Blog Archives

لباس


♣ لباس ♣

ایک سہانی صبح
سرہانے مرجھایا پھول دیکھا
ملال گھیرتے وقت
ہوا نے بتایا
یہ کل رات تک کِھلا تھا
صرف ایک رات کے سفر سے ہار گیا
میرا دل اس خیال سے دھڑکا
راتوں کا سفر بہت ہلاکت خیز ہوتا ہے
پھول بدن کو اٹھاکر
باغیچے کی کیاری کی مٹی پر
کسی کتبے کی طرح رکھا
پلٹتے سمے
ایک پھول نے مسکراکرکہا
ملول مت ہو
میری مسکراہٹ مستعار لے لو
تازہ دم ہوکر
امید کا نیا لباس پہن لو

 

Libas

Ak suhani subh
Sarhanay murjhaya phool dekha
Malaal ghairtay waqt
Hawa nay bataya
Ye kal raat tak khila tha
Sirf ak raat k safar say haar gaya
Mera dil is khayal say dhaRka
Raton ka safar bohot halakat khaiz hota hay
Phool badan ko utha kar
Bagheechay ki kiyari ki mitti par
Kisi kutbay ki tarah rakha
Palat’tay samay
Aik phool nay muskura kar kaha
Malool mat ho
Meri muskurahat musta’ar lelo
Taza dam hokar
Umeed ka naya libas pehen lo

تخلیق کار مگن ہے


تخلیق کار مگن ہے

محبت کے وہ لمحے
جن کے قدموں سے تذبذب سانپ کی طرح لپٹا ہے،
تخلیق کار چاہتا ہے کہ
تیقن کی سرزمین پراپنے نقوش بنائیں،
کیا کمزور اِرادوں کے پیچھے
کسی ہوش رُبا امکان کا جنم ہوسکتا ہے!
یا محض تخلیق کار کو اپنے کینوس کے سامنے
دیر سے بیٹھے بیٹھے کسی نئے
تجریدی تجربے کی ضرورت محسوس ہورہی ہے!
وہ اپنی آنکھوں میں بچھی ہوئی
سرنگوں کے جال میں سرکتے
لہو کے تموّج کوانتظار کی گرمی سے
اُچھال رہا ہے،
جب کینوس پر واٹر کلر سے اسے مزیّن کرے گا
تو محبوب کی آنکھوں سے
دُمدار سیاروں جیسی پلکوں والا
اعتراف کتر لے گا،
اور صحرا کی ریت جیسی
لہروں والے ہونٹوں پر
مسکان کی دیر سے سوئی گھنٹی کو جگادے گا‘
تخلیق کار کیوں جانب دار نہیں رہ سکتا!
اپنے تخیّل اور تحیّر کو مجسم کرکے
جا بہ جا عکس در عکس کیوں پھیلاتا ہے!

……..اور
تخلیق کار بے نیازی سے
کینوس کے سامنے دیر سے بیٹھا
اپنی یکتائی برقرار رکھ کر
کہانی کو کسی نئے زاویے سے
معکوس کرنے میں مگن ہے!

سفید و سیاہ


سفید و سیاہ

***

تم خود کو جدیدتر کہتے ہو
مجھے تمھاری ہر ادا میں
ماضی کی کالی سفید دھاریاں نظر آتی ہیں
تم نظارے میں اس طرح محو ہو
کہ عقل کے روشن دروازے کھول نہیں پائے
میں نے جو دیکھا
اسے ایک التباس سمجھا
میرا قد اتنا چھوٹا ہے کہ
مجھ تک شبیہات پہنچنے میں
صدیاں گزرجاتی ہیں
ہر نیا آنے والا سایہ
میری چشم حیرت پر خنداں ہے

Sufaid-o-Siyaah

Tum khud ko jadeed-tar kehtay ho
Mujhey tumhari har ada main
Maazi ki kaali-sufaid dhaariyaaN nazar aati hain
Tum nazaaray main is tarah mehw ho
K aql k roshan darwazay khol nahi paatay
Main nay jo daikha
Osay ak iltibaas samjha
Mera qad itna chota hay k
Mujh tak shabeehaat pohnchnay main
SadiyaaN guzar jaati hain
Har naya anay wala saya
Meri chashm-e-hairat par KhandaaN hay

سونامی


دسمبر 26 2004 کو بحر ہند میں آنے والے سونامی کے نو برس مکمل ہونے پر

سونامی

نو برس ہوگئے ہیں
اے ہمارے پیارے سمندر
تجھ سے کوئی گلہ نہیں
لیکن تو جس طرح ہمیں پیارا ہے
یہ زمین بھی اسی طرح پیاری ہے
اور کوئی شک نہیں
اس زمین پر رہنے والے
سب سے زیادہ پیارے ہیں
جو آج بھی بے گھری کا دکھ
خوف ناک لہروں کی
ہولناک یادوں کے ساتھ
جَھیل رہے ہیں
اسی زمین پر
تمام آسائشوں کےساتھ
صبح سے شام کرنے والے طاقت ور لوگ
تاریخ کے تسلسل میں
آج بھی عبرت پکڑنے سے
معذور نظر آتے ہیں
اور وقت کی بے نیاز آنکھ
مٹی اور پانی میں رُلتے مناظر
ابدی یادداشت میں
تسلسل کے ساتھ محفوظ کررہی ہے

A free verse poem on marking 9 years of an undersea megathrust earthquake in Indian Ocean on 26 December 2004

Tsunami

Nao baras hogaye hain  Read the rest of this entry

کینوس پر مندمل خواہشیں


کینوس پر مندمل خواہشیں

 

جگر کے لہورنگ گوشوں میں تڑپن
کبھی دل کے خانوں میں مچلن
مجھے زخم تم نے نہیں
خود مری خواہشوں نے دیے تھے
وہ جذبوں کا ہیجان تھا
جس نے میرے مکاں کو اجاڑا
٭
نظیر اپنی ملتی نہیں اس جہاں میں
کہ خواہش کو زخم ِ جگر میں بدل کر
نیا خوں بننے سے روکا گیا ہے
٭
مگر خواہشوں کو
مرے جسم و جاں سے
بری طرح لپٹے ہوئے وقت نے
مندمل کردیا ہے
٭
بظاہر تو معصوم ہیں
خواہشیں شارک بن کر
تعاقب میں خوابوں کے رہتی ہیں اکثر
چلیں، کینوس پر تحفظ کی خاطر
انہیں پینٹ کردیں

Canvas par mundamil khwahishaiN

Jigar k laho-rang goshoN main taRpan
Kabhi dil k khaanoN main machlan
Mujhay zakhm tum nay nahi
Khud meri khwahishoN nay diye thay
Wo jazboN ka haijaan tha
Jis nay meray makaaN ko ujaaRa
*
Nazeer apni miltii nahi is jahaN main
K khwahish ko zakhm-e-jigar main badal kar
Naya khoon bannay say roka gaya hay
*
Magar khwahishoN ko
Meray jism-o-jaaN say
Buri tarha liptay howe waqt nay
Mundamil kardia hay
*
Bazaahir tu masoom hain
KhawahishaiN shark ban kar
Ta’aqub main khwaboN k rehti haiN aksar
ChalaiN, canvas par tahaffuz ki khaatir
Inhain paint kardain

تمھارا دکھ


تمھارا دکھ

محبت کی گلیوں میں پھرتی رہی ہوں
شناسائے رازِ دروں ہوں
کہیں پر ہوس ہے
کہیں دل لگی ہے
کہیں ایک جذبہ
جو خالی ہو روحِ وفا سے
یہاں لوگ مجبوریوں کو محبت سے تشبیہ دے کر
محافل میں دادِ سخن لوٹتے ہیں
یہ گلیاں
کہ جن سے میں واقف رہی ہوں
یہاں لوگ اک دوسرے کو
تواتر سے دھوکے میں رکھ کر
محبت کا ناٹک رچاکر
حقیقت کا بطلان کرتے رہے ہیں
٭٭٭

Tumhara Dukh

Muhabbat ki galioN main phirtii rahi hooN
Shanasaay-e-raaz-e-darooN hoN
KaheeN par hawas hay
KaheeN dil-lagi hay
KaheeN aek jazba
Jo khaali ho rooh-e-wafa say
YahaN log majboorioN ko muhabbat say tashbeeh day kar
Mahaafil main daad-e-sukhan loot’tay hain
Ye galiyaaN
K jin say main waqif rahi hooN
Yahan log ik doosray ko
Tawaatur say dhokay main rakh kar
Muhabbat ka naatak rachaa kar
Haqeeqat ka batlaan kartay rahay hain

ہمارے درمیاں


Picture it and write

ہمارے درمیاں

تم

تنگ و تاریک اور شکستہ گلی سے
روز گزر تے ہو
اور سورج تلے جلتی
اُسی پرانی بستی میں جانکلتے ہو
تمھاری زندگی
اسی انتہائی تجربے پر موقوف ہے
اور میں اس امید پر جیتا ہوں
کہ ایک دن تم
اپنے وجود کے اندر دور تک بچھی
کالی پگڈنڈی کو
کسی روشن خیال سے اُجال دوگے

Hamaray darmiyaN

Tum
Tang-o-taareek aor shikasta gali say
Roz guzartay ho
Aor sooraj talay jalti
Osi purani bastii main jaa nikaltay ho
Tumhari zindagi
Isi intihayi tajarbay par moqoof hay
Aor main is umeed par jeeta hoN
K aek din tum
Apnay wajood k andar door tak bichii
Kaali pagdandii ko
Kisi roshan Khayal say ujaal dogay!

!تم نے دیر کردی


!تم نے دیر کردی

تم نے تجہیز و تکفین میں دیر کردی بہت
میں تو کب لوٹ کر آچکا
اُن ہی پگ ڈنڈیوں پر۔۔۔۔۔
سفر کرکے طے)
جو طویل اور اذیّت سے بھرپور تھا
(اور دفنادیا اپنا مُردہ
۔۔۔جو قبروں کے بیچ اس طرح سے بچھی ہیں
کہ جیسے اس اُمید پر
ہر کسی کو گزرنے کی دیتی رہی ہوں اجازت
کہ اک دن تو اِن کی بھی ہوگی ہری گود
اور ان کے اندر پلے گی تمنّا

کسی تیسرے نے اگر یہ تماشا کیا ہو
کہ ہم لڑرہے تھے محبت کی ڈوئل
تو ممکن ہے دنیا کو وہ یہ بتائے
کہ کچھ دیر میں دونوں اپنے ہی ہاتھوں
!فنا ہوگئے تھے

Tum nay dair kardi!

Tum nay tajheez-o-takfeen main dair kardi bohot
Main tu kab laot kar aachuka
Un hi pag-dandioN par….
Safar kar-k tay
Jo taweel aor aziyyat say bharpoor tha
Aor dafnaa dia apna murda
….Jo qabroN k beech is tarah say bichi hain
K jesay is ummeed par
Har kisi ko guzarnay ki daitii rahi hoN ijaazat
K ik din tu in ki bhi hogi hari gaod
Aor in k andar palaigii tamanna

Kisi teesray nay agar ye tamasha kia ho
K hum laR rahay thay muhabbat ki Duel
Tu mumkin hay dunya ko wo ye bataaye
K kuch dair main dono apnay hi haathoN
Fana hogaye thay!

!بے چہرگی


Ye nazm FaceOff k naam say honay wale aek workshop k silsilay main kahi gayi hay.

!بے چہرگی

ہزار چہرے
ہر ایک چہرے پہ ایک چہرہ
سجا ہے ایسا
کہ جیسے سکّے کے دو رخوں میں
بٹی حقیقت
مگر یہ چہرے پہ ایک چہرہ
فسوں ہے یارو!
اور ایسے چہروں کی کیا کمی ہے!
ہر اک نگر میں ہزار چہرے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مری زمیں پر محبتوں کی
ہزار رنگوں میں فصلِ گل کی
ہزار صدیوں سے کھیتیاں لہلہارہی تھیں
یہ اک صدی جو عذاب بن کر
ہمارے گلشن میں آبسی ہے۔۔۔
بتاؤ مجھ کو، نمو کہاں پر ہوئی ہے اس کی
یہ کس ستارے نے اس کو جنما
کہیں پرانی کسی صدی کی
سسکتی، خوں تھوکتی، دمِ مرگ پر تڑپتی
جڑوں نے جوڑا ہے رابطہ کوئی اِس صدی سے
جو تازہ کاری کے اک فسوں سے
ہوئی مُعَنْوَن
کہ جس نے چہروں پہ ایک چہرہ مزید تھوپا
یہ اک اضافی، یہ ایک خونیں
یہ ایک بے درد پتھروں جیسا سخت چہرہ
اور ایسے چہرے ہیں اب ہزاروں
ہر اک نگر میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
!فضا کو دیکھو
یہ کیا فسوں سے بھری نہیں ہے؟
یہاں پہ معصومیت سے کِھلواڑ کس نے کھیلا؟
ہم ہی نے کھیلا
سبھی نے مل کے یہاں پہ لوٹی ہے اس کی عصمت
کبھی زمیں کی حدود کے نام سے ہے لوٹی
کبھی کسی زن کے نرم نقش و نگار اپنے
کریہہ دانتوں سے ایسے نوچے
کہ اپنی پہچان بھول بیٹھے
کبھی تو غیرت پہ تھوک کر اپنی
بیٹیوں کے حقوق کھاکے
اور اِن سے بڑھ کر
کبھی خدا و رسول کے نام پر بھی آئی نہ شرم کوئی
خدائے برتر نے آسماں سے کُھلی ہدایت اتار دی ہے
مگر یہ مُلا، عجیب ملا
عجیب اِن کی شریعتیں ہیں
جو اِن سے کترا کے جائیں تو یہ اُتار دیں اُن کی گردنیں بھی
کبھی سیاسی، کبھی معاشی
ہیں احمقوں کے عجیب نعرے۔۔۔
جہاں پہ جس کو ذرا سا موقع بھی مل گیا ہے
وہیں پہ اُس نے
زمیں کی عصمت بھَنْبھُوڑ دی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ اِس صدی کے کریہہ چہرے ہیں
جن کی تعداد ہے ہزاروں
ہر اک نگر میں
مجھے تو افسوس بس یہی ہے
کہ ہم پڑے ہیں اگر مگر میں
کبھی چھپاتے ہیں اپنا چہرہ
جو خوں سے رنگیں، کٹا پھٹا ہے
کبھی دکھاتے ہیں ایسا چہرہ
ہے جس پہ معصومیت کا پہرہ
ارے، اے لوگو۔۔۔
!عجیب لوگو
یہ کیا تماشا لگارہے ہو
یہ کیسے چہرے دکھارہے ہو
فسوں میں لپٹے
!دھواں سا چہرے
کبھی حقیقت سے بھی نگاہیں ملاؤ لوگو
کہ تم تو لاچارگی کے عالم میں
تازہ کاری کی اِس صدی میں
!بغیر چہرے کے جی رہے ہو

Be-chehragii

Har aek chehray pe aek chehra

Saja hay aesa

K jesay sikkay k do rukhoN main

Bati Haqeeqat

in roman, continue reading

عہدنامہء ہجر


عہدنامہء ہجر

اتار کر تجھے دل سے
ملول کیوں ہوں گا
کہ میں نے
عشق و وفا کے خدا سے رو رو کر
دعائیں مانگیں کہ مجھ کو بھی بے وفا کردے
سنا تھا میں نے
کہ وحشت کے جنگلوں میں کہیں
جلا کے آگ
خدا ہم کلام ہوتا ہے
تو لے گیا تھا میں لوح_جگر کے سب ٹکڑے
وہیں پہ،
کوہ_ شب_ غم کے پاس رو رو کر
میں لوٹ آیا خدا سے معاہدہ کرکے!

Ehed-Naama-e-Hijr

Utaar kar tujhay Dil say

Malool kioN honga

K main nay

Ishq-o-wafa k khuda say ro ro kar

Duayin maangeeN k mujh ko bhi bewafa karday

Suna tha main nay

K wahshat k jangaloN main kahein

Jala k aag

Khuda hamkalaam hota hay

Tu le gaya tha main loh-e-jigar k sub tukRay

WaheeN pe

Koh-e-shab-e-gham k paas ro ro kar

Main lot aaya khuda say mua’hida kar k!

%d bloggers like this: