Blog Archives

وجودِ شوق میں اقلیم غم اسی لیے ہے


غزل

ترے دمن میں تو  یارائے آب جو ہی نہیں
سمندروں میں سمٹنے کی آرزو ہی نہیں

وجودِ شوق میں اقلیم غم اسی لیے ہے
نہ جانے کتنے ہی عالم ہیں، ایک تو ہی نہیں

یہ رات جن سے مری، شعلہ سا بنی ہوئی ہے
یہ آنسوؤں کے بھی یاقوت ہیں، لہو ہی نہیں

تلاش کس کی ہے بے چین ہیں جو سناٹے
رگوں میں تیرتے رہتے ہیں کوبہ کو ہی نہیں

میں آج بے سروساماں پڑا ہوں در پہ ترے
کلیجہ چیر کے رکھ دے، وہ ہاؤ ہو ہی نہیں

جو مجھ کو چاہے گا، آئے گا خود ہی کٹیا میں
کسی کا ہاتھ پکڑنے کی مجھ میں خو ہی نہیں

Ghazal

Teray daman main tu yaraay-e-aab-joo hi nahi
SamundaroN main simatne ki aarzoo hi nahi

 

Wujood-e-shoq main Iqleem-e-gham isi liye hey
Na jaane kitne hi aalam hain, ak tuu hi nahi

Ye raat jin say meri, shula saa bani hoi hey
Ye aansuooN k bhi yaaqoot hain, luhoo hi nahi

Talash kis ki hay baichain hain jo sannatay

Ragon main tairte rehte hain koobakoo hi nahi

Main aaj bay-sar-o-saamaaN paRa hoN dar pe terey
Kaleeja cheer k rakh day, wo haao-hoo hi nahi

Jo mujh ko chahega, aayega khud hi Kutyaa main
Kisi ka haath pakaRne ki mujh main khuu hi nahi

%d bloggers like this: