سفید و سیاہ


سفید و سیاہ

***

تم خود کو جدیدتر کہتے ہو
مجھے تمھاری ہر ادا میں
ماضی کی کالی سفید دھاریاں نظر آتی ہیں
تم نظارے میں اس طرح محو ہو
کہ عقل کے روشن دروازے کھول نہیں پائے
میں نے جو دیکھا
اسے ایک التباس سمجھا
میرا قد اتنا چھوٹا ہے کہ
مجھ تک شبیہات پہنچنے میں
صدیاں گزرجاتی ہیں
ہر نیا آنے والا سایہ
میری چشم حیرت پر خنداں ہے

Sufaid-o-Siyaah

Tum khud ko jadeed-tar kehtay ho
Mujhey tumhari har ada main
Maazi ki kaali-sufaid dhaariyaaN nazar aati hain
Tum nazaaray main is tarah mehw ho
K aql k roshan darwazay khol nahi paatay
Main nay jo daikha
Osay ak iltibaas samjha
Mera qad itna chota hay k
Mujh tak shabeehaat pohnchnay main
SadiyaaN guzar jaati hain
Har naya anay wala saya
Meri chashm-e-hairat par KhandaaN hay

UcryN


Crisis in Ukraine goes worse!

Crisis in Ukraine goes worse!

My Pencil Sketchs

شکر واجب ہے ہم پہ اُس ربّ کا


شکر واجب ہے ہم پہ اُس ربّ کا
دور کردِیں بلائیں جس نے سب
ابتلائے الم کیا لیکن
کتنی اجلی سحر دی بعدِ شب

Shukr wajib hay hum pe us rab ka
Door kardeeN balaayeN jis nay sub
Ibtilaay-e-Alam kiya laikin
Kitni ujlii sahar di bad-e-shab

.

WEHSHEE…


Main koi shakhs hun jo in lafzuun main chupaa baythaa hai
Main wohi dunya jis main tu ab bhi raha karta hai

Mere hastii ki har baar meray daaman ko tar hi karay
mera wajuud ki aankhun main mere har roz chubha karta hai

Nahi haasil hua mujko sharf insaan ka hai ay loogo
main wehshee hun, haan wohi muj main jiya karta hai

Mana ki muhabbat ka saleeqa meray seenay main nahi
haan magar chup kay wafa nacheez kiya karta hai

Saari dunya mere dushman, tow main chup kyun rahuun
inhii haalat se dil har roz lada karta hai

Mujko ik baar tow seenay se lagayee koi
fir kahay jaakay ye wehshee SAAGAR hi hua karta hai

By: Aiman Peer (A guest writer from Jammu & Kashmir)

.

لوگ اس گلی کے پھر، دیر تک تڑپتے ہیں


Aek arsay bad Ghazal k sath hazir hoa hoN!

غزل

خواب میں نکل کر تم، کیا تلاش کرتے ہو
روشنی میں آکے پھر، لمحہ لمحہ مرتے ہو

رات پر عجب سکتہ، اور تمھاری تڑپن یہ
کس قدر تحرّک کی زندگی بسرتے ہو

من میں پھیلے اندھیارے، راکھ ہوں گے کب جل کر
آگ کے سمندر میں روز تم اترتے ہو

لوگ اس گلی کے پھر، دیر تک تڑپتے ہیں
دل میں درد لے کر تم، واں سے جب گزرتے ہو

دل، کہ پالیا آخر، تم نے مدعا اپنا
قلزم محبت میں ڈوبتے ابھرتے ہو

آدمی ٹھہر جاؤ تم کسی تو حالت پر
اِس گھڑی بکھرتے ہو، اُس گھڑی سنورتے ہو

دستِ آسماں کو سوچ، گود اس زمیں کی سوچ
جب بھی تم اجڑتے ہو، جب بھی تم نکھرتے ہو

Ghazal

Khwab main nikal kar tum, kia talash kartay ho
Roshni main aa kay phir, lamha lamha martay ho

Raat par ajab sakta, aor tumhari taRpan ye
Kis qadar taharruk ki zindagi basartay ho

Man main phailay andhyaaray, raakh hongay kab jal kar
Aag k samundar main roz tum utartay ho

Log os gali k phir, dair tak taRaptay hain
Dil main dard lay kar tum, waaN say jab guzartay ho

Dil, k paalia aakhir, tum nay mudda’aa apna
Qulzim-e-muhabbat main doobtay ubhartay ho

Aadmi theher jaao, tum kisi tu haalat par
Is ghaRi bikhartay ho, us gaRi sanwartay ho

Dast-e-aasmaaN ko soch, goud is zameeN ki soch
Jab bhi tum ujaRartay ho, jab bhi tum nikhartay ho

برق گرنے پر


برق گرنے پر

ــ گزشتہ روز ملاوی کے دارالحکومت کے ایک ایڈونٹسٹ چرچ پر دوران عبادت آسمانی بجلی گرنے پرــ

سنیچر کے دن
جب ملاوی میں توسیعی سیشن جاری تھا
تب اُس چھت سے
‘جہاں ایک دن ہم سب کی
دکھ سے بھرے سینے میں
سانس بھرتی
‘بہت محبوب ہستی کو اٹھا لیا گیا تھا
ایک شعلہ لپکا
اورچند عبادت گزار روحوں کو
اٹھا کر لے گیا
روحوں نے دیکھا کہ
بھگدڑ میں
ان کے اجسام روندے جارہے ہیں
اور آسمان پر
شعلوں کی زبانیں کانپ رہی ہیں
زمین پر دہشت کی بارش سے
ظہور ثانی کے معتقدین
اپنی تھیولوجی بغل میں دبائے
محبوب ہستی کو مصلوب چھوڑ کر
بھاگتے جارہے ہیں
سچ کا لباس اوڑھ کر
مصلوب ہونے کا ہنر
عبادت گاہ کے فرش پر راکھ کی صورت پڑا ہے
اور میخوں پر ہتھوڑوں کی لگنے والی
ضربوں کی آوازیں
بھاگنے والوں کا
پیچھا کررہی ہیں

Barq girnay par

__ A free verse poem on lightning-bolt on an Adventist Church during a session on Saturday __

Sanature k din
Jab malawi main toseeii sasion jari tha
Tab os chat say Read the rest of this entry

آبرو کا نوحہ


آبرو کا نوحہ

ــ 30 دسمبر 2006 کو پھانسی پر چڑھنے والے صدام حسین کی ساتویں برسی پر ــ

ہوائیں
بلندیوں کو محبوب رکھنے والے
شاہینوں کو
اپنے دوش پر
اُن سربہ فلک رازوں تک پہنچانے کا
فریضہ انجام دیتی ہیں
جو زمیں زادوں کے لیے چیلنج ہیں
اگر وہ چٹانوں کو
اُلٹ دینے والے پُرقوت پروں کو
جھاڑ کر
خود کو ہوس سے محروم کرنا سیکھیں
اور سیاہ چادر تلے
دشمن پر کپکپی طاری کردینے والی
نگاہوں کو
چند آنسوؤں سے دھولیا کریں
♣♣
عیبوں کی نمایش کرتے کرتے
ہم نے اپنے وجود میں خوف کو جنم دیا ہے
اس لیے دشمن ہم پر مسلط ہے
مفتوح قومیں
ہوس کا خوش نما لباس پہن کر
اڑان کی گرمی سے محروم ہوجاتی ہیں
♣♣
اے شاہین
تو آبرو کے فلسفے کو نہ سمجھ سکا
تیری نگاہ شعلہ ساز نے
اپنے ہی خرمن کو چُنا
تیرے بازوئے ہمت نے
اپنے ہی لوگوں کی ہمت پست کردی
آبرو کا پرندہ
تیرے کندھے سے اڑتے وقت
رویا ضرور ہوگا
کہا ضرور ہوگا
میں تجھے ہم دوش ثریا کرسکتا تھا
لیکن تم نے عیبوں کے سائے میں
خوف کو جنم دے کر
خلعتِ ہوس زیب تن کرلیا
آخری لمحات میں
جب زمین سے تیرا رشتہ ٹوٹنے والا تھا
تو نے مجھے یاد کیا
لیکن تیرے دوش سے
میری نسبت ٹوٹ چکی تھی

Aabroo ka Noha

A free verse poem on 7th death anniversary of Saddam Hussein (December 30, 2006)

HawaayeN
Bulandion ko mahboob rakhnay walay
ShaaheenoN ko Read the rest of this entry

سونامی


دسمبر 26 2004 کو بحر ہند میں آنے والے سونامی کے نو برس مکمل ہونے پر

سونامی

نو برس ہوگئے ہیں
اے ہمارے پیارے سمندر
تجھ سے کوئی گلہ نہیں
لیکن تو جس طرح ہمیں پیارا ہے
یہ زمین بھی اسی طرح پیاری ہے
اور کوئی شک نہیں
اس زمین پر رہنے والے
سب سے زیادہ پیارے ہیں
جو آج بھی بے گھری کا دکھ
خوف ناک لہروں کی
ہولناک یادوں کے ساتھ
جَھیل رہے ہیں
اسی زمین پر
تمام آسائشوں کےساتھ
صبح سے شام کرنے والے طاقت ور لوگ
تاریخ کے تسلسل میں
آج بھی عبرت پکڑنے سے
معذور نظر آتے ہیں
اور وقت کی بے نیاز آنکھ
مٹی اور پانی میں رُلتے مناظر
ابدی یادداشت میں
تسلسل کے ساتھ محفوظ کررہی ہے

A free verse poem on marking 9 years of an undersea megathrust earthquake in Indian Ocean on 26 December 2004

Tsunami

Nao baras hogaye hain  Read the rest of this entry

فریبِ خیال


فریبِ خیال

سر رہ گزر جو بجھا پڑا ہے
وہ خواب ہے
یہ جو شہر پر ہے تنا ہوا
یہ وجود خیمہء دود ہے
یہ عذاب ہے

ذرا سادگی ہو ملاحظہ
کہ تڑپ رہی تھیں جو انگلیاں
انہیں چشم خواب میں گھونپ کر
مری چھین لی ہیں بصارتیں

مرے تشنہ لب ترے زیرپا
مری آبرو ترا زَہرخند
تو قدم سے تابہ دَہن ستم
مرے خواب پر، نہ خیال پر
کبھی پڑسکا ترا سایہ چشمِ کرم کا
اے، مرے شہر آرزو سن لے تو
میں ترے قدم سے قدم ملاکے
جواں ہوا

مجھے راکھ اپنی کریدنے کو ملی نہیں
مجھے شک نہیں، ہے یقین یہ
مری زندگی کا جو خواب تھا
وہ اسی میں تھا

شبِ آرزو، شبِ جستجو
اسے روشنی کی کرن سمجھ کے نہ کھا فریب
یہ نشان ِ صبح نہیں نہیں
یہ تو خون ہے

Faraib-e-Khayaal

***
Sar-e-rehguzar jo bujha paRa hay
Wo khwaab hay
Ye jo shehr par hay tanaa hua
Ye wajood khaima-e-duud hay
Ye azaab hay

Zara saadgi ho mulahiza
K tarap rahi thein jo ungliaaN
Unhain chashm-e-khwab main ghonp kar
Meri cheen li hain basarataiN

Meray tishna lab teray zair-e-paa
Meri aabroo tera zahr khand
Tu qadam say taa ba dahan sitam
Meray khwab par na khayaal par
kabhi paR saka tera saaya chashm-e-karam ka
Ae, meray shehr-e-aarzo sun lay tuu
Main teray qadam say qadam mila k
JawaaN hua

Mujhe raakh apni kuraidnay ko mili nahi
Mujhey shak nahi, hay yaqeen ye
Meri zindagi ka jo khwab tha
Wo osi main tha

Shab-e-aarzoo, shab-e-justujoo
isay roshni ki kiran samajh k na khaa faraib
Ye nishaan-e-subh nahi nahi
Ye tu khoon hay!

%d bloggers like this: