Monthly Archives: June 2014

اپنی دنیا سے تو میں، پارہ پارہ اٹھتا ہوں


غزل

دریا دریا بہتا ہوں، قطرہ قطرہ اٹھتا ہوں
صدیاں صدیاں بیت چکیں، لمحہ لمحہ اٹھتا ہوں

آکر دیکھو کٹیا میں، دنیا کیسی سمٹی ہے
تم نے دیکھا کیسے میں، جلوہ جلوہ اٹھتا ہوں

نسلوں کا ہے بھاری بوجھ، منزل منزل جانا ہے
پیری ہے یا دہشت ہے، لرزہ لرزہ اٹھتا ہوں

مولا تیری دنیا میں، خود کو پورا دیکھوں گا
اپنی دنیا سے تو میں، پارہ پارہ اٹھتا ہوں

کہساروں پر جاکر میں غم کی راتیں کاٹوں گا
دیکھو، اب تو جھیلوں پر، ہالہ ہالہ اٹھتا ہوں

Ghazal

Darya darya behta hoN, qatra qatra uth’ta hoN

Sadiya sadiyan beet chukeeN, lamha lamha uth’ta hoN

Aakar dekho kuTyaa main, dunya kesi simti hay

Tum ne dekha kese main jalwa jalwa uth’ta hoN

NasloN ka hay bhaari bojh, manzil manzil jana hay

Peeri hay ya dahshat hay, larza larza uth’ta hoN

Mola tairii dunya main khud ko poora dekhonga

Apni dunya say tu main paara paara uth’ta hoN

KuhsaaroN par jakar main gham ki raatain katonga

Daikho, ab tu jheeloN par hala hala uth’ta hoN

%d bloggers like this: