Blog Archives

زیست کا اہتمام لب سے ہے


غزل

عنبریں ہے کلام، سب سے ہے
زیست کا اہتمام لب سے ہے

نرم سورج پگھل رہا ہے عبث
سر پہ ٹھہری یہ شام جب سے ہے

اے شب و روز! تم نہیں بے زار؟
زندگی شاد کام کب سے ہے

اس کو سمجھا ہے خود کلامی تو
ہوش میں ہوں، کلام ربّ سے ہے

دن میں خورشید اب جلادے گا
لب پہ جو ابتسام شب سے ہے

وہ مرے اور پاس ہے آیا
دل مرا ہم کلام جب سے ہے

Ghazal

AmbareeN hey kalaam, sab sey hey
Zeest ka ahtamaam lab sey hey

Narm sooraj phigal raha hey abas
Sar pe thehrii ye shaam jab sey hey

Ae shab-o-roz! tum nahi be-zaar?
Zindagi shaad-kaam kab sey hey

Is ko samjha hey khud-kalami tuu
Hosh main hooN, kalam Rabb sey hey

Din main khursheed ab jalaa dega
Lab pe jo ibtisaam shab sey hey

Wo merey aor paas hey aaya
Dil mera ham-kalam jab sey hey

تیرے پہلو میں شام کرتا ہوں


غزل

تھک کہ جس دم قیام کرتا ہوں
تیرے پہلو میں شام کرتا ہوں

جس نے مجھ کو زمین سونپی ہے
زندگی اس کے نام کرتا ہوں

میرے آبا رہے سدا پُرامن
اس لیے میں بھی کام کرتا ہوں

دفن کرتا ہوں، سانس لیتا ہوں
حسرتیں یوں تمام کرتا ہوں

میرے منھ میں زباں نہیں مرے دوست
میں قلم سے کلام کرتا ہوں

Ghazal

Thak k jis dam qayaam karta hoN
Tiray pehloo main shaam karta hoN

Jis nay mujh ko zameen soNpi hay
zindagi os k naam karta hoN

Mairay aabaa rahay sada purAmn
Isliye main bhi kaam karta hoN

Dafn karta hon, saans leta hoN
HasrataiN yuN tamaam karta hoN

Mairay moo main zubaaN nahi miray dost
Main qalam say kalaam karta hoN

Ghazal By: Rafiullah Mian

Ghazal By: Rafiullah Mian

جس عہد میں پڑا ہوں فقط اس کا دوش ہے


طرحی غزل


رشتے سبھی لہو ہوں جو مائیں لہو لہو

بھائی لہو لہو ہوں تو بہنیں لہو لہو

Rishtay sabhi laho, hoN jo maayiN luho luho

Bhai laho laho ho tu behnaiN luho luho

اُس شہر دل خراش کی شامیں لہو لہو

جس کی زمیں پہ پڑتی ہوں کرنیں لہو لہو

Os shehr e dil kharash ki shamaiN luho luho

Jis ki zameeN pe paRti hoN kirnain luho luho

جس عہد میں پڑا ہوں فقط اس کا دوش ہے

کم گو کی تجھ کو لگتی ہیں باتیں لہو لہو

Jis ehd main paRa hoN fiqat os ka dosh hay

Kam-go ki tujh ko lagti hein bataiN luho luho

پلکوں میں بس گئی ہے کسی کی نگاہ ناز

“کب دیکھیے کہ ہوں میری آنکھیں لہو لہو”

PalkoN main bas gayi hay kisi ki nigaah e naaz

“Kab dekhiye k hoN meri aankhien luho luho”

طوفان میں اڑے گی سماعت سنو اے دوست

ہوجائیں گی مری جو ندائیں لہو لہو

Toofan main uRegi sama’at suno a dost!

Hojayingi meri jo nidaayiN luho luho

شاید کہ دل میں صدق نہیں ہے ابھی تلک

ہر سمت ہورہی ہیں دعائیں لہو لہو

Shayad k dil main sadq nahi hay abhi talak

Har simt horahi hein duayiN luho luho

کس طرح میں خیال کروں امن کا یہاں

ارمان میرے، بن کے جو برسیں لہو لہو

Kis tarh main khayal karoN amn ka yahaN

Armaan meray ban k jo barsaiN luho luho

%d bloggers like this: