Blog Archives

زیست کا اہتمام لب سے ہے


غزل

عنبریں ہے کلام، سب سے ہے
زیست کا اہتمام لب سے ہے

نرم سورج پگھل رہا ہے عبث
سر پہ ٹھہری یہ شام جب سے ہے

اے شب و روز! تم نہیں بے زار؟
زندگی شاد کام کب سے ہے

اس کو سمجھا ہے خود کلامی تو
ہوش میں ہوں، کلام ربّ سے ہے

دن میں خورشید اب جلادے گا
لب پہ جو ابتسام شب سے ہے

وہ مرے اور پاس ہے آیا
دل مرا ہم کلام جب سے ہے

Ghazal

AmbareeN hey kalaam, sab sey hey
Zeest ka ahtamaam lab sey hey

Narm sooraj phigal raha hey abas
Sar pe thehrii ye shaam jab sey hey

Ae shab-o-roz! tum nahi be-zaar?
Zindagi shaad-kaam kab sey hey

Is ko samjha hey khud-kalami tuu
Hosh main hooN, kalam Rabb sey hey

Din main khursheed ab jalaa dega
Lab pe jo ibtisaam shab sey hey

Wo merey aor paas hey aaya
Dil mera ham-kalam jab sey hey

روئے زمیں پر تُو قتل۔ انسان تو کرسکتا ہی نہیں


غزل

اس دنیا میں جینے کا سامان تو کرسکتا ہی نہیں
موت کے ہوتے تیرا بھی ارمان تو کرسکتا ہی نہیں

Is dunya main jeene ka saamaan tu kar sakta hi Nahi

Mot k hote tera bhi armaan tu kar sakta hi Nahi

میرا سخن سے رشتہ کتنا ٹوٹا پھوٹا رہتا ہے
ٹوٹے پھوٹے لفظوں کو دیوان تو کرسکتا ہی نہیں

Mera sukhan say rishta kitna toota phoota rehta hay

Tootay phootay lafzoN ko deewaan tu kar sakta hi Nahi

کچھ سبزہ کرنا ہے مجھ کو، پھول کھلانے ہیں پھر سے
میں اپنے دل کی کھیتی ویران تو کرسکتا ہی نہیں

Kuch sabza karna he mujh ko, phool khilaane hein phir se

Main apne dil ki khaitee veeraan tu kar sakta hi Nahi

باہر رہ کر حسن سے اپنا دل بہلاتا رہتا ہے
من کا وحشی پابند۔ زندان تو کرسکتا ہی نہیں

Baahir reh kar husn se apna dil behlaata rehta hay

Man ka wehshi paaband-e-zindaan tu kar sakta hi Nahi

جان مری حاضر ہے لے لے اک مسکان کے بدلے بھی
تجھ پر یہ انمول انا قربان تو کرسکتا ہی نہیں

Jaan meri Haazir he le le ik muskaan k badley bhi

Tujh par ye anmol ana qurbaan tu kar sakta hi Nahi

زیست پہ تجھ کو ایک ذرا قدرت حاصل ہو تو کہ دے
روئے زمیں پر تُو قتل۔ انسان تو کرسکتا ہی نہیں

Zeest pe tujh ko aik zara qudrat haasil ho to keh de

Rooy-e-zameeN par tuu qatl-e-insaan tu kar sakta hi Nahi

اب جب کے اس کاہکشاں میں میری نیابت طے ہے تو پھر
اپنی سوچ کے کرے کو سنسان تو کرسکتا ہی نہیں

Ab jab k is kaahkashaaN main meri nayabat tay he tu phir

Apni soch k kurray ko sunsaan tu kar sakta hi Nahi

اپنے مصدر سے اک بار کیا تھا وعدہ روحوں نے
اور کسی سے جسم یہاں پیمان تو کرسکتا ہی نہیں

Apne masdar say ik baar kia tha wada roohoN ne

Aor kisi se jism yahaN paimaan tu karsakta hi Nahi

شرف یہ بس آزاد منش لوگوں کو بخشا ہے اس نے
سچی محبت آقا سے دربان تو کرسکتا ہی نہیں

Sharf ye bus aazaad manish logoN ko bakhsha he os ne

Sachi muhabbat aaqa say darbaan tu kar sakta hi Nahi

عشق نے آکر سر پھٹکا تھا در پہ خرد کے جس لمحے
عقل نے جیسا رقص کیا، وجدان تو کرسکتا ہی نہیں

Ishq ne aakar sar phatka tha, dar pe khirad k jis lamhe

Aql ne jesa raqs kia, wijdaan tu kar sakta hi Nahi

فطرت کے آنسو کا کوئی مول نہیں اس دنیا میں
آنکھ سے ٹپکے موتی کو مرجان تو کرسکتا ہی نہیں

Fitrat k aansoo ka koi mol nahi is dunya main

Aankh se tapkay moti ko marjaan tu kar sakta hi Nahi

خود کش محبت


نظم

خود کش محبت

عشق کے در پہ پاؤں دھرا
یہ تھی میری خطا
کیا پتا تھا ملے گی مجھے اک انوکھی سزا
اور جنموں پہ پھیلا رہے گا یہی سلسلہ
وہ تھا محبوب یا کوئی خود کش حسیں
جس نے میرے بدن ہی نہیں
روح کے بھی سبھی چیتھڑے
یوں اڑائے کہ پھر ریت اور اوس میں
اور مرے جسم اور روح کے درمیاں
اک ذرا فرق کرنا بھی مشکل ہوا
میں اسے اپنے ہی چھیتڑوں میں ابھر کر نکل آنے والی ہر اک آنکھ سے
اور ہر چشم حیران سے
دیکھتا رہ گیا
سوچتا رہ گیا
اور جب میرے جسم اور جاں کی ہر اک آنکھ مرنے لگی
اپنے محبوب کو ڈھونڈتا رہ گیا
جانے کتنی تھیں صدیاں جو گزریں اسی حالت نیست میں
ساری دنیا سے منھ موڑ کر ایک لیلا چلی
ڈھونڈ کر میرے جسم اور جاں کے سبھی چھیتڑے
چاہتوں کے حسیں طشت میں رکھ دیے
مجھ کو پھر لے کے آئی نئی زیست میں
پھر اڑانے مرے جسم اور جان کے چھیتڑے
اپنی خود کش محبت کے اک وار سے۔۔۔۔

Nazm

Khud-kush Muhabbat

Ishq k dar pe paaoN dhara

ye thi meri khataa

kia pata tha milegi mujhay ik anokhi saza

Aor janmoN pe phela rahega yahi silsila

Wo tha mehboob ya koi khud-kush haseeN

Jis ne meray badan hi nahi

Rooh k bhi sabhi cheetRay

YuN uRaaye k phir rait aor Os main

Aor meray jism aor Rooh k darmiaaN

Ik zara farq karna bhi mushkil hua

Main osay apne hi cheetRoN main ubhar kar nikal aane wali har ik aankh say

Aor har chashm e heraan say

Dekhta reh gaya

Sochta reh gaya

Aor jab meray jism aor jaaN ki har ik aankh marne lagi

Apne mehboob ko dhoondta reh gaya

Jaane kitni thieN sadyaN jo guzreeN isi haalat e Neest main

Saari dunya say moo moR kar aik laila chali

Dhoond kar meray jism aor jaaN k sabhi cheetRay

ChaahatoN k haseeN tasht main rakh diye

Phir sabhi apne khooN say musaffa kiye

Aor sub see diye

Mujh ko phir le k aayi nayi zeest main

Phir uRaane meray jism aor jaan k cheetRay

Apni khud-kush muhabbat k ik waar say…!

غریق اپنے وجود ِ خاک کا ہوں


غزل

غریق اپنے وجود ِ خاک کا ہوں

مدار ِ روح کا حیرت کدہ ہوں

Ghareeq apnay wajood e khaak hoN

Madaar e Rooh ka Herat-kada hoN

کوئی یوں قلزم ِ جاں میں پکارے

خدا کے ذہن میں اک بلبلہ ہوں !

Koi yuN Qulzim e jaaN main pukaray

Khuda k zehn main ik bulbula hoN

ہے سنجیدہ خلیق ِ کار ِ ہستی

میں خود ہستی سے مدغم آشنا ہوں

Hay sanjeeda khaleeq kaar e hasti

Main khud hasti say madgham, aashna hoN

مری تقسیم کا سانچہ ہے کیسا؟

میں اصل ِ زیست پر دولخت ساہوں

Mri taqseem ka saancha hay kesa?

Main asl-e-zeest par dolakht saa hoN

بہت آسان ہے ترکیب ِ آدم

وجود ِ خاک میں روح ِ خداہوں !

Boht aasan hay tarkeeb aadam

Wajood-e-khaak main rooh-e-khuda hoN

تو اس گھتی کو میں سلجھاؤں کیوں کر؟

کبھی شیطاں ، کبھی میں پارسا ہوں

Tu is ghuthi ko main suljhaaon kioN-kar

Kabhi shetaaN, kabhi main paarasa hoN

مرے ہاتھوں ، مری ہستی کی پستی

میں اپنے واسطے خود ہی سزا ہوں!

Mray haathoN meri hasti ki pasti

Main apnay wastay khud hi saza hoN

مٹی سے شَغف، پانی پہ گذر


غزل

مٹی سے شَغف، پانی پہ گذر

پیتے ہیں لہو، ہم خاک بہ سر

Mitti say shaghaf, paani pe guzar

Peetay hein luhoo, hum khaak ba-sar

وحشت کے سوادل میں نہیں کچھ

گردش میں ہوں میں ، آواز نہ کر

Wahshat ky siwa dil main nahi kuch

Gardish main hoN main, awaaz na kar

دیکھی ہے جھلک پردے سے جو کل

دنیامرے دل کی زیر و زبر

Dekhi hay jhalak parday say jo kal

Dunya mray dil ki zair-o-zabar

ہم کو ہو متاع زیست عطا

اک قلبِ حزیں، اک دردِ جگر

Hum ko ho mataa-e-zeest ataa

Ik qablb-e-hazeeN, ik dard-e-jigar

جب درد کا دریا سوکھ چکا

تو اس سے ہوئ تشکیلِ حجر

Jab dard ka darya sookh chuka

Tu os say hui tashkeel-e-hajar

صحراے درونِ ذات نکل

ملتا ہے وہاں اک سیلِ بدر

Sahra-e-daroon-e-zaat nikal

Milta hay wahaN ik sail-e-badar

اک رازِ خودی، اک روحِ خدا

ہوتا ہے اسی مابین بشر

Ik raaz-e-khudi, ik rooh-e-khuda

Hota hay isi maabain bashar

میں تجھ سے زیادہ تجھ سے قریں

محسوس تو کر، محسوس تو کر

Main tujh say ziyada tujh say QareeN

Mahsoos tu kar, mahsoos tu kar

تم نوچ رہے ہو عصمتِ حق

کچھ کرلو حذر، کچھ کرلو حذر

Tum noch rahay ho ismat-e-haq

Kuch karlo hazar, kuch karlo hazar

محبوب مرا بس تو ہی تو ہے

آ، پاس مرے، مجھ سے تو نہ ڈر

Mahboob mera bus tu hi tu hay

Aa, paas meray, mujh say tu na dar

تکریم کروں ، تعظیم کروں

انسان کا دل اللہ کا گھر

Takreem karooN, tazeem karoN

Insan ka dil, Allah ka ghar

%d bloggers like this: