر اک آنکھ سے
اور ہر چشم حیران سے
دیکھتا رہ گیا
سوچتا رہ گیا
اور جب میرے جسم اور جاں کی ہر اک آنکھ مرنے لگی
اپنے محبوب کو ڈھونڈتا رہ گیا
جانے کتنی تھیں صدیاں جو گزریں اسی حالت نیست میں
ساری دنیا سے منھ موڑ کر ایک لیلا چلی
ڈھونڈ کر میرے جسم اور جاں کے سبھی چھیتڑے
چاہتوں کے حسیں طشت میں رکھ دیے
مجھ کو پھر لے کے آئی نئی زیست میں
پھر اڑانے مرے جسم اور جان کے چھیتڑے
اپنی خود کش محبت کے اک وار سے۔۔۔۔

Nazm

Khud-kush Muhabbat

Ishq k dar pe paaoN dhara

ye thi meri khataa

kia pata tha milegi mujhay ik anokhi saza

Aor janmoN pe phela rahega yahi silsila

Wo tha mehboob ya koi khud-kush haseeN

Jis ne meray badan hi nahi

Rooh k bhi sabhi cheetRay

YuN uRaaye k phir rait aor Os main

Aor meray jism aor Rooh k darmiaaN

Ik zara farq karna bhi mushkil hua

Main osay apne hi cheetRoN main ubhar kar nikal aane wali har ik aankh say

Aor har chashm e heraan say

Dekhta reh gaya

Sochta reh gaya

Aor jab meray jism aor jaaN ki har ik aankh marne lagi

Apne mehboob ko dhoondta reh gaya

Jaane kitni thieN sadyaN jo guzreeN isi haalat e Neest main

Saari dunya say moo moR kar aik laila chali

Dhoond kar meray jism aor jaaN k sabhi cheetRay

ChaahatoN k haseeN tasht main rakh diye

Phir sabhi apne khooN say musaffa kiye

Aor sub see diye

Mujh ko phir le k aayi nayi zeest main

Phir uRaane meray jism aor jaan k cheetRay

Apni khud-kush muhabbat k ik waar say…!

%d bloggers like this: