Blog Archives

انساں گزیدہ شہر کے خوابوں کی باس میں


غزل

انجان ریت میں مرے ہاتھوں سے پل گیا
بس ڈوبنے کو تھا کہ اچانک سنبھل گیا

اک تجربہ تھا، اس میں اگانے کنول گیا
آیا ہوا نہ پھر کبھی قسمت کا بَل گیا

نظروں نے کھایا بل وہ، کہ پھر ہٹ نہیں سکیں
خمیازہ تھا ترا، مری آنکھیں بدل گیا

برسوں مرا زمیں سے عقیدہ جڑا رہا
کج رو کی اک ادا سے جڑوں سے اچھل گیا

ہم لوگ اپنے خول میں سمٹے ہیں اس قدر
لمحوں کا سایہ دھوپ میں جلنے نکل گیا

اک شوق خود نمائی نے اکسا دیا اُسے
فن پارہ تھا مرا، مرے فن کو کچل گیا

میری ریاضتوں نے وفا کو جِلا تو دی
اُس بے وفا کے سامنے سارا عمل گیا

اے رقص جاں تجھے تو خبر ہے وجود کی
کیسا خلا تھا میرا ہنر جو نگل گیا

تپتی زمیں پہ پیاس سے آنکھیں ابل پڑیں
ظالم کو کتنا رنج تھا، ان کو مسل گیا

پہچان کی ہوس نے کیا اتنا نامراد
جبل مراد پر کوئی رکھ کر غزل گیا

انساں گزیدہ شہر کے خوابوں کی باس میں
اس طور بے کلی تھی، مرا جی مچل گیا

Ghazal

Read the rest of this entry

روٹی کپڑا اور مکان


نظم

روٹی کپڑا اور مکان


روٹی کپڑا اور مکان

کچھ بھی نہیں ان کا امکان

Roti KapRa Aor Makaan

Kuch bhi nahi in ka imkaan

اس سے پہلے فوجی غنڈہ

بھاگا کھا کے پاکستان

Is say pehlay Foji ghunda

Bhaga kha k Pakistan

اُس سے پہلے شیر نے بھی

نگلی اپنی آدھی جان

Us say pehlay Shair nay bhi

Nigli apni aadhi jaan

کیوں دیتے ہیں ہم سب ووٹ

کیا ہم سب ہیں بے ایمان

Kion detay hien hum sub vote

Kia hum sub hein be-eman

اوپر نیچے چھینا جھپٹی

اندر سے ہم ہیں سنسان

uper neechay cheena jhapti

Andar say hum hein sunsaan

اپنی دھرتی پر کیوں لوگو

بھوک سے مرتے ہیں انسان

Apni dharti par kioN lgog

Bhook say martay hien Insaan

چلتی گاڑی چڑھ جاتی ہے

کچلے جاتے ہیں ارمان

Chalti gaaRi charh jaati hay

kuchlay jatay hien armaan

بے شرمی کی حد کیا ہوگی

اب ہم بنتے نہیں انجان

Be-sharmi ki had kia hogi

Ab hum bantay nahi anjaan

کس کو دیں الزام یہاں

کوئی نہیں ہم میں نادان

Kis ko dein ilzaam yahaN

Koi nahi hum main naadaan

نوچا خوب، لگا کے نعرہ

جیوے جیوے پاکستان

Nocha khoob, laga k na’ra

Jeeway jeeway Pakistan

%d bloggers like this: