Blog Archives

زیست کا اہتمام لب سے ہے


غزل

عنبریں ہے کلام، سب سے ہے
زیست کا اہتمام لب سے ہے

نرم سورج پگھل رہا ہے عبث
سر پہ ٹھہری یہ شام جب سے ہے

اے شب و روز! تم نہیں بے زار؟
زندگی شاد کام کب سے ہے

اس کو سمجھا ہے خود کلامی تو
ہوش میں ہوں، کلام ربّ سے ہے

دن میں خورشید اب جلادے گا
لب پہ جو ابتسام شب سے ہے

وہ مرے اور پاس ہے آیا
دل مرا ہم کلام جب سے ہے

Ghazal

AmbareeN hey kalaam, sab sey hey
Zeest ka ahtamaam lab sey hey

Narm sooraj phigal raha hey abas
Sar pe thehrii ye shaam jab sey hey

Ae shab-o-roz! tum nahi be-zaar?
Zindagi shaad-kaam kab sey hey

Is ko samjha hey khud-kalami tuu
Hosh main hooN, kalam Rabb sey hey

Din main khursheed ab jalaa dega
Lab pe jo ibtisaam shab sey hey

Wo merey aor paas hey aaya
Dil mera ham-kalam jab sey hey

اپنی دنیا سے تو میں، پارہ پارہ اٹھتا ہوں


غزل

دریا دریا بہتا ہوں، قطرہ قطرہ اٹھتا ہوں
صدیاں صدیاں بیت چکیں، لمحہ لمحہ اٹھتا ہوں

آکر دیکھو کٹیا میں، دنیا کیسی سمٹی ہے
تم نے دیکھا کیسے میں، جلوہ جلوہ اٹھتا ہوں

نسلوں کا ہے بھاری بوجھ، منزل منزل جانا ہے
پیری ہے یا دہشت ہے، لرزہ لرزہ اٹھتا ہوں

مولا تیری دنیا میں، خود کو پورا دیکھوں گا
اپنی دنیا سے تو میں، پارہ پارہ اٹھتا ہوں

کہساروں پر جاکر میں غم کی راتیں کاٹوں گا
دیکھو، اب تو جھیلوں پر، ہالہ ہالہ اٹھتا ہوں

Ghazal

Darya darya behta hoN, qatra qatra uth’ta hoN

Sadiya sadiyan beet chukeeN, lamha lamha uth’ta hoN

Aakar dekho kuTyaa main, dunya kesi simti hay

Tum ne dekha kese main jalwa jalwa uth’ta hoN

NasloN ka hay bhaari bojh, manzil manzil jana hay

Peeri hay ya dahshat hay, larza larza uth’ta hoN

Mola tairii dunya main khud ko poora dekhonga

Apni dunya say tu main paara paara uth’ta hoN

KuhsaaroN par jakar main gham ki raatain katonga

Daikho, ab tu jheeloN par hala hala uth’ta hoN

بانجھ آنکھیں


A long free verse poem published in literary magazine quarterly Ijra – October to December 2013

 

بانجھ آنکھیں

جب بے نور آنکھوں کی پتلیاں
روشن ہونے لگتی ہیں
تو اندھی لڑکی پر
لرزہ خیز وارداتوں کے لیے مشہور
مانوس گلی میں لرزتے، پھیلتے
اَن دیکھے سایوں کا رمز کھلتا ہے
٭٭
قاتل مطمئن ہے
کہ اس نے گڈمڈ سایوں کے بیچ
سرخ ہوتا سایہ نہیں دیکھا ہے
لیکن اندھی لڑکی
ساری گواہیاں مردہ اعصاب کے ذریعے
دماغ کے اس خانے میں منتقل کرچکی ہے
جو لاچاری کے فلسفے سے مملو
ان گنت کتابوں پر مشتمل
لائبریری کا کام کرتا ہے
٭٭

اس نے ایک بار چمکتی سیاہی سے لکھا
جب تک نہر سے سپلائی جاری نہ ہو
واش بیسن کے اوپر اوندھا لٹکا
سنہری نل لاچاری کی تصویر بنا رہے گا
تم لوگوں نے انسانوں کے اذہان کو بھی
اچھی باتوں کی سپلائی بند کر رکھی ہے
اور معاشرہ لاچاری کی تصویر بن چکا ہے
معذوری کے بارے اس نے لکھا
اگر میری بصارت کی طرح
ہاتھ پیر اور دوسرے اعضا
چھین لیے جائیں
تب بھی چاندی کی قلعی میں لپٹا
معذوری کا تمغہ سینے پر سجانے نہیں دوں گی
تم لوگ اپنی اپنی ڈکشنریوں میں موجود
ہزاروں گم راہ کن معانی درست کرکے
لاکھوں انسانوں کو معذور ہونے سے بچاسکتے ہو
وہ لکھتی ہے
معذور تو وہ ہے
جو اچھی بات سوچنے سے قاصر ہے

٭٭

اس کی تیز سماعت
لفظ فلسفے سے اوّل اوّل آشنا ہوئی
تو اسے بہت اچھا لگا
ممکن ہے اس سمے
صوتی جمالیات کا کوئی غیر مرئی طائفہ
—اس مقام سے گزرا ہو

اور اسے محسوس ہوا ہو
کہ بالذات کسی جمالیاتی عنصر سے خالی
یہ لفظ اُسے اسی طرح پکار رہا ہے
جس طرح
اس کے سفید و سیاہ خوابوں میں
عجیب و غریب چیزیں
جنہیں بیان کرنے کے لیےاُسے
لغت اپنا کوئی لفظ مستعار دینے پرتیار نہیں ہوتی
اس نے رنگوں کے بارے سنا ضرور ہے
مگر وہ
اَن دیکھی اور اَن چھوئی چیز
اور اس کے دماغ میں موجود اجنبی تصور کے مابین
— کوئی ربط کس طرح پیدا کرے

چناں چہ اس سے قبل کے شورِ جرس
اسے کسی غیر مرئی بھنور
میں الجھادیتی
کسی کنواری اونٹنی کے گلے میں بندھی
گھنٹی کی آواز نے
اس کی سماعت کا نظام اچک کر
صحراؤں کی بین کرتی خاک کےنالوں سے
مانوس کردیا

وہ اپنی کنواری ڈکشنری کے لیے
بصری صحرائی الفاظ کا ایک ذخیرہ پاکر
بہت خوش ہوئی

اس نے کبھی کچھ نہیں دیکھا
لیکن اس کے ‘بصارت گھر’ کی پچھلی گلی سے
گزرنے والے مردہ راستے
نہ جانے کیسے اور کہاں سے
بہت ساری تصاویر
کسی سیٹلائٹ کی طرح کھینچ کر
پوری تفصیل کے ساتھ
لائبریری کا حصہ بنادیتے ہیں
٭٭
اندھی لڑکی اور”
قوت بصارت میں کوئی نسبت نہیں
جیسے صحرا میں اُگنے والی کھجور
اور اس کے گھر کے آنگن کے لیمو میں
”کوئی نسبت تخلیق نہیں کی جاسکتی
اس حقیقت کاادراک

صرف اندھی لڑکی تک محدود ہے
کہ اس کے موجود نادیدہ وجود کی کائنات میں
ہر دو کُرّوں کے درمیان
تخلیقی جوہر تیرتا رہتا ہے
کرب کے لمحات میں وہ اس جوہر سے
کُرّے تخلیق کرتی رہتی ہے
اندھی لڑکی کو محسوس ہوتا ہے
کہ اس کی گردن میں کنواری گھنٹی بندھی ہے
جس کی آواز اسے مقدس زمینوں
کی سیر کراکر لاتی ہے
اور وہ ہر بار اپنے اندر ایک نئے وجود
کی سرسراہٹ پاتی ہے
اس کی ریتیلی آنکھوں میں
اگرچہ ہر قوت کی لہر دم توڑ چکی ہے
لیکن دور دور تک پھیلی
سنگ لاخ اور سرخ زمینوں سے گزرتے ہوئے
اس نے وہ کچھ دیکھ رکھا ہے
جسے وہ کتاب کرلے تو
اپنے لکھے ہوئے کو
— خود اساطیری داستانیں کہہ کر مسکرادے

تذبذب میں پڑا ہوا آئینہ
اس کی مسکان اور
لیمو چاٹنے کے بعد میچی ہوئی آنکھوں میں
— زیادہ بڑی جان لیوا کا فیصلہ نہیں کرپاتا

لیمو کی کھٹاس
مرمر کی سلوں پر
ہمیشہ ادھورے سپنوں کے نقوش ڈالتی ہے
جب وہ انہیں مکمل کرنے کے لیے
مانوس گلیوں میں نکلتی ہے
تو اس کی مسکراہٹ
آئینے کی بے خبری پر روتی ہے
٭٭

Read the rest of this entry

سفید و سیاہ


سفید و سیاہ

***

تم خود کو جدیدتر کہتے ہو
مجھے تمھاری ہر ادا میں
ماضی کی کالی سفید دھاریاں نظر آتی ہیں
تم نظارے میں اس طرح محو ہو
کہ عقل کے روشن دروازے کھول نہیں پائے
میں نے جو دیکھا
اسے ایک التباس سمجھا
میرا قد اتنا چھوٹا ہے کہ
مجھ تک شبیہات پہنچنے میں
صدیاں گزرجاتی ہیں
ہر نیا آنے والا سایہ
میری چشم حیرت پر خنداں ہے

Sufaid-o-Siyaah

Tum khud ko jadeed-tar kehtay ho
Mujhey tumhari har ada main
Maazi ki kaali-sufaid dhaariyaaN nazar aati hain
Tum nazaaray main is tarah mehw ho
K aql k roshan darwazay khol nahi paatay
Main nay jo daikha
Osay ak iltibaas samjha
Mera qad itna chota hay k
Mujh tak shabeehaat pohnchnay main
SadiyaaN guzar jaati hain
Har naya anay wala saya
Meri chashm-e-hairat par KhandaaN hay

لوگ اس گلی کے پھر، دیر تک تڑپتے ہیں


Aek arsay bad Ghazal k sath hazir hoa hoN!

غزل

خواب میں نکل کر تم، کیا تلاش کرتے ہو
روشنی میں آکے پھر، لمحہ لمحہ مرتے ہو

رات پر عجب سکتہ، اور تمھاری تڑپن یہ
کس قدر تحرّک کی زندگی بسرتے ہو

من میں پھیلے اندھیارے، راکھ ہوں گے کب جل کر
آگ کے سمندر میں روز تم اترتے ہو

لوگ اس گلی کے پھر، دیر تک تڑپتے ہیں
دل میں درد لے کر تم، واں سے جب گزرتے ہو

دل، کہ پالیا آخر، تم نے مدعا اپنا
قلزم محبت میں ڈوبتے ابھرتے ہو

آدمی ٹھہر جاؤ تم کسی تو حالت پر
اِس گھڑی بکھرتے ہو، اُس گھڑی سنورتے ہو

دستِ آسماں کو سوچ، گود اس زمیں کی سوچ
جب بھی تم اجڑتے ہو، جب بھی تم نکھرتے ہو

Ghazal

Khwab main nikal kar tum, kia talash kartay ho
Roshni main aa kay phir, lamha lamha martay ho

Raat par ajab sakta, aor tumhari taRpan ye
Kis qadar taharruk ki zindagi basartay ho

Man main phailay andhyaaray, raakh hongay kab jal kar
Aag k samundar main roz tum utartay ho

Log os gali k phir, dair tak taRaptay hain
Dil main dard lay kar tum, waaN say jab guzartay ho

Dil, k paalia aakhir, tum nay mudda’aa apna
Qulzim-e-muhabbat main doobtay ubhartay ho

Aadmi theher jaao, tum kisi tu haalat par
Is ghaRi bikhartay ho, us gaRi sanwartay ho

Dast-e-aasmaaN ko soch, goud is zameeN ki soch
Jab bhi tum ujaRartay ho, jab bhi tum nikhartay ho

سونامی


دسمبر 26 2004 کو بحر ہند میں آنے والے سونامی کے نو برس مکمل ہونے پر

سونامی

نو برس ہوگئے ہیں
اے ہمارے پیارے سمندر
تجھ سے کوئی گلہ نہیں
لیکن تو جس طرح ہمیں پیارا ہے
یہ زمین بھی اسی طرح پیاری ہے
اور کوئی شک نہیں
اس زمین پر رہنے والے
سب سے زیادہ پیارے ہیں
جو آج بھی بے گھری کا دکھ
خوف ناک لہروں کی
ہولناک یادوں کے ساتھ
جَھیل رہے ہیں
اسی زمین پر
تمام آسائشوں کےساتھ
صبح سے شام کرنے والے طاقت ور لوگ
تاریخ کے تسلسل میں
آج بھی عبرت پکڑنے سے
معذور نظر آتے ہیں
اور وقت کی بے نیاز آنکھ
مٹی اور پانی میں رُلتے مناظر
ابدی یادداشت میں
تسلسل کے ساتھ محفوظ کررہی ہے

A free verse poem on marking 9 years of an undersea megathrust earthquake in Indian Ocean on 26 December 2004

Tsunami

Nao baras hogaye hain  Read the rest of this entry

ہمارے درمیاں


Picture it and write

ہمارے درمیاں

تم

تنگ و تاریک اور شکستہ گلی سے
روز گزر تے ہو
اور سورج تلے جلتی
اُسی پرانی بستی میں جانکلتے ہو
تمھاری زندگی
اسی انتہائی تجربے پر موقوف ہے
اور میں اس امید پر جیتا ہوں
کہ ایک دن تم
اپنے وجود کے اندر دور تک بچھی
کالی پگڈنڈی کو
کسی روشن خیال سے اُجال دوگے

Hamaray darmiyaN

Tum
Tang-o-taareek aor shikasta gali say
Roz guzartay ho
Aor sooraj talay jalti
Osi purani bastii main jaa nikaltay ho
Tumhari zindagi
Isi intihayi tajarbay par moqoof hay
Aor main is umeed par jeeta hoN
K aek din tum
Apnay wajood k andar door tak bichii
Kaali pagdandii ko
Kisi roshan Khayal say ujaal dogay!

اے انسان


اے انسان

(خود سے ہمکلامی کی حالت میں)

نشانیوں سے بھرا ہوا ہے
یہ سارا سنسار
ایک دن جو ہوا تھا محبوس پتھروں میں
میں لطفِ احساس ہمکلامی سے جُھک رہا تھا
وجود تیرا نشانیوں میں بڑی نشانی
تو سوچتا ہے
ہے تو بھی صانع
مگر زمیں پر تری ہی مانند
پھر رہے ہیں بہت سے خالق
تری یہ کثرت بتا رہی ہے
کہ ایک مستور اور برتر ہے ذہن اعلا
تجھے جو معدوم ہونے دیتا نہیں زمیں پر
زمیں ہو یا آسماں کے طبقے
بنی ہے جوڑی ہر ایک شے کی
تجھے نہ رہنے دیا ہے تنہا

***

تو چلتے پھرتے وجود کو
اس زمین ِ بے روح پر گماں کر
کہ جس کے اجزا ہیں غیر نامی
اور اس کی زرخیز سطح ِ اولا پہ اک بچھونا
نمو ہے یاں محو استراحت
حیات کی تجھ میں دور تک ہے
جڑوں کا اک سلسلہ رواں
اور
دروں سے چشموں کا پھوٹنا
جیسے زندگی مسکراتی جائے
مُحافظت پر ہے تیرے باطن کی، تیرا ظاہر
جہاں میں روئیدگی کی خاطر
یہ دوسرے نامیوں سے مل کر
مگن ہے صدیوں سے چارہ سازی میں
تیرے اندر کھجور کے باغ سرسراتے ہیں
باغ انگور لہلہاتے ہیں
اور جاری یہ سلسلہ ہے

A Insaan!

(Khud say ham-kalami ki haalat main)

NishanioN say bhara hua hay

Ye sara sansaar
Ak din jo hua tha mahboos pattharoN main
Main lutf-e-ahsas-e-hamkalami say jhuk raha tha
Wujood taira nishanioN main baRi nishani
Tu sochta hay
Hay tu bhi saan’i
Magar zameeN par teri hi maanind
Phir rahay hain bohot say khaliq
Teri ye kasrat bata rahi hay
K ak mastoor aor bartar hay zehn-e-ala
Tujhay jo madoom honay deta nahi hay zameeN par
ZameeN ho ya aasmaN k tabqay
Bani hay joRi har ak shay ki
Tujhay na rehnay dia hay tanha

***

Tu chaltay phirtay wujood ko
Is zameen-e-bay rooh par gumaaN kar
K jis k ajzaa hain ghair naami
Aor is ki zarkhaiz sath-e-oola pe ik bichona
Namoo hay yaaN mahv-e-istiraahat
Hayaat ki tujh main door tak hay
JaRoN ka ik silsila rawaaN
Aor
DarooN say chashmoN ka phootna
Jesay zindagi muhkurati jaaye
Muhafazat par hay teray baatin ki, taira zaahir
JahaN main royedigi ki khaatir
Ye dosray naamioN say mil kar
Magan hay sadioN say chara saazi main
Tairay andar khajoor k baagh sarsaratay hain
Baagh-e-angoor lahlahatay hain
Aor jaari ye silsila hay!

کرب میں تُو ہی جھلملاتا ہے


کرب میں تُو ہی جھلملاتا ہے
میری آنکھوں کی روشنی ہے گواہ

Karb main tuu hi jhilmilaata hay
Mairi aankhoN ki roshni hay gawaah

لُہو کی لہر


قطعہ

لُہو کی لہر اُچھلنے سے رہی
وہ مجھ سے مثلِ رگِ برف ملا

کُریدی راکھ محبت کی رفیع
تو صرف سوختہ اک حرف ملا

Luhoo ki lehr uchalnay say rahi
Wo mujh say misl-e-rab-e-barf mila

Kuraidee raakh Muhabbat ki Rafii
Tu sirf sokhta ik harf mila

%d bloggers like this: