Blog Archives

انساں گزیدہ شہر کے خوابوں کی باس میں


غزل

انجان ریت میں مرے ہاتھوں سے پل گیا
بس ڈوبنے کو تھا کہ اچانک سنبھل گیا

اک تجربہ تھا، اس میں اگانے کنول گیا
آیا ہوا نہ پھر کبھی قسمت کا بَل گیا

نظروں نے کھایا بل وہ، کہ پھر ہٹ نہیں سکیں
خمیازہ تھا ترا، مری آنکھیں بدل گیا

برسوں مرا زمیں سے عقیدہ جڑا رہا
کج رو کی اک ادا سے جڑوں سے اچھل گیا

ہم لوگ اپنے خول میں سمٹے ہیں اس قدر
لمحوں کا سایہ دھوپ میں جلنے نکل گیا

اک شوق خود نمائی نے اکسا دیا اُسے
فن پارہ تھا مرا، مرے فن کو کچل گیا

میری ریاضتوں نے وفا کو جِلا تو دی
اُس بے وفا کے سامنے سارا عمل گیا

اے رقص جاں تجھے تو خبر ہے وجود کی
کیسا خلا تھا میرا ہنر جو نگل گیا

تپتی زمیں پہ پیاس سے آنکھیں ابل پڑیں
ظالم کو کتنا رنج تھا، ان کو مسل گیا

پہچان کی ہوس نے کیا اتنا نامراد
جبل مراد پر کوئی رکھ کر غزل گیا

انساں گزیدہ شہر کے خوابوں کی باس میں
اس طور بے کلی تھی، مرا جی مچل گیا

Ghazal

Read the rest of this entry

تمھارا دکھ


تمھارا دکھ

محبت کی گلیوں میں پھرتی رہی ہوں
شناسائے رازِ دروں ہوں
کہیں پر ہوس ہے
کہیں دل لگی ہے
کہیں ایک جذبہ
جو خالی ہو روحِ وفا سے
یہاں لوگ مجبوریوں کو محبت سے تشبیہ دے کر
محافل میں دادِ سخن لوٹتے ہیں
یہ گلیاں
کہ جن سے میں واقف رہی ہوں
یہاں لوگ اک دوسرے کو
تواتر سے دھوکے میں رکھ کر
محبت کا ناٹک رچاکر
حقیقت کا بطلان کرتے رہے ہیں
٭٭٭

Tumhara Dukh

Muhabbat ki galioN main phirtii rahi hooN
Shanasaay-e-raaz-e-darooN hoN
KaheeN par hawas hay
KaheeN dil-lagi hay
KaheeN aek jazba
Jo khaali ho rooh-e-wafa say
YahaN log majboorioN ko muhabbat say tashbeeh day kar
Mahaafil main daad-e-sukhan loot’tay hain
Ye galiyaaN
K jin say main waqif rahi hooN
Yahan log ik doosray ko
Tawaatur say dhokay main rakh kar
Muhabbat ka naatak rachaa kar
Haqeeqat ka batlaan kartay rahay hain

اے انسان


اے انسان

(خود سے ہمکلامی کی حالت میں)

نشانیوں سے بھرا ہوا ہے
یہ سارا سنسار
ایک دن جو ہوا تھا محبوس پتھروں میں
میں لطفِ احساس ہمکلامی سے جُھک رہا تھا
وجود تیرا نشانیوں میں بڑی نشانی
تو سوچتا ہے
ہے تو بھی صانع
مگر زمیں پر تری ہی مانند
پھر رہے ہیں بہت سے خالق
تری یہ کثرت بتا رہی ہے
کہ ایک مستور اور برتر ہے ذہن اعلا
تجھے جو معدوم ہونے دیتا نہیں زمیں پر
زمیں ہو یا آسماں کے طبقے
بنی ہے جوڑی ہر ایک شے کی
تجھے نہ رہنے دیا ہے تنہا

***

تو چلتے پھرتے وجود کو
اس زمین ِ بے روح پر گماں کر
کہ جس کے اجزا ہیں غیر نامی
اور اس کی زرخیز سطح ِ اولا پہ اک بچھونا
نمو ہے یاں محو استراحت
حیات کی تجھ میں دور تک ہے
جڑوں کا اک سلسلہ رواں
اور
دروں سے چشموں کا پھوٹنا
جیسے زندگی مسکراتی جائے
مُحافظت پر ہے تیرے باطن کی، تیرا ظاہر
جہاں میں روئیدگی کی خاطر
یہ دوسرے نامیوں سے مل کر
مگن ہے صدیوں سے چارہ سازی میں
تیرے اندر کھجور کے باغ سرسراتے ہیں
باغ انگور لہلہاتے ہیں
اور جاری یہ سلسلہ ہے

A Insaan!

(Khud say ham-kalami ki haalat main)

NishanioN say bhara hua hay

Ye sara sansaar
Ak din jo hua tha mahboos pattharoN main
Main lutf-e-ahsas-e-hamkalami say jhuk raha tha
Wujood taira nishanioN main baRi nishani
Tu sochta hay
Hay tu bhi saan’i
Magar zameeN par teri hi maanind
Phir rahay hain bohot say khaliq
Teri ye kasrat bata rahi hay
K ak mastoor aor bartar hay zehn-e-ala
Tujhay jo madoom honay deta nahi hay zameeN par
ZameeN ho ya aasmaN k tabqay
Bani hay joRi har ak shay ki
Tujhay na rehnay dia hay tanha

***

Tu chaltay phirtay wujood ko
Is zameen-e-bay rooh par gumaaN kar
K jis k ajzaa hain ghair naami
Aor is ki zarkhaiz sath-e-oola pe ik bichona
Namoo hay yaaN mahv-e-istiraahat
Hayaat ki tujh main door tak hay
JaRoN ka ik silsila rawaaN
Aor
DarooN say chashmoN ka phootna
Jesay zindagi muhkurati jaaye
Muhafazat par hay teray baatin ki, taira zaahir
JahaN main royedigi ki khaatir
Ye dosray naamioN say mil kar
Magan hay sadioN say chara saazi main
Tairay andar khajoor k baagh sarsaratay hain
Baagh-e-angoor lahlahatay hain
Aor jaari ye silsila hay!

لُہو کی لہر


قطعہ

لُہو کی لہر اُچھلنے سے رہی
وہ مجھ سے مثلِ رگِ برف ملا

کُریدی راکھ محبت کی رفیع
تو صرف سوختہ اک حرف ملا

Luhoo ki lehr uchalnay say rahi
Wo mujh say misl-e-rab-e-barf mila

Kuraidee raakh Muhabbat ki Rafii
Tu sirf sokhta ik harf mila

آئینہ تمھارے اندر ہے


آئینہ تمھارے اندر ہے

عالم جبروت کا نمایندہ
جنت ارضی پر اترکر
:درشت لہجے میں کہ رہا تھا
جس دن میں نے
تم سے تمھارا سایہ چھین لیا
اس دن تمھاری روح
تمھارے جسم سے ڈر کر بھاگ جائے گی
اس لمحے میرا خوف زدہ شریر یہ جانا
کہ میرا سایہ میری روح کے لیے آئینہ ہے
جس میں وہ سرشاری کے عالم میں
ہر لمحہ اپنا عکس دیکھتی رہتی ہے
رات کی چادر تلے میری روح
پژمردہ ہوکر گناہوں کی پناہ لینے کی طرف مائل ہوتی ہے
یہ میرے جسم کی کثافت اور غلاظت سے
بے خبر رہتی ہے
جس دم میں اپنے سائے سے کھلواڑ کھیلتا ہوں
اس سمے میری روح میں جواربھاٹا اٹھتا ہے
اس کا لہجہ جس دم نرم ہوا
:اس نے کہا
!اپنےسائے کی قدر کرو

Aayina tmharay andar hay

Aalam-e-jabroot ka numayinda
Jannat-e-arzi par utar kar
Durusht lehjay main keh raha tha:
Jis din main nay
Tum say tumhara saya cheen lia
Us din tumhari rooh
Tumharay jism say dar kar bhaag jaayegi
Us lamhay maira khof-zada shareer jaana
K miara saaya mairii rooh k liye aayina hay
Jis main wo sarshari k aalam main
Har lamha apna aks dekhti rehti hay
Raat ki chaadar talay mairii rooh
Pazmurda hokar gunahoN ki panah lenay ki taraf mayil hoti hay
Ye mairay jism ki kasafat aor ghalazat say
Bay-khabar rehti hay
Jis dam main apnay saaye say khilwaaR khailta hoN
Us samay mairii rooh main jwaar-bhaata uthta hay
Us ka lehja jis dam narm hoa
Us nay kaha:
Apnay saaye ki qadr karo!

ناول: ابابیل


ناول: ابابیل

مصنفہ: لیلیٰ ابوزید

اردو ترجمہ: عارفہ سیدہ زہرہ

یہ ناول انیس سو اسّی میں مراکش کی ادیبہ لیلیٰ ابوزید نے عربی زبان میں ‘عام الفیل’ کے نام سے لکھا جس کا انگریزی ترجمہ باربرا پارمنٹر نے

Year of the Elephant

کے نام سے کیا. یہ مشرق وسطیٰ کے ادب جدید کا نمایندہ ناول ہے اور اسے مراکش کے پہلے ناول ہونے کا بھی اعزاز حاصل ہے جس کا انگریزی میں ترجمہ ہوا ہو. لیلیٰ ابو زید کا فرانسیسی کی بجائے عربی زبان کو اپنے تاثرات ناول کی صورت میں قلم بند کرنے کے لیے منتخب کرنا بذات خود قابل ذکر ہے جس سے ان کی حب الوطنی اور عربی زبان کو رائج کرنے کی کوششوں میں ایک جرات مندانہ قدم کا ادراک ہوتا ہے. ترجمہ نگار عارفہ سیدہ زہرہ نے خوبصورتی کے ساتھ اسے اردو کے قالب میں ڈھالا ہے لیکن انہوں نے ناول کا عنوان تبدیل کردیا ہے.

click to continue reading

تیرے پہلو میں شام کرتا ہوں


غزل

تھک کہ جس دم قیام کرتا ہوں
تیرے پہلو میں شام کرتا ہوں

جس نے مجھ کو زمین سونپی ہے
زندگی اس کے نام کرتا ہوں

میرے آبا رہے سدا پُرامن
اس لیے میں بھی کام کرتا ہوں

دفن کرتا ہوں، سانس لیتا ہوں
حسرتیں یوں تمام کرتا ہوں

میرے منھ میں زباں نہیں مرے دوست
میں قلم سے کلام کرتا ہوں

Ghazal

Thak k jis dam qayaam karta hoN
Tiray pehloo main shaam karta hoN

Jis nay mujh ko zameen soNpi hay
zindagi os k naam karta hoN

Mairay aabaa rahay sada purAmn
Isliye main bhi kaam karta hoN

Dafn karta hon, saans leta hoN
HasrataiN yuN tamaam karta hoN

Mairay moo main zubaaN nahi miray dost
Main qalam say kalaam karta hoN

Ghazal By: Rafiullah Mian

Ghazal By: Rafiullah Mian

تشنہ ہونٹوں سے پیاس پی رہا ہوں


تشنہ ہونٹوں سے پیاس پی رہا ہوں
زندگی خود میں ایسی جی رہا ہوں

بیج بونے کو آئے گی خلقت
میں تو بس شق زمین سی رہا ہوں

Tishna hontoN say piyas pee raha hoN

Zindagi khud main, aesii jee raha hoN

Beej bo-nay ko aayegi khalqat

Main tu bus Shaq zameen see raha hoN

 

 

 

کم سن دُلہن


نثری نظم
ایک پیارے دوست ایس ایس دھانجی کی انگریزی نظم سے متاثر ہوکر کہی گئی ہے۔

کم سن دُلہن

ننھی دلہن
تمھارے لیے تمھارے خواب
گری ہوئی پلکوں کی چلمن میں
!تخلیق کیے گئے تھے
ہزاروں عکس جس کے پیچھے
خوابوں کی طرح جھلملاتے ہیں
،سنو
تم خوابوں سے نکل کر
!صبح کا سہانا منظر نہیں دیکھ سکتی
زندگی محض سپنوں کی ترنگ میں
زبان پر خشک خون کے عجیب ذایقے
اور گندی سانسوں کے درمیان
!!بار آور ہورہی ہے

Kam-sin Dulhan

Nannhi Dulhan
Tumharay liye tumharay Khwaab
Giri hoi palkoN ki chilman main
Takhleeq kiye gaye thay!
HazaaroN aks jis k peechay
KhwaboN ki tarah jhilmilatay hain
Sunoo,
Tum khwaboN say nikal kar
Subh ka suhana manzar nahi daikh sakti!
Zindagi mehez sapno ki tarang main
Zubaan par khushk khoon k ajeeb zaayeqay
Aor gandii saanso k darmiyan
Baar-aawar ho rahi hay!

سانس لیتا رہے یقینِ دل


غزل

ایک چہرہ جو ہے قرینِ دل
سانس لیتا رہے یقینِ دل

روح اب بھی رگوں میں تیرتی ہے
سنگ سی سخت ہے زمینِ دل

مرکزے کا طواف جاری ہے
واقفِ حال ہے رہینِ دل

تیرے احساس کی حرارت سے
پھر دھڑکنے لگی جبینِ دل

چاند چہرے سے آنکھ میں پہنچا
رفتہ رفتہ ہُوا مکینِ دل

کتنا یہ جزْرومَد اُٹھائے گا
سینہ اُس کا بنی کمینِ دل

خود تو وہ روشنی سراپا ہے
اُس کا احساس ہے نگینِ دل

حد نہیں اُس کی بے نیازی کی
جستجو ہے، تو ہے دفینِ دل

Ghazal

Aek chehra jo hay qareen-e-dil
Saans laita rahay yaqeen-e-dil

Rooh ab bhi ragoN main tairtii hay
Sang si sakht hay zameen-e-dil

Markazay ka tawaaf jaari hay
Waaqif-e-haal hay raheen-e-dil

Tairay ahsaas ki hararat say
Phir dhaRaknay lagi jabeen-e-dil

Chaand chehray say aankh main pohncha
Rafta rafta hua makeen-e-dil

Kitna ye jazr-o-mad uthaayega
Seena us ka bani kameen-e-dil

Khud tu wo roshni saraapa hay
Uska ahsaas hay nageen-e-dil

Had nahi uski bay-niyaazi ki
Justujoo hay, tu hay dafeen-e-dil

%d bloggers like this: