Blog Archives

زیست کا اہتمام لب سے ہے


غزل

عنبریں ہے کلام، سب سے ہے
زیست کا اہتمام لب سے ہے

نرم سورج پگھل رہا ہے عبث
سر پہ ٹھہری یہ شام جب سے ہے

اے شب و روز! تم نہیں بے زار؟
زندگی شاد کام کب سے ہے

اس کو سمجھا ہے خود کلامی تو
ہوش میں ہوں، کلام ربّ سے ہے

دن میں خورشید اب جلادے گا
لب پہ جو ابتسام شب سے ہے

وہ مرے اور پاس ہے آیا
دل مرا ہم کلام جب سے ہے

Ghazal

AmbareeN hey kalaam, sab sey hey
Zeest ka ahtamaam lab sey hey

Narm sooraj phigal raha hey abas
Sar pe thehrii ye shaam jab sey hey

Ae shab-o-roz! tum nahi be-zaar?
Zindagi shaad-kaam kab sey hey

Is ko samjha hey khud-kalami tuu
Hosh main hooN, kalam Rabb sey hey

Din main khursheed ab jalaa dega
Lab pe jo ibtisaam shab sey hey

Wo merey aor paas hey aaya
Dil mera ham-kalam jab sey hey

زمیں کی کشکول میں دعا ہے


غزل

بلند کتنی تری عطا ہے
حقیر کتنی مری وفا ہے

میں جان قربان تجھ پہ کردوں
خیال کتنا یہ جاں فزا ہے

یہ تیری میری محبتوں کا
خمار کتنا خرد کشا ہے

حدِ نشاطِ وصال کیا ہو
ذرا سی دوری بڑی سزا ہے

جنوں ہے جھوٹ اور جنوں بغاوت
یہ میرے جاناں کا فیصلہ ہے

مری شب ماہ تاب کی خیر
تمھارا سورج تو ڈھل چکا ہے

جو کھل رہے ہیں در آسماں میں
زمیں کی کشکول میں دعا ہے

یہ فرق ہے کہ گلی وہی ہے
ضمیر اپنا بھٹک رہا ہے

مجھے محبت تلاشنے دو
مریض دل کی یہی دوا ہے

Ghazal

Buland kitni tri ata hay
Haqeer kitni mri wafa hay

Main jaan qurbaan tujh pe kardooN
Khayal kitna ye jaaN-faza hay

Ye tairi mairi muhabbatoN ka
Khumaar kitna khirad-kusha hay

Had-e-nishat-e-wisaal kia ho
Zara si doori baRi saza hay

JunooN hay jhoot aor junoo baghawat
Ye meray jaanaN ka faisla hay

Mri shab-e-maahtaab ki khair
Tumhara sooraj tu dhal chuka hay

Jo khul rahay hain dar aasmaaN main
ZameeN ki kashkol main dua hay

Ye farq hay k gali wahi hay
Zameer apna bhatak raha hay

Mujhe muhabbat talashnay do
Mareez-e-dil ki yahi dawa hay

انساں گزیدہ شہر کے خوابوں کی باس میں


غزل

انجان ریت میں مرے ہاتھوں سے پل گیا
بس ڈوبنے کو تھا کہ اچانک سنبھل گیا

اک تجربہ تھا، اس میں اگانے کنول گیا
آیا ہوا نہ پھر کبھی قسمت کا بَل گیا

نظروں نے کھایا بل وہ، کہ پھر ہٹ نہیں سکیں
خمیازہ تھا ترا، مری آنکھیں بدل گیا

برسوں مرا زمیں سے عقیدہ جڑا رہا
کج رو کی اک ادا سے جڑوں سے اچھل گیا

ہم لوگ اپنے خول میں سمٹے ہیں اس قدر
لمحوں کا سایہ دھوپ میں جلنے نکل گیا

اک شوق خود نمائی نے اکسا دیا اُسے
فن پارہ تھا مرا، مرے فن کو کچل گیا

میری ریاضتوں نے وفا کو جِلا تو دی
اُس بے وفا کے سامنے سارا عمل گیا

اے رقص جاں تجھے تو خبر ہے وجود کی
کیسا خلا تھا میرا ہنر جو نگل گیا

تپتی زمیں پہ پیاس سے آنکھیں ابل پڑیں
ظالم کو کتنا رنج تھا، ان کو مسل گیا

پہچان کی ہوس نے کیا اتنا نامراد
جبل مراد پر کوئی رکھ کر غزل گیا

انساں گزیدہ شہر کے خوابوں کی باس میں
اس طور بے کلی تھی، مرا جی مچل گیا

Ghazal

Read the rest of this entry

وجودِ شوق میں اقلیم غم اسی لیے ہے


غزل

ترے دمن میں تو  یارائے آب جو ہی نہیں
سمندروں میں سمٹنے کی آرزو ہی نہیں

وجودِ شوق میں اقلیم غم اسی لیے ہے
نہ جانے کتنے ہی عالم ہیں، ایک تو ہی نہیں

یہ رات جن سے مری، شعلہ سا بنی ہوئی ہے
یہ آنسوؤں کے بھی یاقوت ہیں، لہو ہی نہیں

تلاش کس کی ہے بے چین ہیں جو سناٹے
رگوں میں تیرتے رہتے ہیں کوبہ کو ہی نہیں

میں آج بے سروساماں پڑا ہوں در پہ ترے
کلیجہ چیر کے رکھ دے، وہ ہاؤ ہو ہی نہیں

جو مجھ کو چاہے گا، آئے گا خود ہی کٹیا میں
کسی کا ہاتھ پکڑنے کی مجھ میں خو ہی نہیں

Ghazal

Teray daman main tu yaraay-e-aab-joo hi nahi
SamundaroN main simatne ki aarzoo hi nahi

 

Wujood-e-shoq main Iqleem-e-gham isi liye hey
Na jaane kitne hi aalam hain, ak tuu hi nahi

Ye raat jin say meri, shula saa bani hoi hey
Ye aansuooN k bhi yaaqoot hain, luhoo hi nahi

Talash kis ki hay baichain hain jo sannatay

Ragon main tairte rehte hain koobakoo hi nahi

Main aaj bay-sar-o-saamaaN paRa hoN dar pe terey
Kaleeja cheer k rakh day, wo haao-hoo hi nahi

Jo mujh ko chahega, aayega khud hi Kutyaa main
Kisi ka haath pakaRne ki mujh main khuu hi nahi

تشنہ ہونٹوں سے پیاس پی رہا ہوں


تشنہ ہونٹوں سے پیاس پی رہا ہوں
زندگی خود میں ایسی جی رہا ہوں

بیج بونے کو آئے گی خلقت
میں تو بس شق زمین سی رہا ہوں

Tishna hontoN say piyas pee raha hoN

Zindagi khud main, aesii jee raha hoN

Beej bo-nay ko aayegi khalqat

Main tu bus Shaq zameen see raha hoN

 

 

 

%d bloggers like this: