Monthly Archives: June 2012

کم سن دُلہن


نثری نظم
ایک پیارے دوست ایس ایس دھانجی کی انگریزی نظم سے متاثر ہوکر کہی گئی ہے۔

کم سن دُلہن

ننھی دلہن
تمھارے لیے تمھارے خواب
گری ہوئی پلکوں کی چلمن میں
!تخلیق کیے گئے تھے
ہزاروں عکس جس کے پیچھے
خوابوں کی طرح جھلملاتے ہیں
،سنو
تم خوابوں سے نکل کر
!صبح کا سہانا منظر نہیں دیکھ سکتی
زندگی محض سپنوں کی ترنگ میں
زبان پر خشک خون کے عجیب ذایقے
اور گندی سانسوں کے درمیان
!!بار آور ہورہی ہے

Kam-sin Dulhan

Nannhi Dulhan
Tumharay liye tumharay Khwaab
Giri hoi palkoN ki chilman main
Takhleeq kiye gaye thay!
HazaaroN aks jis k peechay
KhwaboN ki tarah jhilmilatay hain
Sunoo,
Tum khwaboN say nikal kar
Subh ka suhana manzar nahi daikh sakti!
Zindagi mehez sapno ki tarang main
Zubaan par khushk khoon k ajeeb zaayeqay
Aor gandii saanso k darmiyan
Baar-aawar ho rahi hay!

سانس لیتا رہے یقینِ دل


غزل

ایک چہرہ جو ہے قرینِ دل
سانس لیتا رہے یقینِ دل

روح اب بھی رگوں میں تیرتی ہے
سنگ سی سخت ہے زمینِ دل

مرکزے کا طواف جاری ہے
واقفِ حال ہے رہینِ دل

تیرے احساس کی حرارت سے
پھر دھڑکنے لگی جبینِ دل

چاند چہرے سے آنکھ میں پہنچا
رفتہ رفتہ ہُوا مکینِ دل

کتنا یہ جزْرومَد اُٹھائے گا
سینہ اُس کا بنی کمینِ دل

خود تو وہ روشنی سراپا ہے
اُس کا احساس ہے نگینِ دل

حد نہیں اُس کی بے نیازی کی
جستجو ہے، تو ہے دفینِ دل

Ghazal

Aek chehra jo hay qareen-e-dil
Saans laita rahay yaqeen-e-dil

Rooh ab bhi ragoN main tairtii hay
Sang si sakht hay zameen-e-dil

Markazay ka tawaaf jaari hay
Waaqif-e-haal hay raheen-e-dil

Tairay ahsaas ki hararat say
Phir dhaRaknay lagi jabeen-e-dil

Chaand chehray say aankh main pohncha
Rafta rafta hua makeen-e-dil

Kitna ye jazr-o-mad uthaayega
Seena us ka bani kameen-e-dil

Khud tu wo roshni saraapa hay
Uska ahsaas hay nageen-e-dil

Had nahi uski bay-niyaazi ki
Justujoo hay, tu hay dafeen-e-dil

افسانہ پَھٹّو – Afsana Phatto


افسانہ پَھٹّو

Afsana Phatto

Published In literary magazine quarterly Ijra Karachi (July-September 2010)

!تم نے دیر کردی


!تم نے دیر کردی

تم نے تجہیز و تکفین میں دیر کردی بہت
میں تو کب لوٹ کر آچکا
اُن ہی پگ ڈنڈیوں پر۔۔۔۔۔
سفر کرکے طے)
جو طویل اور اذیّت سے بھرپور تھا
(اور دفنادیا اپنا مُردہ
۔۔۔جو قبروں کے بیچ اس طرح سے بچھی ہیں
کہ جیسے اس اُمید پر
ہر کسی کو گزرنے کی دیتی رہی ہوں اجازت
کہ اک دن تو اِن کی بھی ہوگی ہری گود
اور ان کے اندر پلے گی تمنّا

کسی تیسرے نے اگر یہ تماشا کیا ہو
کہ ہم لڑرہے تھے محبت کی ڈوئل
تو ممکن ہے دنیا کو وہ یہ بتائے
کہ کچھ دیر میں دونوں اپنے ہی ہاتھوں
!فنا ہوگئے تھے

Tum nay dair kardi!

Tum nay tajheez-o-takfeen main dair kardi bohot
Main tu kab laot kar aachuka
Un hi pag-dandioN par….
Safar kar-k tay
Jo taweel aor aziyyat say bharpoor tha
Aor dafnaa dia apna murda
….Jo qabroN k beech is tarah say bichi hain
K jesay is ummeed par
Har kisi ko guzarnay ki daitii rahi hoN ijaazat
K ik din tu in ki bhi hogi hari gaod
Aor in k andar palaigii tamanna

Kisi teesray nay agar ye tamasha kia ho
K hum laR rahay thay muhabbat ki Duel
Tu mumkin hay dunya ko wo ye bataaye
K kuch dair main dono apnay hi haathoN
Fana hogaye thay!

%d bloggers like this: