Blog Archives

زمیں کی کشکول میں دعا ہے


غزل

بلند کتنی تری عطا ہے
حقیر کتنی مری وفا ہے

میں جان قربان تجھ پہ کردوں
خیال کتنا یہ جاں فزا ہے

یہ تیری میری محبتوں کا
خمار کتنا خرد کشا ہے

حدِ نشاطِ وصال کیا ہو
ذرا سی دوری بڑی سزا ہے

جنوں ہے جھوٹ اور جنوں بغاوت
یہ میرے جاناں کا فیصلہ ہے

مری شب ماہ تاب کی خیر
تمھارا سورج تو ڈھل چکا ہے

جو کھل رہے ہیں در آسماں میں
زمیں کی کشکول میں دعا ہے

یہ فرق ہے کہ گلی وہی ہے
ضمیر اپنا بھٹک رہا ہے

مجھے محبت تلاشنے دو
مریض دل کی یہی دوا ہے

Ghazal

Buland kitni tri ata hay
Haqeer kitni mri wafa hay

Main jaan qurbaan tujh pe kardooN
Khayal kitna ye jaaN-faza hay

Ye tairi mairi muhabbatoN ka
Khumaar kitna khirad-kusha hay

Had-e-nishat-e-wisaal kia ho
Zara si doori baRi saza hay

JunooN hay jhoot aor junoo baghawat
Ye meray jaanaN ka faisla hay

Mri shab-e-maahtaab ki khair
Tumhara sooraj tu dhal chuka hay

Jo khul rahay hain dar aasmaaN main
ZameeN ki kashkol main dua hay

Ye farq hay k gali wahi hay
Zameer apna bhatak raha hay

Mujhe muhabbat talashnay do
Mareez-e-dil ki yahi dawa hay

تیرے پہلو میں شام کرتا ہوں


غزل

تھک کہ جس دم قیام کرتا ہوں
تیرے پہلو میں شام کرتا ہوں

جس نے مجھ کو زمین سونپی ہے
زندگی اس کے نام کرتا ہوں

میرے آبا رہے سدا پُرامن
اس لیے میں بھی کام کرتا ہوں

دفن کرتا ہوں، سانس لیتا ہوں
حسرتیں یوں تمام کرتا ہوں

میرے منھ میں زباں نہیں مرے دوست
میں قلم سے کلام کرتا ہوں

Ghazal

Thak k jis dam qayaam karta hoN
Tiray pehloo main shaam karta hoN

Jis nay mujh ko zameen soNpi hay
zindagi os k naam karta hoN

Mairay aabaa rahay sada purAmn
Isliye main bhi kaam karta hoN

Dafn karta hon, saans leta hoN
HasrataiN yuN tamaam karta hoN

Mairay moo main zubaaN nahi miray dost
Main qalam say kalaam karta hoN

Ghazal By: Rafiullah Mian

Ghazal By: Rafiullah Mian

کھا گئیں سبزہ زمیں کا یہ لہو کی بارشیں


دو غزلہ – پہلی غزل

یوں روا رکھیں ادائیں تو نے دل داری کے ساتھ
یاد آتی ہے تری افسوس بے زاری کے ساتھ

YuN rawaa rakheeN adaayiN tu ne Dil-daari k sath
Yaad aati he teri afsoos be-zaari k sath

زندگی دشوار تر ہوتی رہی اس واسطے
ایک ٹیڑھی جارہی پرچھائیں تھی دھاری کے ساتھ

Zindagi dushwaar tar hoti rahi is waste
Aik teRhi jaarahi parchaayiN thi dhaari k sath

کھا گئیں سبزہ زمیں کا یہ لہو کی بارشیں
کیا بسائیں بستیاں ہم چرخ_ زنگاری کے ساتھ

Khaa gayiN sabza zameeN ka ye luhoo ki baarisheN
Kia basaayiN bastiaaN hum charkh-e-zangaari k sath

آؤ رگڑیں ایڑیاں اب دشت میں روتے ہوئے
زندگانی ہو رواں پھر چشمہء جاری کے ساتھ

Aao ragReN aiRiaN ab dasht main rotay houe
Znidagaani ho rawaaN phr chashma-e-jaari k sath

خاک ہوجائے گا، خاکی کو یہی غم کھا گیا
اور فخر_ آتش_ جاں سوز ہے ناری کے ساتھ

Khaak hojaayega, khaaki ko yahi gham kha gaya
Aor fakhr-e-aatash-e-jaaN soz he naari k sath

ہوگیا پژمردہ جب سے تن مرا تیرے لیے
دوستی کرلی ہے میں نے من کی سرشاری کے ساتھ

Hogaya pazmurda jab se tan mera teray liye
Dosti karli he main ne man ki sarshaari k sath

عالم اسباب میں ہم سادگی ڈھونڈیں کہاں
روح خود ہے ان گنت پرتوں کی تہ داری کے ساتھ

Aalam-e-asbaab main hum saadgi dhondeN kahaN
Rooh khud he an-ginat partoN ki teh-daari k sath

ماں مری حساسیت سے پھر پریشاں ہی رہی
مسکرائی تھی وہ میری پہلی کلکاری کے ساتھ

Maa meri hissasiat say phir pareshaN hi rahi
Muskuraayi thi wo meri pehli kil-kaari k sath

دل مرا رومال کی مانند خوں سے تر رہے
درد کاڑھے ہیں جنوں نے خوب گل کاری کے ساتھ

Dil mera roomaal ki maanind khooN se tar rahay
Dard kaaRhe hein junoo ne khoob gul-kaari k sath

صبح دم بستر پہ میرے جا بہ جا، ہوتا ہے اب
جاگ جاتے ہیں بہت سے کرب بے داری کے ساتھ

Subh-dam bistar pe meray jaa ba jaa, hota he ab
Jaag jaate hen boht sar karb be-daari k sath

میرے چہرے پر جہنم میرے من کا پھر سے بھڑکا


غزل

میرے چہرے پر جہنم میرے من کا پھر سے بھڑکا
برف کے سورج میں آکر شعلہ تن کا پھر سے بھڑکا

Meray chehray par jahannum, meray man ka phir say bhaRka

Barf k sooraj main aakar, shula tan ka phir say bhaRka

کوہ اک احساس کا ہے، بوجھ اس پر ہے خلش کا
بے حسی کی اوس پڑ کر، دل دمن کا پھر سے بھڑکا

Koh ik ihsaas ka hay, bojh os par hay khalish ka

Be-hisi ki aos paR kar, Dil daman ka phir say bhaRka

دوزخوں سے ایک خواہش کے لیے گزرا ابھی تھا
حیف اے دل! وہ تصور اک عدن کا پھر سے بھڑکا

DozakhoN say aik khwahish k liye guzraa abhi tha

Haif ae dil! wo tasawwur ik adan ka phir say bhaRka

آسماں نے کیا اشارہ کردیا ہے آنکھ سے پھر
اک بجھا سا تل زمینوں کے ذقن کا پھر سے بھڑکا

AasmaaN ne kia ishara kardia hay aankh say phir

Ik bujha saa til zameenoN k Zaqan ka phir say bhaRka

عیش و عشرت میں مگن تھا، شست کی زد میں جو آیا
لی ہے انگڑائی فضا میں، تن زغن کا پھر سے بھڑکا

Aish-o-ishrat main magan tha, shist ki zad main jo aaya

Lee hay angRaayi fizaa main, tan zaghan ka phir say bhaRka

سانس خوش بو سے ہو ہم آہنگ کیوں کر، اے بہارو
صبح دم تنٌور لے کر من پون کا پھر سے بھڑکا

Saans khushboo say ho ham-aahang kioN kar, ae bahaaro!

Subh dam tannuur lekar, man pawan ka phir say bhaRka

جس عہد میں پڑا ہوں فقط اس کا دوش ہے


طرحی غزل


رشتے سبھی لہو ہوں جو مائیں لہو لہو

بھائی لہو لہو ہوں تو بہنیں لہو لہو

Rishtay sabhi laho, hoN jo maayiN luho luho

Bhai laho laho ho tu behnaiN luho luho

اُس شہر دل خراش کی شامیں لہو لہو

جس کی زمیں پہ پڑتی ہوں کرنیں لہو لہو

Os shehr e dil kharash ki shamaiN luho luho

Jis ki zameeN pe paRti hoN kirnain luho luho

جس عہد میں پڑا ہوں فقط اس کا دوش ہے

کم گو کی تجھ کو لگتی ہیں باتیں لہو لہو

Jis ehd main paRa hoN fiqat os ka dosh hay

Kam-go ki tujh ko lagti hein bataiN luho luho

پلکوں میں بس گئی ہے کسی کی نگاہ ناز

“کب دیکھیے کہ ہوں میری آنکھیں لہو لہو”

PalkoN main bas gayi hay kisi ki nigaah e naaz

“Kab dekhiye k hoN meri aankhien luho luho”

طوفان میں اڑے گی سماعت سنو اے دوست

ہوجائیں گی مری جو ندائیں لہو لہو

Toofan main uRegi sama’at suno a dost!

Hojayingi meri jo nidaayiN luho luho

شاید کہ دل میں صدق نہیں ہے ابھی تلک

ہر سمت ہورہی ہیں دعائیں لہو لہو

Shayad k dil main sadq nahi hay abhi talak

Har simt horahi hein duayiN luho luho

کس طرح میں خیال کروں امن کا یہاں

ارمان میرے، بن کے جو برسیں لہو لہو

Kis tarh main khayal karoN amn ka yahaN

Armaan meray ban k jo barsaiN luho luho

%d bloggers like this: